Amar Bail

A plant of eternity

Posts Tagged ‘Quran’

Quran Class 2 Part 2 — قرآن کلاس ۲ حصّہ دوئم

Posted by Haris Gulzar on September 7, 2009

حصّہ  اوّل  میں  جہاں  سے  سلسلہ  توڑا  تھا  وہیں  سے  دوبارہ  شروع  کرتے  ہیں۔  ہم  نے  دیکھا  تھا  کہ  “ بَینَ  یَدَیِ “  کا  مطلب  ہے  سامنے۔  اب  اس  سے  اگلا  لفظ  دیکھتے  ہیں۔

اگلا  لفظ  ہے  اللہ  جسکا  مطلب  ہم  پہلے  ہی  دیکھ  چکے  ہیں۔  اس  لفظ  کے  بعد  وَ  ہے  جو  اردو  زبان  میں  مستعمل  ہے  جسکا  مطلب  ہے  اور۔  مثال  کے  طور  پر  صبح و شام  یعنی  صبح  اور  شام،  شب و روز  یعنی  رات  اور  دن  وغیرہ۔  اس  سے  اگلا  لفظ  ہے  “ رَسُولِہ “۔   یہ  لفظ  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے،  وہ  دو  الفاظ  ہیں  رسول  اور  ہِ ۔  رسول  تو  اردو  کا  لفظ  ہے  جسکا  مطلب  ہے  بھیجا  گیا  مگر  یہاں  ‘ ہ ‘  کے  استعمال  کو  سمجھنا  ضروری  ہے۔  اسکے  لیئے  ہم  کچھ  ضمیر  دیکھتے  ہیں۔  ضمیر  وہ  لفظ  ہوتا  ہے  جو  اسم  نہ  ہو  مگر  اسم  کا  مطلب  دے۔  مثال  کے  طور  پر  اگر  میں  دو  جملے  کہوں،  یہ  قلم  حارث  کا  ہے۔  یہ  کتاب  حارث  کی  ہے۔  تو  میں  یہ  بھی  کہ  سکتا  ہوں  کہ  یہ  قلم  حارث  کا  ہے  اور  یہ  کتاب  اس  کی  ہے۔  دوسرے  جملے  میں  میں  نے  حارث  کی  جگہ  اس  کا  استعمال  کیا۔  یہ  لفظ  “ اس “  ضمیر  ہے۔  اسی  طرح  اگر  میں  کہوں  حارث  اچھا  لڑکا  ہے،  وہ  پڑھائی  کرتا  ہے،  تو  لفظ  وہ  ضمیر  ہے۔

اسی  طرح  عربی  میں  ضمائر  (ضمیر  کی  جمع)  کے  لیئے  کچھ  الفاظ  ہیں۔ ۔ ۔

۱۔  ی ۔ ۔ ۔  جسکا  مطلب  ہے  میں۔  مثال  کے  طور  پر  کتابی  کا  مطلب  ہوگا  میری  کتاب۔  قلمی  کا  مطلب  ہوگا  میرا  قلم۔

۲۔  نا ۔ ۔ ۔  جسکا  مطلب  ہے  ہم۔  مثال  کے  طور  پر  کِتَابُنَا  کا  مطلب  ہوگا  ہماری  کتاب۔  قَلمُنَا  کا  مطلب  ہوگا  ہمارا  قلم۔

۳۔  کَٔ ۔ ۔ ۔  جسکا  مطلب  ہے  تو  ایک  مذکر۔  مثال  کے  طور  پر  کَتَابُکَ  کا  مطلب  ہوگا  تو  ایک  مذکر  کی  کتاب

۴۔  کِٔ ۔ ۔ ۔  جسکا  مطلب  ہے  تو  ایک  مؤنث۔  مثال  کے  طور  پر  کَتَابُکِ  کا  مطلاب  ہوگا  تو  ایک  مؤنث  کی  کتاب  یعنی  کسی  مؤنث  کو  مخاطب  کرکے  اگر  کہنا  ہو  تیری  کتاب۔

۵۔  کم  جسکا  مطلب  ہے  تم  سب۔  مثال  کے  طور  پر  قَلمُکُم  کا  مطلب  ہوگا  تم  سب  کا  قلم،  اسی  طرح  کِتَابُکُم  کا  مطلب  ہوگا  تم  سب  کی  کتاب۔

۶۔  ہ۔ ۔ ۔  جسکا  مطلب  ہے  وہ  ایک  مذکر۔  یہاں  کَٔ  سے  فرق  ضرور  نوٹ  کریں۔  کَٔ  کا  مطلب  تھا  تو  ایک  مذکر،  جبکہ  ہ  کا  مطلب  ہے  وہ  ایک  مذکر۔  مثال  کے  طور  پر  قلمہُ  کا  مطلب  ہوگا  وہ  ایک  مذکر  کا  قلم  یعنی  اسکا  قلم

۷۔  ھا۔ ۔ ۔جسکا  مطلب  ہے  وہ  ایک  مؤنث۔  مثال  کے  طور  پر  کتابھا  کا  مطلب  ہوگا  اس  ایک  مؤنث  کی  کتاب

۸۔  ھم ۔ ۔ ۔  جسکا  مطلب  ہے  وہ  سب۔  مثال  کے  طور  پر  نفسھم  کا  مطلب  ہوگا  وہ  سب  کا  نفس  یعنی  ان  سب  کا  نفس۔  اسی  طرح  قلمھم  کا  مطلب  ہوگا  وہ  سم  کا  قلم  یعنی  ان  سب  کا  قلم۔

اوپر  دیئے  گئے  ضمائر  میں  پہلے  دو  ضمائر  خود  اپنے  لیئے  استعمال  کیئے  جاتے  ہیں،  یعنی  میں  یا  ہم۔  اگلے  تین  ضمائر  کسی  دوسرے  شخص  سے  بات  کرتے  ہوئے  استعمال  کیئے  جاتے  ہیں  جو  وہاں  موجود  ہو،  یعنی  جب  ہم  کسی  دوسرے  شخص  سے  کلام  کر  سکتے  ہوں،  اور  تو  اور  تم  کے  الفاظ  استعمال  کر  سکتے  ہوں۔  اور  آخری  تیں  ضمائر  اس  وقت  استعمال  کیئے  جاتے  ہیں  جب  ایسے  شخص  کا  ذکر  ہو  رہا  ہو  جو  وہاں  موجود  نا  ہو۔  یعنی  جب  ہم  وہ  یا  اس  کے  الفاظ  استعمال  کریں۔

ان  ضمائر  میں  کَ  اور  کِ  پہ  ہم  نے  اعراب  کا  دھیان  رکھا،  اس  لیئے  کہ  ان  اعراب  سے  مطلب  بدل  سکتا  ہے،  مگر  باقی  ضمائر  میں  ہم  نے  اعراب  کو  نظر  انداز  کیا،  مثال  کے  طور  پر  ھُم  اور  ھِم  کا  فلحال  ہمارے  لیئے  ایک  ہی  مطلب  ہے۔  اسی  طرح  ہُ  اور  ہِ  کا  بھی  ایک  ہی  مطلب  ہے۔

اب  ہم  دیکھتے  ہیں  کہ  جو  لفظ  ہم  پڑھ  رہے  تھے  یسکا  کیا  مطلب  ہے۔  وہ  لفظ  تھا  “ رسولہِ “۔  یہ  لفظ  رسول  اور  ہِ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے  جسکا  مطلب  ہوگا  اس  ایک  کا  رسول۔  اور  یہ  کس  کے  رسول  کی  بات  ہو  رہی  ہے،  ظاہر  ہے،  اللہ  سبحانَ وَ تعالی  کے  رسول  کی۔

اللہ  و  رسولہِ  کا  مطلاب  ہوگا  اللہ  اور  اس  ایک  کا  رسول،  یعنی  اللہ  اور  اسکا  رسول۔  تو  بَینَ  یَدَیِ  اللہِ  وَ  رَسُولَہ  کا  مطلب  ہوگا  اللہ  اور  انکے  رسول  کے  سامنے۔

اب  تک  پڑھی  گئی  آیت  کا  مطلب  کچھ  اس  طرح  بنے  گا

یَٓاَیُّھَا الَّذِینَ  آمَنُوا  لَا  تُقَدِّمُوا  بَینَ  یَدَیِ  اللہِ  وَ  رَسُولِہِ

اے  اہلِ  ایمان،  اللہ  اور  اسکے  رسول  کے  حضور  پیش  قدمی  نہ  کرو۔

اگلے  الفاظ  ہیں  وَ اتَّقُوا اللہ۔  وَ  کا  مطلب  ہمیں  پتہ  ہے۔  اسکا  مطلب  ہے  اور۔  اب  ہم  دیکھتے  ہیں  کہ  اِتَّقُوا  کا  کیا  مطلب  ہے۔

یہ  لفظ  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے۔  وہ  دو  الفاظ  ہیں  اِتَّق  اور  وا۔  ہمیں  یہ  تو  پتہ  ہی  ہے  کہ  وا  جمع  کے  لیئے  استعمال  ہوا  ہے۔  اب  ہم  دیکھتے  ہیں  کہ  اِتَّقَ  کا  کیا  مطلب  ہے۔

کسی  بھی  کلمے  سے  پہلے  الف  صرف  تین  حالتوں  میں  آتا  ہے۔

۱۔  اگر  خود  اپنا  ہی  ذکر  کرنا  ہو۔  یعنی  الف  کا  مطلب  ہوگا  ‘میں’۔  مثال  کے  طور  پر  اَکتُبُ  کا  مطلب  ہوگا  میں  لکھتا  ہوں۔  ایسے  کلمے  کو  متکلم  کہتے  ہیں۔

۲۔  الف  کا  استعمال  سوالیہ  بھی  ہو  سکتا  ہے۔  مثال  کے  طور  پر  اَ اَکتُبُ  کا  مطلب  ہوگا  کیا  میں  لکھتا  ہوں؟  ایسے  کلمے  کو  استفھام  کہتے  ہیں

۳۔  الف  کا  استعمال  حکم  دینے  کے  لیئے  بھی  ہوسکتا  ہے۔  مثال  کے  طور  پر   اُکتُبُ  کا  مطلب  ہوگا  لکھو۔  ایسے  کلمے  کو  امر  کہا  جاتا  ہے۔

ہمیں  ان  تینوں  استعمال  میں  سے  صرف  جملہ  دیکھ  کر  ہی  اندازہ  لگانہ  پڑے  گا  کہ  الف  کا  کونسا  استعمال  کیا  گیا  ہے۔

ایک  بات  اور  نوٹ  کرنے  کی  ہے۔  اگر  الف  کا  استعمال  امر  کے  طور  پہ  کیا  گیا  ہے،  یعنی  کوئی  حکم  دیا  گیا  ہے،  تو  کلمے  میں  سے  حروفِ  علت،  جنکو  ہم  انگریزی  میں  واول  کہتے  ہیں،  حذف  یعنی  غائب  ہو  جاتے  ہیں۔  اصل  لفظ  جو  یہاں  استعمال  کیا  گیا  ہے  وہ  ہے  تقوی،  مگر  امر  کی  وجہ  سے  پہلے  الف  لگا  دیا  گیا  جس  سے  لفظ  بنا  اتقوی۔  عربی  زبان  میں  الف،  واو  اور  چھوٹی  ی  حروف  علت  یعنی  واول  ہیں۔  اس  لیئے  امر  کی  وجہ  سے  لگنے  والے  الف  نے  آخری  واو  اور  چھوٹی  ی  کو  حذف  کر  لیا،  اور  باقی  لفظ  رہ  گیا  اتق۔

اردو  میں  تقوی  کا  مطلب  ہوتا  ہے  ڈر۔  یہاں  بھی  لفظ  کا  یہی  مطلب  ہے  مگر  حکم  دیا  جا  رہا  ہے  کہ  ڈرو۔  ہم  نے  یہ  بھی  دیکھا  تھا  کہ  لفظ  کہ  آخر  میں  جمع  کی  علامت،  یعنی  وا  موجود  تھی،  جس  سے  لفظ  کا  مطلب  بنے  گا  تم  سب  ڈرو۔

وَاَتَّقُوا اللہِ  کا  مطلب  ہوگا  اور  ڈرو  تم  سب  اللہ  سے۔

اگلا  لفظ  ہے  ‘اِنَّ’۔  ہم  نے  پہلی  کلاس  میں  جو  چھ  الفاظ  یاد  کیئے  تھے  ان  میں  سے  ایک  لفظ  یہ  بھی  تھا۔  اس  لفظ  کا  مطلب  ہے  بےشک۔  اسی  طرح  اِنَّ اللہ  کا  مطلب  ہوگا  بےشک  اللہ۔

اگلے  دو  الفاظ  ہیں  سَمِیع  عَلِیم۔   سمیع  میں  آخری  ع  کے  اوپر  دو  پیش  ہیں،  اسی  طرح  علیم  میں  آخری  م  کے  اوپر  بھی  دو  پیش  ہیں۔  یہ  دونو  الفاظ  فعیل  کے  وزن  پہ  ہیں۔  ہم  نے  پہلی  کلاس  میں  فعیل  پڑھا  تھا،  جسکا  مطلب  ہوتا  ہے  ازل  سے  ابد  تک  فعل  کرنے  والا۔  اسی  طرح  سمیع  کا  فعل  ہے  سمع  جسکا  مطلب  ہے  سننا،  تو  سمیع  کا  مطلب  ہوگا  ازل  سے  ابد  تک  سننے  والا۔  اور  علیم  کا  فعل  ہے  علم  یعنی  جاننے  والا،  تو  علیم  کا  مطلب  ہوگا  ازل  سے  ابد  تک  جاننے  والا۔

اب  ہم  پوری  آیت  کا  رواں  ترجمہ  کرتے  ہیں۔

یٓاَ یُّھَا الَّذِینَ  آمَنُوا  لَا  تُقَدِّمُوا  بَینَ  یَدَیِ  اللہِ  وَ  رَسُولِہِ  وَاتَّقُوا  اللہَ  اِنَّ  اللہَ  سَمِیعُ  عَلِیمُ۔

اے  لوگو  جو  ایمان  لائے  ہو،  اللہ  اور  اسکے  رسول  کے  سامنے  پیش  قدمی  نہ  کرو  اور  اللہ  سے  ڈرو  بےشک  اللہ ازل  سے  ابد  تک  کے  سننے  والے  اور  ازل  سے  ابد  تک  کے  جاننے  والے  ہیں۔

امید  ہے  آپکو  اوپر  بتائے  گئے  گرائمر  کے  کچھ  اصول  اور  عربی  کے  کچھ  الفاظ  سمجھ  آئے  ہونگے  انشا ء اللہ۔    اللہ  ہمیں  قران  پڑھنے  اور  سمجھنے  کی  توفیق  عطا  فرمائے۔  آمین۔

Posted in Urdu | Tagged: , , | 11 Comments »

Quran Class 2 Part 1 — قرآن کلاس ۲ حصّہ اوّل

Posted by Haris Gulzar on September 6, 2009

اسلامُ  علیکم۔

امید  کرتا  ہوں  آپ  سب  خیریت  سے  ہونگے۔  کلاس  ۳  حصہ  اول  لکھتے  ہوئے  میں  نے  غلطی  سے  اس  کلاس  کو  مٹا  دیا،  جسکی  وجہ  سے  میں  یہ  کلاس  دوبارہ  لکھ  رہا  ہوں۔  امید  کرتا  ہوں  اور  دعا  کرتا  ہوں  کہ  یہ  کلاس  لکھتے  ہوئے  کوئی  غلطی  نہ  ہو۔

 کلاس  ۱  میں  ہمنے  دیکھا  تھا  کہ  بِسمِ اللہ  الرحمان  الرحیم  کا  کیا  کطلب  ہے۔  اس  کلاس  میں  ہم  سورت  حجرات  کی  پہلی  آیت  دیکھیں  گے۔  سورت  حجرات  کا  اغاز  ان  الفاظ  سے  ہوتا  ہے۔ ۔ ۔

یآیُّھَا  الَّذِینَ

پچھلی  کلاس  میں  ہم  نے  چھہ  الفاظ  یاد  کیئے  تھے۔  ان  الفاظ  میں  پانچواں  لفظ  تھا  یا  اور  چھٹا  لفظ  تھا  اَیُھا،  اور  ہم  نے  دیکھا  تھا  کہ  ان  دونو  الفاظ  کے  مطلاب  ہیں  اے،  یعنی  یہ  دونو  الفاظ  کسی  کو  مخاطب  کرنے  کے  لیئے  استعمال  ہوتے  ہیں۔  قرآن  میں  ہم  اکثر  دیکھیں  گے  کہ  ایک  جیسے  مطلب  والے  الفاظ  اکھٹے  بھی  استعمال  ہوتے  ہیں،  اور  اگر  ایسا  کیا  جائے  تو  وہ  زور  دینے  کے  لیئے  ہوتا  ہے۔  یہاں  بھی  لفظ  یا  اور  لفظ  ایھا  اکھٹے  استعمال  ہوئے  ہیں۔

اگلا  لفظ  ہے  اَلَّذِینَ۔  اس  لفظ  کا  مطلب  ہے  جو  سب  لوگ۔  یہ  لفظ  مخاطب  کرنے  کے  لیئے  استعمال  کیا  جاتا  ہے۔  عربی  میں  کسی  کو  مخاطب  کرنے  کے  کئی  طریقے  ہیں،  آئیے  ان  طریقوں  کو  دیکھتے  ہیں

اَلَّذِینَ ۔۔  جو  سب  لوگ

اَلَّذِی ۔۔  جو  ایک  مذکر

اَلَّتِی ۔۔  جو  ایک  مؤنث

یہ  تین  الفاظ  بھی  ان  چھیانوے  الفاظ  میں  سے  ہیں  جو  آپنے  یاد  کرنے  ہیں۔  تو  ابھی  تک  ہم  نے  یہ  پڑھا  کہ  یآ یُّھَا الذِینَ  کا  مطلب  ہے  اے اے  جو  سب  لوگ،  یعنی  اے  لوگو۔

اسی  آیت  میں  اگلا  لفظ  ہے  آمَنُوا۔  یہ  لفظ  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے۔  وہ  دو  الفاظ  ہیں  امن  اور  وا۔  امن  کا  مطلب  ہے  ایمان  لانا،  اور  یہ  کسی  ایک  شخص  کے  لیئے  استعمال  ہوتا  ہے،  یعنی  جو  ایک  شخص  ایمان  لایا۔  وا  ایک  علامت  ہے  جو  اگر  کسی  لفظ  کے  آخر  میں  آجائے،  تو  وہ  لفظ  جمع  پڑھا  جاتا  ہے۔  جمع  کی  کل  ۴  چار  علامتیں  ہیں۔  یہ  علامتیں  مندرجہ  ذیل  ہیں۔ ۔ ۔

وا

ون

ین

ات

اوپر  لکھی  گئی  چاروں  علامتوں  میں  سے  کوئی  بھی  اگر  کسی  لفظ  کے  آخر  میں  آئے  تو  وہ  لفظ  جمع  پڑھا  جائے  گا۔  اسی  طرح  آمَنُوا  کا  مطلب  بھی  ہوگا  جو  سب  ایمان  لائے۔  ابھی  تک  پڑھی  گئی  آیت  کا  مطلب  ہوگا۔ ۔ ۔

یآَ یُّھَا  الَّذِینَ  آمَنُوا

اے  اے  جو  سب  لوگ  جو  سب  ایمان  لائے،  یعنی  اے  اہلِ  ایمان۔

اس  آیت  کا  اگلا  لفظ  ہے  لَا۔  یہ  لفظ  نفی  کہ  معنی  میں  استعمال  ہوتا  ہے۔  اردو  زبان  میں  بھی  ہم  لَا  استعمال  کرتے  ہیں  جیسے  لاجواب،  لاتعداد  اور  لازوال۔  عربی  زبان  میں  نفی  کی  کئی  علامتیں  ہیں۔  آیئے  ہم  نفی  کی  علامتیں  دیکھتے  ہیں۔ ۔ ۔

لَا

لَیسَ

لَم

لَن

مَا

یہ  تمام  نفی  کی  علامتیں  ہیں،  اور  یہ  مکمل  الفاظ  ہیں۔  جیسے  ہمنے  دیکھا  تھا  کہ  جمع  کی  علامتیں  کسی  لفظ  کے  آخر  میں  آتی  ہیں،  نفی  کی  علامتیں  کسی  لفظ  کے  ساتھ  جڑ  کر  نہیں  آتیں  کیوں  کہ  یہ  بذاتِ  خود  مکمل  الفاظ  ہیں۔

اگلا  لفظ  ہے  تُقَدِّمُوا۔  اس  لفظ  کو  ہم  توڑ  کر  اس  طرح  بھی  لکھ  سکتے  ہیں۔ ۔ ۔  ت ۔۔ قدم ۔۔ وا۔  یعنی  اس  لفظ  کو  تین  حصوں  میں  لکھا  جا  سکتا  ہے۔  پہلا  حصہ  صرف  ایک  ت  پر  مشتمل  ہے۔  یہاں  پر  ت  کے  استعمال  کو  سمجھنا  ضروری  ہے۔  اردو  زبان  میں  وقت  کے  اعتبار  سے  کوئی  لفظ  تین  زمانوں  میں  استعمال  کیا  جا  سکتا  ہے۔  وہ  تین  زمانے  ہیں  ماضی،  حال،  اور  مستقبل۔  ماضی  وہ  زمانہ  ہوتا  ہے  جسمیں  کام  کیا  جا  چکا  ہو،  حال  وہ  زمانہ  ہوتا  ہے  جسمیں  کام  کیا  ابھی  کیا  جا  رہا ہو،  اور  مستقبل  وہ  امانہ  ہوتا  ہے  جس  میں  کام  بعد  میں  کیا  جانا  ہو۔  مگر  عربی  میں  تین  کے  بجائے  دو  زمانے  ہوتے  ہیں۔  وہ  دو  زمانے  ہیں  ماضی  اور  مضارع۔  ماضی  تو  وہی  اردو  والا  ماضی  ہے،  مگر  اردو  والے  حال  اور  مستقبل  کو  ملا  کر  عربی  میں  مضارع  کہا  جاتا ہے،  یعنی  عربی  میں  حال  اور  مستقبل  مل  کر  مضارع  بن  جاتے  ہیں۔  عربی  میں  مضارع  کی  چند  علامتیں  ہیں۔ ۔ ۔

ت : ۔۔  تو  یا  تم

ی : ۔۔  وہ

ا :  ۔۔  میں

ن : ۔۔  ہم

مندرجہ  بالا  ۴  چار  علامتیں  کسی  بھی  لفظ  کو  مضارع  بنا  دیتی  ہیں۔  ان  چار  علامتوں  کی  ایک  ایک  مثال  لے  کر  سمجھتے  ہیں۔  اگر  لفظ  ہو  تقتل  تو  اس  لفظ  کو  ہم  توڑ  کر  ت  اور  قتل  لکھ  سکتے  ہیں۔  عربی  میں  قتل  کا  مطلب  ہوتا  ہے  لڑنا۔  اور  لفظ  کے  شروع  میں  ت  سے  یہ  لفظ  مضارع  بن  گیا،  اور  اس  لفظ  کا  مطلب  ہوا  تو  لڑتا  ہے  یا  تو  لڑے  گا۔  اسی  طرح  اگر  لفظ  ہو  تکتب،  تو  اسکا  مطلب  ہوگا  تو  لکھ  رہا  ہے  یا  تو  لکھے  گا۔

اگر  لفظ  کے  شروع  میں  ی  آجائے  تو  بھی  لفظ  مضارع  بن  جاتا ہے،  جیسا  کہ  ہم  نے  اوپر  پڑھا۔  اگر  لفظ  ہو  یقتل،  تو  اسکا  مطلب  ہوگا  وہ  لڑ  رہا  ہے  یا  وہ  لڑے  گا۔  اسی  طرح  اگر  لفظ  کے  شروع  میں  ا  آئے  تو  اسکا  مطلب  ہوگا  میں۔  اقتل  کا  مطلب  ہوگا  میں  لڑ رہا  ہوں  یا  میں  لڑوں  گا۔  اور  اسی  طرح  نقتل  کا  مطلب  ہوگا  ہم  لڑ  رہے  ہیں  یا  ہم  لڑیں  گے۔ ۔ ۔

جو  لفظ  ہم  پڑھ  رہے  تھے  وہ  تھا  ت ۔ قدم ۔ وا۔  ہم  نے  دیکھا  کہ  لفظ  کے  شروع  میں  اگر  ت  آجائے  تو  وہ  لفظ  مضارع  بن  جاتا ہے  اور  ت  کا  مطلب  ہوتا  ہے  تم  یا  تو۔ قدم  اردو  کا  لفظ  ہے  جسکا  مطلب  ہے  آگے  بڑھنا،  جیسے  ہم  کہتے  ہیں  قدم  بڑھاؤ۔  اس  لفظ  کا  آخری  حصہ  ہے  وا،  اور  ہم  نے  اوپر  پڑھا  کہ  وا  ایک  علامت  ہے  جو  لفظ  کو  جمع  بنا  دیتی  ہے۔  تو  اگر  اب  تین  حصوں  کو  جوڑ  کر  پڑھیں  تو  اس  لفظ  کا  مطلب  نکلے  گا  تم  قدم  بڑھاؤ  سب،  یعنی  تم  سب  قدم  بڑھاؤ۔

اگلا  لفظ  ہے  بَینَ۔  یہ  لفظ  بھی  اردو  میں  استعمال  ہوتا  ہے  اور  اسکا  مطلب  ہے  درمیان۔  جیسے  اردو  میں  ہم  کہتے  ہیں  بین الاقوامی  پرواز،  یعنی  قوموں  کے  درمیان  پرواز۔  اس  لفظ  سے  اگلا  لفظ  ہے  یَدَیِ۔  یہ  لفظ  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے۔  وہ  دو  الفاظ  ہیں  ید  اور  ی۔  عربی  میں  ید  کا  مطلب  ہوتا  ہے  ہاتھ۔  ایک  بات  نوٹ  کریں  کہ  یہاں  چھوٹی  ی  لفظ  کے  شروع  میں  نہیں  بلکہ  آخر  میں  ہے  اس  لئے  یہ  لفظ  مضارع  نہیں  ہے۔  لفظ  ی  کا  مطلب  ہے  دو۔  اگر  ان  دونو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  پڑھیں   تو  مطلب  بنے  گا  دو  ہاتھ۔  اور  بَینَ  یَدَیِ  کا  مطلب  ہوگا  دونو  ہاتھوں  کے  درمیان۔  یہ  اصطلاح  عربی  میں    محاورے  کے  طور  پر  استعمال  ہوئی  ہے۔  دونوں  ہاتھوں  کے  درمیان  ہمارے  سامنے  والا  حصہ  ہوتا  ہے،  اس  لئے  یہاں  بَینَ  یَدَیِ  کا  مطلب  ہے  سامنے۔

اس  کلاس  کے  اگلے  حصے  میں  سلسلہ  یہیں  سے  جوڑا  گیا  ہے۔  اللہ  ہمیں  قرآن  پڑھنے  اور  سمجھنے  کی  توفیق  عطا  فرمائے۔  آمین۔

Posted in Urdu | Tagged: , , | 13 Comments »

Quran Class I — قرآن کلاس ۱

Posted by Haris Gulzar on August 8, 2009

میں  نے  دو  دن  پہلے  قرانی  عربی  کا  ایک  کورس  شروع  کیا۔  جس  طریقے  سے  وہ  کورس  پڑھایا  جا  رہا  ہے  اور  قران  کی  گرائمر  سمجھائی  جا  رہی  ہے،  وہ  کورس  پڑھنے  کا  بہت  مزہ  آتا  ہے۔  یہ  کورس  صرف  ۱۰  دن  کا  ہے  اور  اس  کورس  کے  بعد  انشأاللہ  اتنی  عربی  ضرور  آجائے  گی  کہ  قران  پڑھ  کہ  اسے  حرف  بہ  حرف  سمجھ  سکیں۔  میں  نے  سوچا  کیوں  نہ  ہر  کلاس  میں  پڑھائی  گئی  تمام  باتیں  یہاں  لکھ  دی  جائیں  تاکہ  مجھے  بھی  فائدہ  ہوتا  رہے،  اور  ہر  پڑھنے  والا  بھی  کچھ  سیکھ  سکے۔  میں  اپنی  پوری  کوشش  کروں  گا  کہ  اسی  روانی  اور  تسلسل  سے  یہاں  لکھتا  رہوں  جس  طرح  ہمیں  کلاس  میں  پڑھایا  جا  رہا  ہے  انشأاللہ۔  مجھے  ان  پروفیسر  صاحب  کا  نام  بھول  گیا  ہے  جنہوں  نے  یہ  کورس  تشکیل  دیا  ہے،  مگر  اگر  کوئی  انکا  نام  جاننے  میں  دلچسپی  رکھتا  ہے،  تو  میں  انشأاللہ  ۲  یا  ۳  دن  میں  دوبارہ  پتہ  کر  کے  بتا  سکتا  ہوں  انشأاللہ۔

آج  ہم  پہلی  کلاس  سے  آغاز  کرتے  ہیں۔ ۔ ۔  کورس  کی  گہرائی  میں  جانے  سے  پہلے  کچھ  باتیں  نوٹ  فرما  لیں۔ ۔ ۔

۔۔۔ اس  ۱۰  دن  کو  کورس  میں  ہم  سورت  حجرات  پڑھیں  گے۔  یہ  مدنی  سورت  ہے  اور  قران  کی  ۲۴ ویں  سورت  ہے۔

۔۔۔ پہلی  تین  کلاسیں  خاصی  مشکل  لگیں  گی،  مگر  ان  تین  کلاسوں  کے  بعد  اگلی  سات  کلاسیں  انشأاللہ  بہت  آسان  لگیں  گی  کیوںکہ  جو  گرائمر  کے  اصول  ہم  شروع  میں  پڑھیں  گے،  وہی  بعد  میں  دہرائے  جائیں  گے۔

۔۔۔ قران  میں  ایک  اندازے  کے  مطابق  کل  ۸۶۰۰۰ (  چھیاسی  ہزار)  الفاظ  ہیں،  جن  میں  سے  ۹۶ (چھیانوے)  الفاظ  ایسے  ہیں  جنکی  کل  تعداد  ۲۲۵۰۰ (بائیس  ہزار  پانچ  سو)  بن  جاتی  ہے۔  یہ  ۹۶ (چھیانوے)  الفاظ  کافی  آسان  ہیں  اور  ان  کو  یاد  کرنے  سے  تقریباّ  قران  کا  ایک  چوتھائی  تو  ہمیں  یاد  ہو  جائے  گا  انشأاللہ۔  اس  کورس  کے  دوران  ہم  یہ  ۹۶  (چھیانوے)  الفاظ  بھی  یاد  کریں  گے۔

۔۔۔  اس  کورس  کے  دوران  ہم  زیر،  زبر  اور  پیش  پہ  زیادہ  دھیان  نہیں  دیں  گے۔  اسکی  وجہ  یہ  ہے  کہ  ہم  عربی  بولنا  یا  لکھنا  نہیں  سیکھ  رہے،  بلکے  صرف  پڑھنا  اور  سمجھنا  سیکھ  رہے  ہیں۔  ہمنے  اس  کورس  کے  بعد  عربی  کے  جملے  نہیں  بنانے   اسلئے  اس  کورس  کی  مدت  تک  زیر،  زبر  اور  پیش  پہ  زیادہ  دھیان  نہیں  دیا  جائے  گا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

قران  کی  ایک  سورت  کے  علاوہ  باقی  تمام  سورتیں  بسم اللہ  سے  شروع  ہوتی  ہیں۔  آج  ہم  دیکھتے  ہیں  کہ  اس  آیت  کا  مطلب  کیا  ہے۔ ۔ ۔

بسم دو  لفظوں  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے۔  وہ  دو  لفظ  ہیں  ‘با’،  اور  ‘اسم’۔  یہ  دونو  لفظ  اردو  میں  عام  استعمال  کئیے  جاتے  ہیں۔  ‘اسم’  کے  معنی  ہیں  ‘نام’۔  جیسے  ہم  عموماّ  کہتے  ہیں  “آپکا  اسم  شریف  کیا  ہے؟”  یعنی  آپکا  نام  کیا  ہے۔  اسی  طرح  ‘با’  بھی  اردو  زبان  میں  استعمال  کیا  جاتا  ہے،  جیسے  ‘با  ادب’  یا  با  عزت۔  لفظ  با  کا  مطلب  ہے  ‘کے  ساتھ’۔  اکثر  عربی  زبان  میں  جب  دو  لفظوں  کو  جوڑا  جاتا  ہے  تو  انکے  درمیان  موجود  الف  کھا  لئے  جاتے  ہیں۔  یہاں  پر  بھی  یہی  کیا  گیا  ہے۔  با  اور  اسم  کو  جوڑ  کر  بسم  بنایا  گیا  ہے  جسکا  مطلب  ہے،  کے  ساتھ  نام۔

بسم  کے  بعد  اللہ  ہے  جس  سے  مطلب  بنا،  ‘کے  ساتھ  نام  اللہ’۔  یعنی  اللہ  کے  نام  کے  ساتھ۔  جس  طرح  قران  کی  ایک  سورت  کے  علاوہ  باقی  تمام  سورتیں  اللہ  کے  نام  سے  شروع  ہوتی  ہیں،  ہمیں  بھی  اپنا  ہر  کام  اللہ  کے  نام،  سے  شروع  کرنا  چاہئے۔  یہاں  ایک  بات  اور  نوٹ  فرما  لیں۔  کچھ  علماء  کہتے  ہیں  کہ  لفظ  اللہ  بھی  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے۔  وہ  دو  الفاظ  ہیں  ‘ال’  اور  ‘الہ’۔  ‘ال’  کو  استعمال  کیا  جاتا  ہے  کسی  عام  چیز  کو  خاص  بنانے  کے  لئیے،  مثال  کے  طور  پر،  کتاب  کا  مطلب  ہوگا  کوئی  بھی  کتاب،  مگر  الکتاب  کا  مطلب  ہوگا  کوئی  ایسی  خاص  کتاب  جسکا  یا  تو  تمام  لوگوں  کو  پتہ  ہے،  یا  اسکا  ذکر  ہوچکا  ہے  اور  اسی  ذکر  کے  طحت  بات  کی  جا  رہی  ہے۔  اسی  طرح  لفظ  ‘الہ’  کا  مطلب  ہے  خدا  (کوئی  بھی  خدا)  ۔  تو  جب الہ  یعنی  کسی  بھی  خدا  کا  ذکر  ہو،  اور  اس  سے  پہلے  ‘ال’  لگ  جائے،  تو  وہ  ایک  خاص  خدا  یعنی  اللہ  کا  ذکر  بن  جائے  گا۔  تو  کچھ  علماء  یہ  بھی  کہتے  ہیں  کہ  اللہ  بھی  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے۔ ۔ ۔

اب  ہم  گرائمر  کے  کچھ  مزید  اصول  پڑھتے  ہیں۔ اردو  میں  ہم  نے  پڑھا  تھا  کے  ایک  فعل  ہوتا  ہے،  ایک  ہاعل  ہوتا  ہے،  اور  ایک  مفعول  ہوتا  ہے۔  اسی  طرح  عربی  میں  بھی  ایک  لفظ  کی  یہ  تینو  حالتیں  ہو  سکتی  ہیں۔  ہم  دیکھتے  ہیں  کہ  کس  طرح  ایک  حالت  سے  لفظ  دوسری  حالت  اختیار  کرتا  ہے۔ ۔ ۔

فعل  ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ فاعل ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔   مفعول

فعل  سے  فاعل  بنانے  کے  لئیے  ہم  نے  صرف  اتنا  کیا  کہ  پہلے  حرف  یعنی  ‘ف’  کے  بعد  اپنی  طرف  سے  ایک  ‘الف’  ڈال  دیا۔  اور  باقی  سب  کچھ  ویسا  ہی  رہنے  دیا۔  ایک  بات  نوٹ  کرنے  والی  یہ  ہے  کہ  عربی  زبان  میں  بیشتر  لفظ  صرف  تیں  حرف  سے  بنتے  ہیں۔  تو  اگر  پہلے  حرف  کے  بعد  الف  لگا  دیا  جائے  اور  باقی  دونو  حرف  ایسے  ہی  رہنے  دیئے  جائیں،  تو  فعل  سے  فاعل  بن  جائے  گا۔  فعل  ہوتا  ہے  کوئی  کام  کرنا،  اور  فاعل  ہوتا  ہے  وہ  کام  کرنے  والا۔  مثال  کے  طور  پر  اگر  ہم  لفظ  ‘قتل’  کو  دیکھیں،  جو  کہ  ایک  فعل  ہے،  تو  اسکا  فاعل  بنانا  بہت  آسان  ہے۔  صرف  پہلے  حرف  یعنی  ق  کے  بعد  الف  لگا  دیں۔  اور  باقی  دونو  حرف  الف  کے  بعد  ویسے  ہی  لگا  دیں۔  جو  لفظ  بنے  گا  وہ  ہی  قاتل۔  اسی  طرح  اگر  فعل  سے  مفعول  بنانا  ہو  تو  ہم  سب  سے  پہلے  اپنی  طرف  سے  ایک  م  کا  اظافہ  کرتے  ہیں،  اسکے  بعد  دو  حرف  ایسے  ہی  رہنے  دیتے  ہیں،  اور  پھر  آخری  حرف  سے  پہلے  ایک  و  کا  اظافہ   کرتے  ہیں۔  اگر  قتل سے  مفعول  بنانا  ہو،  تو  سب  سے  پہلے  م،  پھر  دو  حرف  جس  طرح  تھے  اسی  طرح  یعنی  ق  اور  ت،  پھر  ایک  و  اور  پھر  آخری  حرف۔  اس  طرح  بنے  گا  مقتول۔

کچھ  اور  مثالیں  دیکھتے  ہیں

فعل  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  فاعل  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  مفعول

طلب  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  طالب  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  مطلوب

حمد  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  حامد  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  محمود

خلق  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  خالق  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  مخلوق

رحم  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  راحم  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  مرحوم

حکم  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  حاکم  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  محکوم

نصر  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  ناصر  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  منصور۔ ۔ ۔

امید  ہے  کہ  فعل  سے  فاعل  اور  مفعول  بنانے  کا  طریقہ  آپکو  آگیا  ہوگا۔  جیسے  جیسے  ہم  آگے  پڑھیں  گے،  یہ  چیزیں  اور  بھی  آسان  ہو  جائیں  گی  انشأاللہ۔  اب  ہم  کچھ  مزید  گرائمر  پڑھتے  ہیں۔

جس  طرح  ہم  نے  فاعل  اور  مفعول  پڑھا،  اسی  طرح  عربی  میں  فعل  کی  دو  مزید  حالتیں  ہوتی  ہیں۔  یہ  حالتیں  ہیں  فعلان  اور  فعیل۔  ہمیں  یہ  تو  پتہ  ہی  ہے  کہ  فاعل  وہ  ہوتا  ہے  جو  فعل  کرے،  اسی  طرح  فعلان   بھی  اسی  شخص  کو  کہتے  ہیں  جو  فعل  کرے،  فرق  صرف  اتنا  ہے  کہ  فاعل  جب  فعل  کرتا  ہے،  تو  اس  میں  جوش  اور  ولولہ  نہیں  ہوتا،  مگر  فعلان  جب  فعل  کرتا  ہے  تو  شدّت  سے،  جوش  اور  ولولے  سے  کرتا  ہے۔  یعنی  اگر  ہم  نے  ایسے  فاعل  کا  زکر  کرنا  ہو  جسنے  کوئی  فعل  بہت  جوش  اور  شدّت  سے  کیا  ہو،  تو  ہم  اس  فاعل  کو  فعلان  کہتے  ہیں۔  اسی  طرح  فعیل  بھی  فعل  کرنے  والا  ہوتا  ہے  مگر  وہ  ایسا  فاعل  ہوتا  ہے  جو  ازل  سے  ابد  تک  وہ  فعل  کرے۔  یعنی  جس  فعل  کو  کرنے  میں  وقت  لامحدود  ہو۔  وہ  فعل  ہمیشہ  کیا  جاتا  رہے۔

فعل  سے  فعلان  بنانا  بھی  بہت  اصان  ہے،  صرف  فعل  کے  آخر  میں  الف  اور  ن  لگانا  ہے۔  اسی  طرح  فعل  سے  فعیل  بنانے  کے  لئیے  آخری  حرف  سے  پہلے  چھوٹی  ی  لگانی  ہے۔  ہم  اسکی  بھی  کچھ  مثالیں  دیکھتے  ہیں۔ ۔ ۔

فعل  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  فعلان  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  فعیل

قتل  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  قتلان  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  قتیل  (قتلان  وہ  شخص  ہوگا  جو  بہت  جوش  اور  ولولے  سے   قتل  کرے۔  اور  قتیل  وہ  شخص  ہوگا  جو  ازل  سے  لیکر  ابد  تک،  ہمیشہ  ہمیشہ  قتل  کرتا  رہے۔  عربی  میں  قتل  کا  مطلب  لڑنا  ہوتا  ہے)۔

رحم  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  رحمان  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  رحیم  (رحمان  کا  مطلب  ہوگا  جو  بہت  شدت  اور  جوش  سے  رحم  کرے،  اور  رحیم  کا  مطلب  ہوگا  جو  ہمیشہ  ہمیشہ  رحم  کرتا  رہے)۔

نصر  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  نصران  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  نصیر  (  نصران  کا  مطلب  ہوگا  جو  بہت  جوش  سے  اور  ولولے  سے  مدد  کرے،  اور  نصیر  کا  مطلب  ہوگا  جو  ہمیشہ  مدد کرتا  رہے)۔

اب  ہم  واپس  اپنی  پہلی  آیت  یعنی  بسم اللہ  الرحمن  الرحیم  کو  دیکھتے  ہیں۔

بسم اللہ  کا  مطلب  کے  ساتھ  نام  اللہ،  یعنی  اللہ  کے  نام  کے  ساتھ۔  الرحمن  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے،  ال  اور  رحمان۔  رحمان  تو  ہم  نے  ابھی  دیکھا  کہ  بہت  شدت،  جوش  اور  ولولے  سے  رحم  کرنے  والے  کو  کہا  جاتا  ہے،  اور  ہم  نے  شروع  میں  پڑھا  تھا  کہ  اگر  کسی  لفظ  سے  پہلے  ال  لگا  دیا  جائے  تو  وہ  عام  چیز  کو  خاص  بنا  دیتا  ہے،  جسکا  یا  تو  ہم  سم  کو  پتہ  ہوگا،  یا  پیچھے  اسکا  زکر  ہو  چکا  ہوگا۔  رحمان  سے  پہلے  ال  لگانے  کا  مطلب  ہے  کہ  کوئی  ایسا  شدت  سے  رحم  کرنے  والا  جسکا  ذکر  پہلے  ہو  چکا  ہو،  اور  وہ  ہے  اللہ  جسکے  نام  کے  ساتھ  ہم  نے  یہ  آیت  شروع  کی  تھی۔  تو  بسم اللہ  الرحمن  کا  مطلب  ہوا  کے  ساتھ  نام  اللہ  بہت  شدت  اور  جوش  سے  رحم  کرنے  والا۔  یعنی  اللہ  کے  نام  کے  ساتھ  جو  بہت  رحم  کرنے  والا  ہے۔  اسی  طرح  ہم  رحیم  کا  مطلب  بھی  دیکھ  چکے  ہیں،  رحیم  کا  مطلب  ہے  ازل  سے  ابد  تک،  ہمیشہ  ہمیشہ  رحم  کرنے  والا۔   تو  پوری  آیت  کا  مطلب  بنے  گا  “اللہ  کے  نام  کے  ساتھ  جو  بہت  شدت  سے  رحم  کرتا  ہے  اور  ہمیشہ  ہمیشہ  رحم  کرتا  ہے”۔

امید  ہے  ااوپر  کی  گئی  باتیں  آپکو  کافی  حد  تک  سمجھ  آگئی  ہونگی۔  اگر  کچھ  تھوڑا  بہت  نہیں  بھی  سمجھ آیا  تو  انشأاللہ  جب  ہم  اگلی  کلاس  میں  مزید  آیتیں  دیکھیں  گے  تو  سمجھ  آجائے  گا۔  میں  نے  اوپر  ۹۶  چھیانوے  الفاظ  کا  ذکر  کیا  تھا  جو  ہم  انشأاللہ  اس  کورس  میں  یاد  کریں  گے۔  آج  کے  لئیے  آپکو  ۶  چھہ  الفاظ  بتا  رہا  ہوں۔  یہ  چھہ  الفاظ  بہت  آسان  ہیں  اور  قرآن  میں  بار  بار  آئے  ہیں۔  ان  میں  سے  چار  الفاظ  الف  اور  ن  سے  شروع  ہوتے  ہیں،  صرف  زبر  اور  زیر  کا  فرق  ہے۔

اَنَّ  ۔ ۔ ۔ ۔ ۔   بےشک

اِنَّ  ۔ ۔ ۔ ۔ ۔   بےشک

اَن  ۔ ۔ ۔ ۔ ۔  کہ

اِن  ۔ ۔ ۔ ۔ ۔  اگر

پہلے  دو  لفظ  میں  ن  کے  اوپر  شد  ہے  اور  زبر  ہے،  اور  پہلے  لفظ  میں  الف  کے  اوپر  زبر  ہے  اور  دوسرے  لفظ  میں  الف  کے  نیچے  زیر  ہے۔  پہلے  دونو  الفاظ  کا  مطلب  ہے  بےشک۔

اگلے  دونو  الفاظ  میں  ن  کے  اوپر  جزم  ہے۔  تیسرے  لفظ  میں  الف  کے  اوپر  زبر  ہے  اور  چوتھے  لفظ  میں  الف  کے  نیچے  زیر  ہے۔  تیسرے  لفظ  کا  مطلب  ہے  کہ  اور  چوتھے  لفظ  کا  مطلب  ہے  اگر۔

پانچواں  لفظ  جو  ہم  پڑھیں  گے  وہ  ہے    ‘یا’۔  یہ  لفظ  اردو  میں  بھی  استعمال  ہوتا  ہے،  جیسے  یا  حارث،  یا  عثمان۔  یہ  لفظ  ہم  کسی  کو  بلانے  کے  لئے  استعمال  کرتے  ہیں۔  اسکا  مطلب  ہے  اے۔  یعنی  اے  حارث،  اے  عثمان۔

اور  چھٹا  لفظ   جو  ہم  دیکھیں  گے  وہ  ہے  ایھا۔  اس  لفظ  میں  ی  کے  اوپر  پیش  ہے  مگر  مجھے  بہت  ڈھونڈنے  کے  باوجود  پیش  نہیں  مل  رہی۔   ی  کے  اوپر  شد  بھی  ہے۔  اس  لفظ  کا  مطلب  بھی  ہے  اے۔  یعنی  دونو  الفاظ  کا  ایک  ہی  مطلب  ہے۔  اکثر  قرآن  میں  یہ  دونو  لفظ  اکھٹے  استعمال  ہوتے  ہیں  جو  زور  ڈالنے  کے  لئے  کیا  جاتا  ہے۔

قران  اصل  میں  ایک  خطاب  کی  شکل  میں  ہے،  اسلئے  اکثر  جگہ  ہم  دیکھیں  گے  کہ  کسی  نہ  کسی  کو  مخاطب  کیا  گیا  ہوگا۔  یا  ایمان  والوں  کو،  یا  اہلِ  کفر  کو،  یا  تمام  انسانوں  کو،  یا  کسی  خاص  قوم  کو۔  سورت  حجرات  بھی  اسی  طرح  کے  ایک  خطاب  سے  شروع  ہوتی  ہے۔  انشأاللہ  اگلی  کلاس  میں  ہم  کچھ  مزید  گرائمر  اور  سورت  حجرات  کی  کچھ  آیتیں  دیکھیں  گے۔  اللہ  ہمیں  قران  سمجھنے  اور  اس  پہ  عمل  کرنے  کی  توفیق  عطا  فرمائے۔  آمین

Posted in Urdu | Tagged: , , | 16 Comments »