Amar Bail

A plant of eternity

Archive for the ‘Urdu’ Category

کرو وعدہ میرے مرنے پر آؤ گے

Posted by Haris Gulzar on January 4, 2010

کرو  وعدہ  میرے  مرنے  پر  آؤ  گے

اور  مجھے  اپنے  ہاتھوں  سے  دفناؤ  گے


آؤ  گے  میری  میّت  پہ  اپنوں  کی  طرح

سامنے  دنیا  کے  آنسو  بھی  بہاؤ  گے


بتاؤ  گے  نہ  کسی  کو  ہماری  علیحدگی  کا

وہی  پرانا  پیار  دنیا  کو  دکھاؤ  گے


دو  گے  سب  سے  زیادہ  کاندھہ  مجھے

عمر  بھر  میرے  نام  سے  نہ  گھبراؤ  گے


چھوڑ  کر  زمانے  بھر  کی  خوشیاں  میرے  لیئے

اور  میرے  دل  سے  اپنا  غم  مٹاؤ  گے


روز  آیا  کرو  گے  میری  قبر  پر

اور  دعا  کے  لیئے  ہاتھ  بھی  اٹھاؤ  گے


کرو  وعدہ  میرے  مرنے  پر  آؤ  گے۔ ۔ ۔

Posted in Urdu | 20 Comments »

Quran Class 2 Part 2 — قرآن کلاس ۲ حصّہ دوئم

Posted by Haris Gulzar on September 7, 2009

حصّہ  اوّل  میں  جہاں  سے  سلسلہ  توڑا  تھا  وہیں  سے  دوبارہ  شروع  کرتے  ہیں۔  ہم  نے  دیکھا  تھا  کہ  “ بَینَ  یَدَیِ “  کا  مطلب  ہے  سامنے۔  اب  اس  سے  اگلا  لفظ  دیکھتے  ہیں۔

اگلا  لفظ  ہے  اللہ  جسکا  مطلب  ہم  پہلے  ہی  دیکھ  چکے  ہیں۔  اس  لفظ  کے  بعد  وَ  ہے  جو  اردو  زبان  میں  مستعمل  ہے  جسکا  مطلب  ہے  اور۔  مثال  کے  طور  پر  صبح و شام  یعنی  صبح  اور  شام،  شب و روز  یعنی  رات  اور  دن  وغیرہ۔  اس  سے  اگلا  لفظ  ہے  “ رَسُولِہ “۔   یہ  لفظ  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے،  وہ  دو  الفاظ  ہیں  رسول  اور  ہِ ۔  رسول  تو  اردو  کا  لفظ  ہے  جسکا  مطلب  ہے  بھیجا  گیا  مگر  یہاں  ‘ ہ ‘  کے  استعمال  کو  سمجھنا  ضروری  ہے۔  اسکے  لیئے  ہم  کچھ  ضمیر  دیکھتے  ہیں۔  ضمیر  وہ  لفظ  ہوتا  ہے  جو  اسم  نہ  ہو  مگر  اسم  کا  مطلب  دے۔  مثال  کے  طور  پر  اگر  میں  دو  جملے  کہوں،  یہ  قلم  حارث  کا  ہے۔  یہ  کتاب  حارث  کی  ہے۔  تو  میں  یہ  بھی  کہ  سکتا  ہوں  کہ  یہ  قلم  حارث  کا  ہے  اور  یہ  کتاب  اس  کی  ہے۔  دوسرے  جملے  میں  میں  نے  حارث  کی  جگہ  اس  کا  استعمال  کیا۔  یہ  لفظ  “ اس “  ضمیر  ہے۔  اسی  طرح  اگر  میں  کہوں  حارث  اچھا  لڑکا  ہے،  وہ  پڑھائی  کرتا  ہے،  تو  لفظ  وہ  ضمیر  ہے۔

اسی  طرح  عربی  میں  ضمائر  (ضمیر  کی  جمع)  کے  لیئے  کچھ  الفاظ  ہیں۔ ۔ ۔

۱۔  ی ۔ ۔ ۔  جسکا  مطلب  ہے  میں۔  مثال  کے  طور  پر  کتابی  کا  مطلب  ہوگا  میری  کتاب۔  قلمی  کا  مطلب  ہوگا  میرا  قلم۔

۲۔  نا ۔ ۔ ۔  جسکا  مطلب  ہے  ہم۔  مثال  کے  طور  پر  کِتَابُنَا  کا  مطلب  ہوگا  ہماری  کتاب۔  قَلمُنَا  کا  مطلب  ہوگا  ہمارا  قلم۔

۳۔  کَٔ ۔ ۔ ۔  جسکا  مطلب  ہے  تو  ایک  مذکر۔  مثال  کے  طور  پر  کَتَابُکَ  کا  مطلب  ہوگا  تو  ایک  مذکر  کی  کتاب

۴۔  کِٔ ۔ ۔ ۔  جسکا  مطلب  ہے  تو  ایک  مؤنث۔  مثال  کے  طور  پر  کَتَابُکِ  کا  مطلاب  ہوگا  تو  ایک  مؤنث  کی  کتاب  یعنی  کسی  مؤنث  کو  مخاطب  کرکے  اگر  کہنا  ہو  تیری  کتاب۔

۵۔  کم  جسکا  مطلب  ہے  تم  سب۔  مثال  کے  طور  پر  قَلمُکُم  کا  مطلب  ہوگا  تم  سب  کا  قلم،  اسی  طرح  کِتَابُکُم  کا  مطلب  ہوگا  تم  سب  کی  کتاب۔

۶۔  ہ۔ ۔ ۔  جسکا  مطلب  ہے  وہ  ایک  مذکر۔  یہاں  کَٔ  سے  فرق  ضرور  نوٹ  کریں۔  کَٔ  کا  مطلب  تھا  تو  ایک  مذکر،  جبکہ  ہ  کا  مطلب  ہے  وہ  ایک  مذکر۔  مثال  کے  طور  پر  قلمہُ  کا  مطلب  ہوگا  وہ  ایک  مذکر  کا  قلم  یعنی  اسکا  قلم

۷۔  ھا۔ ۔ ۔جسکا  مطلب  ہے  وہ  ایک  مؤنث۔  مثال  کے  طور  پر  کتابھا  کا  مطلب  ہوگا  اس  ایک  مؤنث  کی  کتاب

۸۔  ھم ۔ ۔ ۔  جسکا  مطلب  ہے  وہ  سب۔  مثال  کے  طور  پر  نفسھم  کا  مطلب  ہوگا  وہ  سب  کا  نفس  یعنی  ان  سب  کا  نفس۔  اسی  طرح  قلمھم  کا  مطلب  ہوگا  وہ  سم  کا  قلم  یعنی  ان  سب  کا  قلم۔

اوپر  دیئے  گئے  ضمائر  میں  پہلے  دو  ضمائر  خود  اپنے  لیئے  استعمال  کیئے  جاتے  ہیں،  یعنی  میں  یا  ہم۔  اگلے  تین  ضمائر  کسی  دوسرے  شخص  سے  بات  کرتے  ہوئے  استعمال  کیئے  جاتے  ہیں  جو  وہاں  موجود  ہو،  یعنی  جب  ہم  کسی  دوسرے  شخص  سے  کلام  کر  سکتے  ہوں،  اور  تو  اور  تم  کے  الفاظ  استعمال  کر  سکتے  ہوں۔  اور  آخری  تیں  ضمائر  اس  وقت  استعمال  کیئے  جاتے  ہیں  جب  ایسے  شخص  کا  ذکر  ہو  رہا  ہو  جو  وہاں  موجود  نا  ہو۔  یعنی  جب  ہم  وہ  یا  اس  کے  الفاظ  استعمال  کریں۔

ان  ضمائر  میں  کَ  اور  کِ  پہ  ہم  نے  اعراب  کا  دھیان  رکھا،  اس  لیئے  کہ  ان  اعراب  سے  مطلب  بدل  سکتا  ہے،  مگر  باقی  ضمائر  میں  ہم  نے  اعراب  کو  نظر  انداز  کیا،  مثال  کے  طور  پر  ھُم  اور  ھِم  کا  فلحال  ہمارے  لیئے  ایک  ہی  مطلب  ہے۔  اسی  طرح  ہُ  اور  ہِ  کا  بھی  ایک  ہی  مطلب  ہے۔

اب  ہم  دیکھتے  ہیں  کہ  جو  لفظ  ہم  پڑھ  رہے  تھے  یسکا  کیا  مطلب  ہے۔  وہ  لفظ  تھا  “ رسولہِ “۔  یہ  لفظ  رسول  اور  ہِ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے  جسکا  مطلب  ہوگا  اس  ایک  کا  رسول۔  اور  یہ  کس  کے  رسول  کی  بات  ہو  رہی  ہے،  ظاہر  ہے،  اللہ  سبحانَ وَ تعالی  کے  رسول  کی۔

اللہ  و  رسولہِ  کا  مطلاب  ہوگا  اللہ  اور  اس  ایک  کا  رسول،  یعنی  اللہ  اور  اسکا  رسول۔  تو  بَینَ  یَدَیِ  اللہِ  وَ  رَسُولَہ  کا  مطلب  ہوگا  اللہ  اور  انکے  رسول  کے  سامنے۔

اب  تک  پڑھی  گئی  آیت  کا  مطلب  کچھ  اس  طرح  بنے  گا

یَٓاَیُّھَا الَّذِینَ  آمَنُوا  لَا  تُقَدِّمُوا  بَینَ  یَدَیِ  اللہِ  وَ  رَسُولِہِ

اے  اہلِ  ایمان،  اللہ  اور  اسکے  رسول  کے  حضور  پیش  قدمی  نہ  کرو۔

اگلے  الفاظ  ہیں  وَ اتَّقُوا اللہ۔  وَ  کا  مطلب  ہمیں  پتہ  ہے۔  اسکا  مطلب  ہے  اور۔  اب  ہم  دیکھتے  ہیں  کہ  اِتَّقُوا  کا  کیا  مطلب  ہے۔

یہ  لفظ  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے۔  وہ  دو  الفاظ  ہیں  اِتَّق  اور  وا۔  ہمیں  یہ  تو  پتہ  ہی  ہے  کہ  وا  جمع  کے  لیئے  استعمال  ہوا  ہے۔  اب  ہم  دیکھتے  ہیں  کہ  اِتَّقَ  کا  کیا  مطلب  ہے۔

کسی  بھی  کلمے  سے  پہلے  الف  صرف  تین  حالتوں  میں  آتا  ہے۔

۱۔  اگر  خود  اپنا  ہی  ذکر  کرنا  ہو۔  یعنی  الف  کا  مطلب  ہوگا  ‘میں’۔  مثال  کے  طور  پر  اَکتُبُ  کا  مطلب  ہوگا  میں  لکھتا  ہوں۔  ایسے  کلمے  کو  متکلم  کہتے  ہیں۔

۲۔  الف  کا  استعمال  سوالیہ  بھی  ہو  سکتا  ہے۔  مثال  کے  طور  پر  اَ اَکتُبُ  کا  مطلب  ہوگا  کیا  میں  لکھتا  ہوں؟  ایسے  کلمے  کو  استفھام  کہتے  ہیں

۳۔  الف  کا  استعمال  حکم  دینے  کے  لیئے  بھی  ہوسکتا  ہے۔  مثال  کے  طور  پر   اُکتُبُ  کا  مطلب  ہوگا  لکھو۔  ایسے  کلمے  کو  امر  کہا  جاتا  ہے۔

ہمیں  ان  تینوں  استعمال  میں  سے  صرف  جملہ  دیکھ  کر  ہی  اندازہ  لگانہ  پڑے  گا  کہ  الف  کا  کونسا  استعمال  کیا  گیا  ہے۔

ایک  بات  اور  نوٹ  کرنے  کی  ہے۔  اگر  الف  کا  استعمال  امر  کے  طور  پہ  کیا  گیا  ہے،  یعنی  کوئی  حکم  دیا  گیا  ہے،  تو  کلمے  میں  سے  حروفِ  علت،  جنکو  ہم  انگریزی  میں  واول  کہتے  ہیں،  حذف  یعنی  غائب  ہو  جاتے  ہیں۔  اصل  لفظ  جو  یہاں  استعمال  کیا  گیا  ہے  وہ  ہے  تقوی،  مگر  امر  کی  وجہ  سے  پہلے  الف  لگا  دیا  گیا  جس  سے  لفظ  بنا  اتقوی۔  عربی  زبان  میں  الف،  واو  اور  چھوٹی  ی  حروف  علت  یعنی  واول  ہیں۔  اس  لیئے  امر  کی  وجہ  سے  لگنے  والے  الف  نے  آخری  واو  اور  چھوٹی  ی  کو  حذف  کر  لیا،  اور  باقی  لفظ  رہ  گیا  اتق۔

اردو  میں  تقوی  کا  مطلب  ہوتا  ہے  ڈر۔  یہاں  بھی  لفظ  کا  یہی  مطلب  ہے  مگر  حکم  دیا  جا  رہا  ہے  کہ  ڈرو۔  ہم  نے  یہ  بھی  دیکھا  تھا  کہ  لفظ  کہ  آخر  میں  جمع  کی  علامت،  یعنی  وا  موجود  تھی،  جس  سے  لفظ  کا  مطلب  بنے  گا  تم  سب  ڈرو۔

وَاَتَّقُوا اللہِ  کا  مطلب  ہوگا  اور  ڈرو  تم  سب  اللہ  سے۔

اگلا  لفظ  ہے  ‘اِنَّ’۔  ہم  نے  پہلی  کلاس  میں  جو  چھ  الفاظ  یاد  کیئے  تھے  ان  میں  سے  ایک  لفظ  یہ  بھی  تھا۔  اس  لفظ  کا  مطلب  ہے  بےشک۔  اسی  طرح  اِنَّ اللہ  کا  مطلب  ہوگا  بےشک  اللہ۔

اگلے  دو  الفاظ  ہیں  سَمِیع  عَلِیم۔   سمیع  میں  آخری  ع  کے  اوپر  دو  پیش  ہیں،  اسی  طرح  علیم  میں  آخری  م  کے  اوپر  بھی  دو  پیش  ہیں۔  یہ  دونو  الفاظ  فعیل  کے  وزن  پہ  ہیں۔  ہم  نے  پہلی  کلاس  میں  فعیل  پڑھا  تھا،  جسکا  مطلب  ہوتا  ہے  ازل  سے  ابد  تک  فعل  کرنے  والا۔  اسی  طرح  سمیع  کا  فعل  ہے  سمع  جسکا  مطلب  ہے  سننا،  تو  سمیع  کا  مطلب  ہوگا  ازل  سے  ابد  تک  سننے  والا۔  اور  علیم  کا  فعل  ہے  علم  یعنی  جاننے  والا،  تو  علیم  کا  مطلب  ہوگا  ازل  سے  ابد  تک  جاننے  والا۔

اب  ہم  پوری  آیت  کا  رواں  ترجمہ  کرتے  ہیں۔

یٓاَ یُّھَا الَّذِینَ  آمَنُوا  لَا  تُقَدِّمُوا  بَینَ  یَدَیِ  اللہِ  وَ  رَسُولِہِ  وَاتَّقُوا  اللہَ  اِنَّ  اللہَ  سَمِیعُ  عَلِیمُ۔

اے  لوگو  جو  ایمان  لائے  ہو،  اللہ  اور  اسکے  رسول  کے  سامنے  پیش  قدمی  نہ  کرو  اور  اللہ  سے  ڈرو  بےشک  اللہ ازل  سے  ابد  تک  کے  سننے  والے  اور  ازل  سے  ابد  تک  کے  جاننے  والے  ہیں۔

امید  ہے  آپکو  اوپر  بتائے  گئے  گرائمر  کے  کچھ  اصول  اور  عربی  کے  کچھ  الفاظ  سمجھ  آئے  ہونگے  انشا ء اللہ۔    اللہ  ہمیں  قران  پڑھنے  اور  سمجھنے  کی  توفیق  عطا  فرمائے۔  آمین۔

Posted in Urdu | Tagged: , , | 11 Comments »

Quran Class 2 Part 1 — قرآن کلاس ۲ حصّہ اوّل

Posted by Haris Gulzar on September 6, 2009

اسلامُ  علیکم۔

امید  کرتا  ہوں  آپ  سب  خیریت  سے  ہونگے۔  کلاس  ۳  حصہ  اول  لکھتے  ہوئے  میں  نے  غلطی  سے  اس  کلاس  کو  مٹا  دیا،  جسکی  وجہ  سے  میں  یہ  کلاس  دوبارہ  لکھ  رہا  ہوں۔  امید  کرتا  ہوں  اور  دعا  کرتا  ہوں  کہ  یہ  کلاس  لکھتے  ہوئے  کوئی  غلطی  نہ  ہو۔

 کلاس  ۱  میں  ہمنے  دیکھا  تھا  کہ  بِسمِ اللہ  الرحمان  الرحیم  کا  کیا  کطلب  ہے۔  اس  کلاس  میں  ہم  سورت  حجرات  کی  پہلی  آیت  دیکھیں  گے۔  سورت  حجرات  کا  اغاز  ان  الفاظ  سے  ہوتا  ہے۔ ۔ ۔

یآیُّھَا  الَّذِینَ

پچھلی  کلاس  میں  ہم  نے  چھہ  الفاظ  یاد  کیئے  تھے۔  ان  الفاظ  میں  پانچواں  لفظ  تھا  یا  اور  چھٹا  لفظ  تھا  اَیُھا،  اور  ہم  نے  دیکھا  تھا  کہ  ان  دونو  الفاظ  کے  مطلاب  ہیں  اے،  یعنی  یہ  دونو  الفاظ  کسی  کو  مخاطب  کرنے  کے  لیئے  استعمال  ہوتے  ہیں۔  قرآن  میں  ہم  اکثر  دیکھیں  گے  کہ  ایک  جیسے  مطلب  والے  الفاظ  اکھٹے  بھی  استعمال  ہوتے  ہیں،  اور  اگر  ایسا  کیا  جائے  تو  وہ  زور  دینے  کے  لیئے  ہوتا  ہے۔  یہاں  بھی  لفظ  یا  اور  لفظ  ایھا  اکھٹے  استعمال  ہوئے  ہیں۔

اگلا  لفظ  ہے  اَلَّذِینَ۔  اس  لفظ  کا  مطلب  ہے  جو  سب  لوگ۔  یہ  لفظ  مخاطب  کرنے  کے  لیئے  استعمال  کیا  جاتا  ہے۔  عربی  میں  کسی  کو  مخاطب  کرنے  کے  کئی  طریقے  ہیں،  آئیے  ان  طریقوں  کو  دیکھتے  ہیں

اَلَّذِینَ ۔۔  جو  سب  لوگ

اَلَّذِی ۔۔  جو  ایک  مذکر

اَلَّتِی ۔۔  جو  ایک  مؤنث

یہ  تین  الفاظ  بھی  ان  چھیانوے  الفاظ  میں  سے  ہیں  جو  آپنے  یاد  کرنے  ہیں۔  تو  ابھی  تک  ہم  نے  یہ  پڑھا  کہ  یآ یُّھَا الذِینَ  کا  مطلب  ہے  اے اے  جو  سب  لوگ،  یعنی  اے  لوگو۔

اسی  آیت  میں  اگلا  لفظ  ہے  آمَنُوا۔  یہ  لفظ  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے۔  وہ  دو  الفاظ  ہیں  امن  اور  وا۔  امن  کا  مطلب  ہے  ایمان  لانا،  اور  یہ  کسی  ایک  شخص  کے  لیئے  استعمال  ہوتا  ہے،  یعنی  جو  ایک  شخص  ایمان  لایا۔  وا  ایک  علامت  ہے  جو  اگر  کسی  لفظ  کے  آخر  میں  آجائے،  تو  وہ  لفظ  جمع  پڑھا  جاتا  ہے۔  جمع  کی  کل  ۴  چار  علامتیں  ہیں۔  یہ  علامتیں  مندرجہ  ذیل  ہیں۔ ۔ ۔

وا

ون

ین

ات

اوپر  لکھی  گئی  چاروں  علامتوں  میں  سے  کوئی  بھی  اگر  کسی  لفظ  کے  آخر  میں  آئے  تو  وہ  لفظ  جمع  پڑھا  جائے  گا۔  اسی  طرح  آمَنُوا  کا  مطلب  بھی  ہوگا  جو  سب  ایمان  لائے۔  ابھی  تک  پڑھی  گئی  آیت  کا  مطلب  ہوگا۔ ۔ ۔

یآَ یُّھَا  الَّذِینَ  آمَنُوا

اے  اے  جو  سب  لوگ  جو  سب  ایمان  لائے،  یعنی  اے  اہلِ  ایمان۔

اس  آیت  کا  اگلا  لفظ  ہے  لَا۔  یہ  لفظ  نفی  کہ  معنی  میں  استعمال  ہوتا  ہے۔  اردو  زبان  میں  بھی  ہم  لَا  استعمال  کرتے  ہیں  جیسے  لاجواب،  لاتعداد  اور  لازوال۔  عربی  زبان  میں  نفی  کی  کئی  علامتیں  ہیں۔  آیئے  ہم  نفی  کی  علامتیں  دیکھتے  ہیں۔ ۔ ۔

لَا

لَیسَ

لَم

لَن

مَا

یہ  تمام  نفی  کی  علامتیں  ہیں،  اور  یہ  مکمل  الفاظ  ہیں۔  جیسے  ہمنے  دیکھا  تھا  کہ  جمع  کی  علامتیں  کسی  لفظ  کے  آخر  میں  آتی  ہیں،  نفی  کی  علامتیں  کسی  لفظ  کے  ساتھ  جڑ  کر  نہیں  آتیں  کیوں  کہ  یہ  بذاتِ  خود  مکمل  الفاظ  ہیں۔

اگلا  لفظ  ہے  تُقَدِّمُوا۔  اس  لفظ  کو  ہم  توڑ  کر  اس  طرح  بھی  لکھ  سکتے  ہیں۔ ۔ ۔  ت ۔۔ قدم ۔۔ وا۔  یعنی  اس  لفظ  کو  تین  حصوں  میں  لکھا  جا  سکتا  ہے۔  پہلا  حصہ  صرف  ایک  ت  پر  مشتمل  ہے۔  یہاں  پر  ت  کے  استعمال  کو  سمجھنا  ضروری  ہے۔  اردو  زبان  میں  وقت  کے  اعتبار  سے  کوئی  لفظ  تین  زمانوں  میں  استعمال  کیا  جا  سکتا  ہے۔  وہ  تین  زمانے  ہیں  ماضی،  حال،  اور  مستقبل۔  ماضی  وہ  زمانہ  ہوتا  ہے  جسمیں  کام  کیا  جا  چکا  ہو،  حال  وہ  زمانہ  ہوتا  ہے  جسمیں  کام  کیا  ابھی  کیا  جا  رہا ہو،  اور  مستقبل  وہ  امانہ  ہوتا  ہے  جس  میں  کام  بعد  میں  کیا  جانا  ہو۔  مگر  عربی  میں  تین  کے  بجائے  دو  زمانے  ہوتے  ہیں۔  وہ  دو  زمانے  ہیں  ماضی  اور  مضارع۔  ماضی  تو  وہی  اردو  والا  ماضی  ہے،  مگر  اردو  والے  حال  اور  مستقبل  کو  ملا  کر  عربی  میں  مضارع  کہا  جاتا ہے،  یعنی  عربی  میں  حال  اور  مستقبل  مل  کر  مضارع  بن  جاتے  ہیں۔  عربی  میں  مضارع  کی  چند  علامتیں  ہیں۔ ۔ ۔

ت : ۔۔  تو  یا  تم

ی : ۔۔  وہ

ا :  ۔۔  میں

ن : ۔۔  ہم

مندرجہ  بالا  ۴  چار  علامتیں  کسی  بھی  لفظ  کو  مضارع  بنا  دیتی  ہیں۔  ان  چار  علامتوں  کی  ایک  ایک  مثال  لے  کر  سمجھتے  ہیں۔  اگر  لفظ  ہو  تقتل  تو  اس  لفظ  کو  ہم  توڑ  کر  ت  اور  قتل  لکھ  سکتے  ہیں۔  عربی  میں  قتل  کا  مطلب  ہوتا  ہے  لڑنا۔  اور  لفظ  کے  شروع  میں  ت  سے  یہ  لفظ  مضارع  بن  گیا،  اور  اس  لفظ  کا  مطلب  ہوا  تو  لڑتا  ہے  یا  تو  لڑے  گا۔  اسی  طرح  اگر  لفظ  ہو  تکتب،  تو  اسکا  مطلب  ہوگا  تو  لکھ  رہا  ہے  یا  تو  لکھے  گا۔

اگر  لفظ  کے  شروع  میں  ی  آجائے  تو  بھی  لفظ  مضارع  بن  جاتا ہے،  جیسا  کہ  ہم  نے  اوپر  پڑھا۔  اگر  لفظ  ہو  یقتل،  تو  اسکا  مطلب  ہوگا  وہ  لڑ  رہا  ہے  یا  وہ  لڑے  گا۔  اسی  طرح  اگر  لفظ  کے  شروع  میں  ا  آئے  تو  اسکا  مطلب  ہوگا  میں۔  اقتل  کا  مطلب  ہوگا  میں  لڑ رہا  ہوں  یا  میں  لڑوں  گا۔  اور  اسی  طرح  نقتل  کا  مطلب  ہوگا  ہم  لڑ  رہے  ہیں  یا  ہم  لڑیں  گے۔ ۔ ۔

جو  لفظ  ہم  پڑھ  رہے  تھے  وہ  تھا  ت ۔ قدم ۔ وا۔  ہم  نے  دیکھا  کہ  لفظ  کے  شروع  میں  اگر  ت  آجائے  تو  وہ  لفظ  مضارع  بن  جاتا ہے  اور  ت  کا  مطلب  ہوتا  ہے  تم  یا  تو۔ قدم  اردو  کا  لفظ  ہے  جسکا  مطلب  ہے  آگے  بڑھنا،  جیسے  ہم  کہتے  ہیں  قدم  بڑھاؤ۔  اس  لفظ  کا  آخری  حصہ  ہے  وا،  اور  ہم  نے  اوپر  پڑھا  کہ  وا  ایک  علامت  ہے  جو  لفظ  کو  جمع  بنا  دیتی  ہے۔  تو  اگر  اب  تین  حصوں  کو  جوڑ  کر  پڑھیں  تو  اس  لفظ  کا  مطلب  نکلے  گا  تم  قدم  بڑھاؤ  سب،  یعنی  تم  سب  قدم  بڑھاؤ۔

اگلا  لفظ  ہے  بَینَ۔  یہ  لفظ  بھی  اردو  میں  استعمال  ہوتا  ہے  اور  اسکا  مطلب  ہے  درمیان۔  جیسے  اردو  میں  ہم  کہتے  ہیں  بین الاقوامی  پرواز،  یعنی  قوموں  کے  درمیان  پرواز۔  اس  لفظ  سے  اگلا  لفظ  ہے  یَدَیِ۔  یہ  لفظ  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے۔  وہ  دو  الفاظ  ہیں  ید  اور  ی۔  عربی  میں  ید  کا  مطلب  ہوتا  ہے  ہاتھ۔  ایک  بات  نوٹ  کریں  کہ  یہاں  چھوٹی  ی  لفظ  کے  شروع  میں  نہیں  بلکہ  آخر  میں  ہے  اس  لئے  یہ  لفظ  مضارع  نہیں  ہے۔  لفظ  ی  کا  مطلب  ہے  دو۔  اگر  ان  دونو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  پڑھیں   تو  مطلب  بنے  گا  دو  ہاتھ۔  اور  بَینَ  یَدَیِ  کا  مطلب  ہوگا  دونو  ہاتھوں  کے  درمیان۔  یہ  اصطلاح  عربی  میں    محاورے  کے  طور  پر  استعمال  ہوئی  ہے۔  دونوں  ہاتھوں  کے  درمیان  ہمارے  سامنے  والا  حصہ  ہوتا  ہے،  اس  لئے  یہاں  بَینَ  یَدَیِ  کا  مطلب  ہے  سامنے۔

اس  کلاس  کے  اگلے  حصے  میں  سلسلہ  یہیں  سے  جوڑا  گیا  ہے۔  اللہ  ہمیں  قرآن  پڑھنے  اور  سمجھنے  کی  توفیق  عطا  فرمائے۔  آمین۔

Posted in Urdu | Tagged: , , | 13 Comments »

دو ٹکے کا آدمی

Posted by Haris Gulzar on August 27, 2009

یہ  واقعہ  میں  نے  خود  اپنی  آنکھوں  سے  تو  نہیں  دیکھا،  مگر  اس  واقعہ  کو  محسوس  ضرور  کیا  ہے۔  مجھے  یہ  واقعہ  جس  طرح  سنایا  گیا  تھا،  اور  جن  جزبات  کے  ساتھ  سنایا  گیا  تھا،  میرے  خیال  میں  مجھے  اچھی  طرح  اندازہ  ہے  کہ  کن  الفاظ  کے  استعمال  سے  یہ  واقعہ،  واقعہ  بنا  ہوگا۔  ایسے  کئی  واقعوں  سے  ہم  ہر  روز  دو  چار  ہوتے  ہیں،  روز  دیکھتے  ہیں  مگر  پھر  بھی  سوچتے  نہیں  ہیں۔  یہ  واقعہ  ہے  ایک  غریب  آدمی  کا،  اور  ایک  امیر  آدمی  کا۔ ۔ ۔

شام  کا  وقت  تھا،  ایک  غریب  آدمی  جس  کی  ڈیوٹی  ایک  بہت  بڑی  پارکنگ  کے  باہر  لگی  ہوئی  تھی،  ہر  جانے  والی  گاڑی  سے  پارکنگ  کا  کرایہ  اور  ٹکٹ  وصول  کر  رہا  تھا۔  اسی  دوران  ایک  امیر  آدمی  اپنی  گاڑی  میں  اس  غریب  آدمی  کے  پاس  پہنچا۔  غریب  آدمی  نے  گاڑی  کی  ٹکٹ  مانگی  تو  گاڑی  کے  مالک  نے  بتایا  کہ  ٹکٹ  اس  سے  گم  چکی  ہے،  مگر  پارکنگ  کا  کرایہ  وہ  دینے  کے  لیئے  تیّار  ہے۔  ٹکٹ  وصولی  کرنے  والے  شخص  نے  تشویش  کا  اظہار  کیا  اور  کہا  کہ  ٹکٹ  دکھائے  بغیر  گاڑی  لےجانا  مشکل  ہے۔  اس  غریب  آدمی  کی  اس  بات  پر  امیر  آدمی  کو  اپنی  بےعزتی  محسوس  ہوئی  اور  وہ  اس  غریب  آدمی  پر  چلّانا  شروع  ہوگیا۔

اسی  بحث  کے  دوران  جو  اس  غریب  آدمی  اور  امیر  آدمی  میں  چل  رہی  تھی،  دوسری  گاڑیوں  والے  لوگ  اتر  کر  انکی  بحث  ختم  کرانے  آگئے۔  تب  اس  امیر  آدمی  نے  وہ  کہ  ڈالہ  جسکا  اسے  غرور  تھا۔  اس  امیر  آدمی  کہ  الفاظ  تھے  کہ  “  اس  دو  ٹکے  کے  آدمی  کی  ہمّت  کیسے  ہوئی  میری  گاڑی  روکنے  کی،  یہ  انسان  اپنے  آپ  کو  سمجھتا  کیا  ہے”۔   یہاں  لکھے  گئے  الفاظ  شاید  اصل  مکالمے  سے  تھوڑے  مختلف  ہوں  مگر  انکا  مفہوم  تقریباّ  یہی  ہے۔  غلطی  اس  گاڑی  والے  کی  تھی  کہ  اسنے  پارکنگ  ٹکٹ  اپنے  پاس  سنبھال  کر  نہیں  رکھی،  مگر  چیخ  وہ  ایسے  رہا  تھا  جیسے  اسکی  کوئی  غلطی  نہیں۔  اور  اسکی  غلطی  ہو  بھی  کیسے  سکتی  تھی،  اخر  کو  وہ  ایک  امیر  آدمی  تھا،  اسکو  حق  تھا  کہ  وہ  ایک  غریب  آدمی  کو  بےعزت  کرے،  اس  پر  چلّائے،  اس  پر  اپنا  غصہ  نکالے۔ ۔ ۔

کیا  کسی  اور  شخص  کو  دو  ٹکے  کا  بول  کر  وہ  امیر  آدمی  خود  دو  ٹکے  کا  نہیں  رہ  گیا؟  کیا  وہ  شخص  جو  سارا  دن  محنت  کرتا  ہے،  گرمی  میں  کھڑے  ہو  کر  ہر  گاڑی  سے  ٹکٹ  اور  کرایہ  وصول  کرتا  ہے،  صرف  اس  لیئے  دو  ٹکے  کا  آدمی  ہے  کیونکہ  وہ  ایک  بڑی  گاڑی  میں  اے  سی  چلا  کر  نہیں  بیٹھ  سکتا؟  کیا  انسان  کی  عزت  صرف  اسکی  حیثیت  اور  پیسے  سے  ہوتی  ہے؟  کیا  انسان  کی  گاڑیاں  اور  اسکی  دوسروں  پہ  چلّانے  کی  صلاحیت  سے  ہی  اندازہ  لگایا  جاتا  ہے  کہ  وہ  دو  ٹکے  کا  ہے  یا  انمول؟  کیا  اس  محنت  کش  کی  عزت  نفس  کو  ٹھیس  نہیں  پہنچی  ہوگی؟  کیا  اسے  یہ  خیال  نہیں  آیا  ہوگا  کہ  اسکا  کیا  قصور  تھا؟  وہ  تو  فقط  اپنی  ڈیوٹی  دے  رہا  تھا۔  افسوس  کہ  وہ  امیر  آدمی  یہ  نہیں  سمجھ  سکا  کہ  اس  غریب  آدمی  کی  نظر  میں  یہ  امیر  آدمی  دو  ٹکے  کی  اوقات  بھی  نہیں  رکھتا  ہوگا۔

اللہ  ہم  سب  کو  ہدایت  دے  اور  ہمیں  ایک  دوسرے  کی  قدر  اور  عزت  کرنے  کی  توفیق  دے۔ آمین

Posted in Urdu | Tagged: , , , | 16 Comments »

مشرقی لڑکے۔ ۔ ۔

Posted by Haris Gulzar on August 11, 2009

آپ  نے  اکثر  مشرقی  لڑکیوں  کا  ذکر  تو  سنا  ہوگا۔  مثال  کے  طور  پر  مشرقی  لڑکیاں  شرماتی  ہیں،  بڑوں  کے  سامنے  نہیں  بولتیں،  گھر  کے  کام  کاج  میں  اپنی  والدہ  کا  ہاتھ  بٹاتی  ہیں  اور  بہت  کم  عمر  میں  ہی  کھانے  پکانے  کا  شوق  پال  لیتی  ہیں  وغیرہ  وغیرہ۔ ۔ ۔  اکثر  کچھ  سگھڑ  لڑکیاں  دیکھ  کر  آپکے  ذہن  میں  مشرقی  لڑکی  کی  ایک  تصویر  بن  جاتی  ہوگی،  کہ  یہ  لڑکی  یقیناّ  ایسے  کرتی  ہوگی،  یہ  لڑکی  ویسے  کرتی  ہوگی۔  اکثر  لڑکیوں  کی  ایک  حرکت  پر  اس  کے  ساتھ  باقی  حرکات،  یا  ادائیں  منصوب  کر  دی  جاتی  ہیں۔  مگر  یہ  سب  مشرقی  لڑکوں  کے  ساتھ  کیوں  نہیں  ہوتا؟

اب  مثال  کے  طور  پر  کسی  مشرقی  لڑکے  سے  پوچھیں  کہ  تمہاری  شادی  کر  دیں؟  اگر  تو  وہ  واقعی  مشرقی  لڑکا  ہے،  یعنی  صرف  کہنے  کا  نہیں  بلکہ  اپنی  حرکات  اور  باتوں  سے  بھی  مشرقی  ہے،  تو  وہ  بھی  شرمائے  گا،  ٹھیک  اسی  طرح  جس  طرح  کوئی  مشرقی  لڑکی  شرماتی  ہے۔  بلکہ  میرے  خیال  میں  تو  آج  کے  دور  میں  لڑکی  کا  شادی  کا  ذکر  سن  کر  شرمانہ  بھی  بس  ایک  رواج  کی  حد  تک  محدود  رہ  گیا  ہے،  بلکہ  میں  تو  یہ  بھی  کہوں  گا  آج  کل  لڑکیاں  لڑکوں  سے  زیادہ  بولڈ  اور  اوپن  مائنڈڈ  ہیں۔

خیر،  ذکر  ہو  رہا  تھا  مشرقی  لڑکوں  کا۔  کچھ  دن  پہلے  میں  نے  ایک  پوسٹ لکھی  تھی  جس  میں  میں  نے  ذکر  کیا  کہ  کیسے  ایک  آنٹی  نے  میرے  مشرقی  پن  کا  فائدہ  اٹھانے  کی  کوشش کی۔  اور  تو  اور،  آنٹیوں  کو  اس  بات  کا  ذرا  بھی  ملال  نہیں  ہوتا  اگر  وہ  کسی  کا  حق  چھین  لیں،  شاید  اسکی  وجہ  یہ  ہے  کہ  مشرقی  خواتیں  کو  پتہ  ہوتا  ہے  کہ  مشرقی  لڑکے  ان  کا  لحاظ  کر  جائیں  گے۔

چاہے  کسی  دروازے  سے  نکل  رہے  ہوں،   ایک  مشرقی  لڑکا  ہمیشہ  خود  رکے  گا  اور  اپنے  سے  پہلے  خواتیں  کو  نکلنے  کا  موقع  دےگا۔  مانا  کہ  خواتین  کے  کچھ  اپنے  حقوق  ہیں  مگر  مشرقی  لڑکوں  کے  مشرقی  پن  کی  بھی  تو  عزّت  کرنی  چاہئے۔  اور  ظلم  کی  انتہا  یہ  کہ  مشرقی  لڑکے  جتنے  بھی  شریف  ہوں  اور  اپنے  مشرقی  پن  کا  مظاہرہ  کریں،  ان  کو  دیکھا  ہمیشہ  شق  کی  نگاہ  سے  جاتا  ہے۔  پتہ  نہیں  کیسے  دوست  ہونگے  اس  کے،  پتہ  نہیں  رات  گئے  تک  آفس  کے  نام  پر  کہاں  جاتا  ہوگا۔

کیا  مشرقی  لڑکے  کبھی  کسی  گنتی  میں  شمار  نہیں  کئے  جائیں  گے؟  کیا  مشرقی  لڑکوں  کا  یہی  مقدر  ہے۔ ۔ ۔

Posted in Urdu | Tagged: , | 14 Comments »

Quran Class I — قرآن کلاس ۱

Posted by Haris Gulzar on August 8, 2009

میں  نے  دو  دن  پہلے  قرانی  عربی  کا  ایک  کورس  شروع  کیا۔  جس  طریقے  سے  وہ  کورس  پڑھایا  جا  رہا  ہے  اور  قران  کی  گرائمر  سمجھائی  جا  رہی  ہے،  وہ  کورس  پڑھنے  کا  بہت  مزہ  آتا  ہے۔  یہ  کورس  صرف  ۱۰  دن  کا  ہے  اور  اس  کورس  کے  بعد  انشأاللہ  اتنی  عربی  ضرور  آجائے  گی  کہ  قران  پڑھ  کہ  اسے  حرف  بہ  حرف  سمجھ  سکیں۔  میں  نے  سوچا  کیوں  نہ  ہر  کلاس  میں  پڑھائی  گئی  تمام  باتیں  یہاں  لکھ  دی  جائیں  تاکہ  مجھے  بھی  فائدہ  ہوتا  رہے،  اور  ہر  پڑھنے  والا  بھی  کچھ  سیکھ  سکے۔  میں  اپنی  پوری  کوشش  کروں  گا  کہ  اسی  روانی  اور  تسلسل  سے  یہاں  لکھتا  رہوں  جس  طرح  ہمیں  کلاس  میں  پڑھایا  جا  رہا  ہے  انشأاللہ۔  مجھے  ان  پروفیسر  صاحب  کا  نام  بھول  گیا  ہے  جنہوں  نے  یہ  کورس  تشکیل  دیا  ہے،  مگر  اگر  کوئی  انکا  نام  جاننے  میں  دلچسپی  رکھتا  ہے،  تو  میں  انشأاللہ  ۲  یا  ۳  دن  میں  دوبارہ  پتہ  کر  کے  بتا  سکتا  ہوں  انشأاللہ۔

آج  ہم  پہلی  کلاس  سے  آغاز  کرتے  ہیں۔ ۔ ۔  کورس  کی  گہرائی  میں  جانے  سے  پہلے  کچھ  باتیں  نوٹ  فرما  لیں۔ ۔ ۔

۔۔۔ اس  ۱۰  دن  کو  کورس  میں  ہم  سورت  حجرات  پڑھیں  گے۔  یہ  مدنی  سورت  ہے  اور  قران  کی  ۲۴ ویں  سورت  ہے۔

۔۔۔ پہلی  تین  کلاسیں  خاصی  مشکل  لگیں  گی،  مگر  ان  تین  کلاسوں  کے  بعد  اگلی  سات  کلاسیں  انشأاللہ  بہت  آسان  لگیں  گی  کیوںکہ  جو  گرائمر  کے  اصول  ہم  شروع  میں  پڑھیں  گے،  وہی  بعد  میں  دہرائے  جائیں  گے۔

۔۔۔ قران  میں  ایک  اندازے  کے  مطابق  کل  ۸۶۰۰۰ (  چھیاسی  ہزار)  الفاظ  ہیں،  جن  میں  سے  ۹۶ (چھیانوے)  الفاظ  ایسے  ہیں  جنکی  کل  تعداد  ۲۲۵۰۰ (بائیس  ہزار  پانچ  سو)  بن  جاتی  ہے۔  یہ  ۹۶ (چھیانوے)  الفاظ  کافی  آسان  ہیں  اور  ان  کو  یاد  کرنے  سے  تقریباّ  قران  کا  ایک  چوتھائی  تو  ہمیں  یاد  ہو  جائے  گا  انشأاللہ۔  اس  کورس  کے  دوران  ہم  یہ  ۹۶  (چھیانوے)  الفاظ  بھی  یاد  کریں  گے۔

۔۔۔  اس  کورس  کے  دوران  ہم  زیر،  زبر  اور  پیش  پہ  زیادہ  دھیان  نہیں  دیں  گے۔  اسکی  وجہ  یہ  ہے  کہ  ہم  عربی  بولنا  یا  لکھنا  نہیں  سیکھ  رہے،  بلکے  صرف  پڑھنا  اور  سمجھنا  سیکھ  رہے  ہیں۔  ہمنے  اس  کورس  کے  بعد  عربی  کے  جملے  نہیں  بنانے   اسلئے  اس  کورس  کی  مدت  تک  زیر،  زبر  اور  پیش  پہ  زیادہ  دھیان  نہیں  دیا  جائے  گا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

قران  کی  ایک  سورت  کے  علاوہ  باقی  تمام  سورتیں  بسم اللہ  سے  شروع  ہوتی  ہیں۔  آج  ہم  دیکھتے  ہیں  کہ  اس  آیت  کا  مطلب  کیا  ہے۔ ۔ ۔

بسم دو  لفظوں  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے۔  وہ  دو  لفظ  ہیں  ‘با’،  اور  ‘اسم’۔  یہ  دونو  لفظ  اردو  میں  عام  استعمال  کئیے  جاتے  ہیں۔  ‘اسم’  کے  معنی  ہیں  ‘نام’۔  جیسے  ہم  عموماّ  کہتے  ہیں  “آپکا  اسم  شریف  کیا  ہے؟”  یعنی  آپکا  نام  کیا  ہے۔  اسی  طرح  ‘با’  بھی  اردو  زبان  میں  استعمال  کیا  جاتا  ہے،  جیسے  ‘با  ادب’  یا  با  عزت۔  لفظ  با  کا  مطلب  ہے  ‘کے  ساتھ’۔  اکثر  عربی  زبان  میں  جب  دو  لفظوں  کو  جوڑا  جاتا  ہے  تو  انکے  درمیان  موجود  الف  کھا  لئے  جاتے  ہیں۔  یہاں  پر  بھی  یہی  کیا  گیا  ہے۔  با  اور  اسم  کو  جوڑ  کر  بسم  بنایا  گیا  ہے  جسکا  مطلب  ہے،  کے  ساتھ  نام۔

بسم  کے  بعد  اللہ  ہے  جس  سے  مطلب  بنا،  ‘کے  ساتھ  نام  اللہ’۔  یعنی  اللہ  کے  نام  کے  ساتھ۔  جس  طرح  قران  کی  ایک  سورت  کے  علاوہ  باقی  تمام  سورتیں  اللہ  کے  نام  سے  شروع  ہوتی  ہیں،  ہمیں  بھی  اپنا  ہر  کام  اللہ  کے  نام،  سے  شروع  کرنا  چاہئے۔  یہاں  ایک  بات  اور  نوٹ  فرما  لیں۔  کچھ  علماء  کہتے  ہیں  کہ  لفظ  اللہ  بھی  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے۔  وہ  دو  الفاظ  ہیں  ‘ال’  اور  ‘الہ’۔  ‘ال’  کو  استعمال  کیا  جاتا  ہے  کسی  عام  چیز  کو  خاص  بنانے  کے  لئیے،  مثال  کے  طور  پر،  کتاب  کا  مطلب  ہوگا  کوئی  بھی  کتاب،  مگر  الکتاب  کا  مطلب  ہوگا  کوئی  ایسی  خاص  کتاب  جسکا  یا  تو  تمام  لوگوں  کو  پتہ  ہے،  یا  اسکا  ذکر  ہوچکا  ہے  اور  اسی  ذکر  کے  طحت  بات  کی  جا  رہی  ہے۔  اسی  طرح  لفظ  ‘الہ’  کا  مطلب  ہے  خدا  (کوئی  بھی  خدا)  ۔  تو  جب الہ  یعنی  کسی  بھی  خدا  کا  ذکر  ہو،  اور  اس  سے  پہلے  ‘ال’  لگ  جائے،  تو  وہ  ایک  خاص  خدا  یعنی  اللہ  کا  ذکر  بن  جائے  گا۔  تو  کچھ  علماء  یہ  بھی  کہتے  ہیں  کہ  اللہ  بھی  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے۔ ۔ ۔

اب  ہم  گرائمر  کے  کچھ  مزید  اصول  پڑھتے  ہیں۔ اردو  میں  ہم  نے  پڑھا  تھا  کے  ایک  فعل  ہوتا  ہے،  ایک  ہاعل  ہوتا  ہے،  اور  ایک  مفعول  ہوتا  ہے۔  اسی  طرح  عربی  میں  بھی  ایک  لفظ  کی  یہ  تینو  حالتیں  ہو  سکتی  ہیں۔  ہم  دیکھتے  ہیں  کہ  کس  طرح  ایک  حالت  سے  لفظ  دوسری  حالت  اختیار  کرتا  ہے۔ ۔ ۔

فعل  ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ فاعل ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔   مفعول

فعل  سے  فاعل  بنانے  کے  لئیے  ہم  نے  صرف  اتنا  کیا  کہ  پہلے  حرف  یعنی  ‘ف’  کے  بعد  اپنی  طرف  سے  ایک  ‘الف’  ڈال  دیا۔  اور  باقی  سب  کچھ  ویسا  ہی  رہنے  دیا۔  ایک  بات  نوٹ  کرنے  والی  یہ  ہے  کہ  عربی  زبان  میں  بیشتر  لفظ  صرف  تیں  حرف  سے  بنتے  ہیں۔  تو  اگر  پہلے  حرف  کے  بعد  الف  لگا  دیا  جائے  اور  باقی  دونو  حرف  ایسے  ہی  رہنے  دیئے  جائیں،  تو  فعل  سے  فاعل  بن  جائے  گا۔  فعل  ہوتا  ہے  کوئی  کام  کرنا،  اور  فاعل  ہوتا  ہے  وہ  کام  کرنے  والا۔  مثال  کے  طور  پر  اگر  ہم  لفظ  ‘قتل’  کو  دیکھیں،  جو  کہ  ایک  فعل  ہے،  تو  اسکا  فاعل  بنانا  بہت  آسان  ہے۔  صرف  پہلے  حرف  یعنی  ق  کے  بعد  الف  لگا  دیں۔  اور  باقی  دونو  حرف  الف  کے  بعد  ویسے  ہی  لگا  دیں۔  جو  لفظ  بنے  گا  وہ  ہی  قاتل۔  اسی  طرح  اگر  فعل  سے  مفعول  بنانا  ہو  تو  ہم  سب  سے  پہلے  اپنی  طرف  سے  ایک  م  کا  اظافہ  کرتے  ہیں،  اسکے  بعد  دو  حرف  ایسے  ہی  رہنے  دیتے  ہیں،  اور  پھر  آخری  حرف  سے  پہلے  ایک  و  کا  اظافہ   کرتے  ہیں۔  اگر  قتل سے  مفعول  بنانا  ہو،  تو  سب  سے  پہلے  م،  پھر  دو  حرف  جس  طرح  تھے  اسی  طرح  یعنی  ق  اور  ت،  پھر  ایک  و  اور  پھر  آخری  حرف۔  اس  طرح  بنے  گا  مقتول۔

کچھ  اور  مثالیں  دیکھتے  ہیں

فعل  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  فاعل  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  مفعول

طلب  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  طالب  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  مطلوب

حمد  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  حامد  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  محمود

خلق  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  خالق  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  مخلوق

رحم  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  راحم  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  مرحوم

حکم  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  حاکم  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  محکوم

نصر  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  ناصر  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  منصور۔ ۔ ۔

امید  ہے  کہ  فعل  سے  فاعل  اور  مفعول  بنانے  کا  طریقہ  آپکو  آگیا  ہوگا۔  جیسے  جیسے  ہم  آگے  پڑھیں  گے،  یہ  چیزیں  اور  بھی  آسان  ہو  جائیں  گی  انشأاللہ۔  اب  ہم  کچھ  مزید  گرائمر  پڑھتے  ہیں۔

جس  طرح  ہم  نے  فاعل  اور  مفعول  پڑھا،  اسی  طرح  عربی  میں  فعل  کی  دو  مزید  حالتیں  ہوتی  ہیں۔  یہ  حالتیں  ہیں  فعلان  اور  فعیل۔  ہمیں  یہ  تو  پتہ  ہی  ہے  کہ  فاعل  وہ  ہوتا  ہے  جو  فعل  کرے،  اسی  طرح  فعلان   بھی  اسی  شخص  کو  کہتے  ہیں  جو  فعل  کرے،  فرق  صرف  اتنا  ہے  کہ  فاعل  جب  فعل  کرتا  ہے،  تو  اس  میں  جوش  اور  ولولہ  نہیں  ہوتا،  مگر  فعلان  جب  فعل  کرتا  ہے  تو  شدّت  سے،  جوش  اور  ولولے  سے  کرتا  ہے۔  یعنی  اگر  ہم  نے  ایسے  فاعل  کا  زکر  کرنا  ہو  جسنے  کوئی  فعل  بہت  جوش  اور  شدّت  سے  کیا  ہو،  تو  ہم  اس  فاعل  کو  فعلان  کہتے  ہیں۔  اسی  طرح  فعیل  بھی  فعل  کرنے  والا  ہوتا  ہے  مگر  وہ  ایسا  فاعل  ہوتا  ہے  جو  ازل  سے  ابد  تک  وہ  فعل  کرے۔  یعنی  جس  فعل  کو  کرنے  میں  وقت  لامحدود  ہو۔  وہ  فعل  ہمیشہ  کیا  جاتا  رہے۔

فعل  سے  فعلان  بنانا  بھی  بہت  اصان  ہے،  صرف  فعل  کے  آخر  میں  الف  اور  ن  لگانا  ہے۔  اسی  طرح  فعل  سے  فعیل  بنانے  کے  لئیے  آخری  حرف  سے  پہلے  چھوٹی  ی  لگانی  ہے۔  ہم  اسکی  بھی  کچھ  مثالیں  دیکھتے  ہیں۔ ۔ ۔

فعل  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  فعلان  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  فعیل

قتل  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  قتلان  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  قتیل  (قتلان  وہ  شخص  ہوگا  جو  بہت  جوش  اور  ولولے  سے   قتل  کرے۔  اور  قتیل  وہ  شخص  ہوگا  جو  ازل  سے  لیکر  ابد  تک،  ہمیشہ  ہمیشہ  قتل  کرتا  رہے۔  عربی  میں  قتل  کا  مطلب  لڑنا  ہوتا  ہے)۔

رحم  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  رحمان  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  رحیم  (رحمان  کا  مطلب  ہوگا  جو  بہت  شدت  اور  جوش  سے  رحم  کرے،  اور  رحیم  کا  مطلب  ہوگا  جو  ہمیشہ  ہمیشہ  رحم  کرتا  رہے)۔

نصر  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  نصران  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  نصیر  (  نصران  کا  مطلب  ہوگا  جو  بہت  جوش  سے  اور  ولولے  سے  مدد  کرے،  اور  نصیر  کا  مطلب  ہوگا  جو  ہمیشہ  مدد کرتا  رہے)۔

اب  ہم  واپس  اپنی  پہلی  آیت  یعنی  بسم اللہ  الرحمن  الرحیم  کو  دیکھتے  ہیں۔

بسم اللہ  کا  مطلب  کے  ساتھ  نام  اللہ،  یعنی  اللہ  کے  نام  کے  ساتھ۔  الرحمن  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے،  ال  اور  رحمان۔  رحمان  تو  ہم  نے  ابھی  دیکھا  کہ  بہت  شدت،  جوش  اور  ولولے  سے  رحم  کرنے  والے  کو  کہا  جاتا  ہے،  اور  ہم  نے  شروع  میں  پڑھا  تھا  کہ  اگر  کسی  لفظ  سے  پہلے  ال  لگا  دیا  جائے  تو  وہ  عام  چیز  کو  خاص  بنا  دیتا  ہے،  جسکا  یا  تو  ہم  سم  کو  پتہ  ہوگا،  یا  پیچھے  اسکا  زکر  ہو  چکا  ہوگا۔  رحمان  سے  پہلے  ال  لگانے  کا  مطلب  ہے  کہ  کوئی  ایسا  شدت  سے  رحم  کرنے  والا  جسکا  ذکر  پہلے  ہو  چکا  ہو،  اور  وہ  ہے  اللہ  جسکے  نام  کے  ساتھ  ہم  نے  یہ  آیت  شروع  کی  تھی۔  تو  بسم اللہ  الرحمن  کا  مطلب  ہوا  کے  ساتھ  نام  اللہ  بہت  شدت  اور  جوش  سے  رحم  کرنے  والا۔  یعنی  اللہ  کے  نام  کے  ساتھ  جو  بہت  رحم  کرنے  والا  ہے۔  اسی  طرح  ہم  رحیم  کا  مطلب  بھی  دیکھ  چکے  ہیں،  رحیم  کا  مطلب  ہے  ازل  سے  ابد  تک،  ہمیشہ  ہمیشہ  رحم  کرنے  والا۔   تو  پوری  آیت  کا  مطلب  بنے  گا  “اللہ  کے  نام  کے  ساتھ  جو  بہت  شدت  سے  رحم  کرتا  ہے  اور  ہمیشہ  ہمیشہ  رحم  کرتا  ہے”۔

امید  ہے  ااوپر  کی  گئی  باتیں  آپکو  کافی  حد  تک  سمجھ  آگئی  ہونگی۔  اگر  کچھ  تھوڑا  بہت  نہیں  بھی  سمجھ آیا  تو  انشأاللہ  جب  ہم  اگلی  کلاس  میں  مزید  آیتیں  دیکھیں  گے  تو  سمجھ  آجائے  گا۔  میں  نے  اوپر  ۹۶  چھیانوے  الفاظ  کا  ذکر  کیا  تھا  جو  ہم  انشأاللہ  اس  کورس  میں  یاد  کریں  گے۔  آج  کے  لئیے  آپکو  ۶  چھہ  الفاظ  بتا  رہا  ہوں۔  یہ  چھہ  الفاظ  بہت  آسان  ہیں  اور  قرآن  میں  بار  بار  آئے  ہیں۔  ان  میں  سے  چار  الفاظ  الف  اور  ن  سے  شروع  ہوتے  ہیں،  صرف  زبر  اور  زیر  کا  فرق  ہے۔

اَنَّ  ۔ ۔ ۔ ۔ ۔   بےشک

اِنَّ  ۔ ۔ ۔ ۔ ۔   بےشک

اَن  ۔ ۔ ۔ ۔ ۔  کہ

اِن  ۔ ۔ ۔ ۔ ۔  اگر

پہلے  دو  لفظ  میں  ن  کے  اوپر  شد  ہے  اور  زبر  ہے،  اور  پہلے  لفظ  میں  الف  کے  اوپر  زبر  ہے  اور  دوسرے  لفظ  میں  الف  کے  نیچے  زیر  ہے۔  پہلے  دونو  الفاظ  کا  مطلب  ہے  بےشک۔

اگلے  دونو  الفاظ  میں  ن  کے  اوپر  جزم  ہے۔  تیسرے  لفظ  میں  الف  کے  اوپر  زبر  ہے  اور  چوتھے  لفظ  میں  الف  کے  نیچے  زیر  ہے۔  تیسرے  لفظ  کا  مطلب  ہے  کہ  اور  چوتھے  لفظ  کا  مطلب  ہے  اگر۔

پانچواں  لفظ  جو  ہم  پڑھیں  گے  وہ  ہے    ‘یا’۔  یہ  لفظ  اردو  میں  بھی  استعمال  ہوتا  ہے،  جیسے  یا  حارث،  یا  عثمان۔  یہ  لفظ  ہم  کسی  کو  بلانے  کے  لئے  استعمال  کرتے  ہیں۔  اسکا  مطلب  ہے  اے۔  یعنی  اے  حارث،  اے  عثمان۔

اور  چھٹا  لفظ   جو  ہم  دیکھیں  گے  وہ  ہے  ایھا۔  اس  لفظ  میں  ی  کے  اوپر  پیش  ہے  مگر  مجھے  بہت  ڈھونڈنے  کے  باوجود  پیش  نہیں  مل  رہی۔   ی  کے  اوپر  شد  بھی  ہے۔  اس  لفظ  کا  مطلب  بھی  ہے  اے۔  یعنی  دونو  الفاظ  کا  ایک  ہی  مطلب  ہے۔  اکثر  قرآن  میں  یہ  دونو  لفظ  اکھٹے  استعمال  ہوتے  ہیں  جو  زور  ڈالنے  کے  لئے  کیا  جاتا  ہے۔

قران  اصل  میں  ایک  خطاب  کی  شکل  میں  ہے،  اسلئے  اکثر  جگہ  ہم  دیکھیں  گے  کہ  کسی  نہ  کسی  کو  مخاطب  کیا  گیا  ہوگا۔  یا  ایمان  والوں  کو،  یا  اہلِ  کفر  کو،  یا  تمام  انسانوں  کو،  یا  کسی  خاص  قوم  کو۔  سورت  حجرات  بھی  اسی  طرح  کے  ایک  خطاب  سے  شروع  ہوتی  ہے۔  انشأاللہ  اگلی  کلاس  میں  ہم  کچھ  مزید  گرائمر  اور  سورت  حجرات  کی  کچھ  آیتیں  دیکھیں  گے۔  اللہ  ہمیں  قران  سمجھنے  اور  اس  پہ  عمل  کرنے  کی  توفیق  عطا  فرمائے۔  آمین

Posted in Urdu | Tagged: , , | 16 Comments »

یہ وقت بھی گزر جائے گا ۔ ۔ ۔

Posted by Haris Gulzar on June 30, 2009

کسی بادشاہ نے اپنے ملک سے تمام پڑھے لکھے، عقلمند اور عالم قسم کے لوگوں‌کو جمع کیا اور ان سے پوچھا کہ کیا کوئی ایسا مشورہ، منتر یا مقولہ ہے کہ کو ہر قسم کے حالات میں کام کرے، ہر صورتحال اور ہر وقت میں اس ایک سے کام چل جائے۔ کوئی ایسا مشورہ جو کہ میں اگر اکیلے میں ہوں‌اور میرے ساتھ کوئی مشورہ کرنے والا نہ ہو تب بھی مجھے اس کا فائدہ ہو؟

تمام لوگ بادشاہ کی اس خواہش کو سن کر پریشان ہوگئے کہ کون سی ایسی بات ہے جو کہ ہروقت، ہر جگہ کام آئے؟ جو کہ ہر صورتحال، خوشی، غم، الم، آسائش، جنگ و جدل، ہار، جیت غرض‌کہ ہر جگہ فٹ ہو سکے؟ِ

کافی دیر آپس میں‌بحث و مباحثہ کے بعد ایک بوڑھے آدمی نے ایک تجویز پیش کی جسے تمام نے پسند کیا اور وہ بادشاہ کے دربار میں حاضر ہوئے۔

انہوں نے بادشاہ کی خدمت میں ایک کاغذ پیش کیا اور کہا کہ اس میں‌ وہ منتر موجود ہے جس کی خواہش آپ نے کی تھی۔ شرط صرف یہ ہے کہ آپ اس کو صرف اس وقت کھول کر دیکھیں گے جب آپ اکیلے ہوں اور آپ کو کسی کی مدد یا مشورہ درکار ہو۔ بادشاہ نے اس تجویز کومان کر کاغذ کو نہایت حفاظت سے اپنے پاس رکھ لیا۔

کچھ عرصے کے بعد پڑوسی دشمن ملک نے اچانک بادشاہ کے ملک پر حملہ کردیا۔ حملہ اتنا اچانک اور شدید تھا کہ بادشاہ اور اس کی فوج کو بری طرح شکست ہوئی۔ فوج نے اپنے بادشاہ کے ساتھ ملکر اپنے ملک کے دفاع کی بہت کوشش کی لیکن بالآخر انہیں محاذ سے پسپائی اختیار کرنی پڑی۔ دشمن ملک کے سپاہی بادشاہ کے پکڑنے اس کے پیچھے لگ گئے اور بادشاہ اپنی جان بچانے کے لیئے گھوڑے پر بھاگ نکلا۔ بھاگتے بھاگتے وہ پہاڑ کے اس مقام پر پہنچ گیا کہ جہاں دوسری طرف گہری کھائی تھی اور ایک طرف دشمن کے سپاہی اس کا پیچھا کرتے قریب سے قریب تر ہوتے جارہے تھے۔

اس صورتحال میں اسے اچانک اس منتر کا خیال آیا جو کہ اسے بوڑھے شخص نے دیا تھا۔ اس نے فورا اپنی جیب سے وہ کاغذ نکالا اور پڑھنا شروع کیا۔ اس کاغذ پر لکھا تھا کہ “یہ وقت بھی گذر جائے گا”

بادشاہ نے حیران ہوکر تین چار دفعہ اس تحریر کو پڑھا — اسے خیال آیا کہ یہ بات تو بالکل صحیح ہے۔ ابھی کل ہی وہ اپنی حکومت میں سکون کی زندگی گزار رہا تھا اور تمام عیش و آرام اسے میسر تھا اور آج وہ دشمن سے بچنے کیلیئے بھاگتا پھر رہا ہے؟ جب آرام اور عیش کے دن گذر گئے تو یقینا یہ وقت بھی گذر جائے گا۔ یہ سوچ کر اسے سکون آگیا اور وہ پہاڑ کے آس پاس کے قدرتی مناظر کو دیکھنے لگا۔ کچھ ہی دیر میں اسے گھوڑوں‌کے سموں کی آوازیں معدوم ہوتی سنائی دیں، شاید دشمن کے سپاہی کسی اور طرف نکل گئے تھے۔

بادشاہ ایک بہادر آدمی تھا۔ جنگ کے بعد اس نے اپنے لوگوں کا کھوج لگایا جو آس پاس کے علاقوں میں چھپے ہوئے تھے۔ اپنی بچی کھچی قوت کو مجتمع کرنے کے بعد اس نے دشمن پر حملہ کیا اور انہیں شکست دے دی۔ جب وہ جنگ جیت کے اپنی مملکت میں واپس جارہا تھا تو اس کے ملک کے تمام لوگ استقبال کے لیئے جمع تھے۔ اپنے بہادر بادشاہ کے استقبال کے لیئے لوگ شہر کی فصیل، گھروں کی چھتوں غرض کہ ہر جگہ پھول لیئے کھڑے تھے اور تمام راستے اس پر پھول نچھاور کرتے رہے۔ہر گلی کونے میں لوگ خوشی سے رقص کررہے تھے اور بادشاہ کے شان میں قصیدے گا رہے تھے۔ بادشاہ بھی اپنے فوجی قافلے کے ہمراہ بڑی شان سے کھڑا لوگوں کے نعروں کا جواب دے رہا تھا۔ اس نے سوچا کہ دیکھو لوگ ایک بہادر کا استقبال کیسے کرتے ہیں، میری عزت میں اب اور اضافہ ہوگیا ہے، اور کیوں‌نہ ہوتا، دشمنوں کو ماربھگانا کوئی اتنا آسان نہیں تھا اور خصوصا ایک مکمل شکست کے بعد۔

یہ سوچتے سوچتے اچانک اسے اس کاغذ کے مضمون کا خیال آگیا “یہ وقت بھی گذر جائے گا”۔ اس خیال کے ساتھ ہی اس کے چہرے کے تاثرات بدل گئے۔ اپنے آپ پر غرور ایک ہی لمحہ میں ختم ہوگیا اور اس نے سوچا کہ اگر یہ وقت بھی گذر جائے گا تو یہ وقت میرا نہیں۔ یہ لمحے یہ حالات میرے نہیں، یہ ہار اور یہ جیت بھی میری نہیں۔ہم صرف دیکھنے والے ہیں، ہر چیز کو گذر جانا ہے اور ہم صرف ایک گواہ ہیں۔

ہم صرف محسوس کرتے ہیں۔ زندگی آتی ہے اور چلی جاتی ہے۔ خوشی اور غم کا بھی یہی حال ہے۔ اپنی زندگی کی حقیقت کو جانچیں۔ اپنی زندگی میں خوشی، مسرتوں، جیت، ہار اور غم کے لمحات کو یاد کریں۔ کیا وہ وقت مستقل تھا؟ وقت چاہے کیسا بھی ہو، آتا ہے اور چلا جاتا ہے۔

زندگی گذر جاتی ہے۔ ماضی کے دوست بھی بچھڑ جاتے ہیں۔ جو آج دوست ہیں وہ کل نہیں رہیں‌گے۔ ماضی کے دشمن بھی نہیں ہیں اور آج کے بھی ختم ہوجائیں گے۔ اس دنیا میں کچھ بھی کوئی بھی مستقل اور لازوال نہیں۔

ہر چیز تبدیل ہو جاتی ہے لیکن تبدیلی کا قانون نہیں بدلتا۔ اس بات کو اپنی زندگی کے تناظر میں سوچیں۔آپ نے کئی تبدیلیوں کو زندگی میں‌دیکھا ہو گا، کئی چیزوں کو تبدیل ہوتے ہوئے مشاہدہ کیا ہو گا۔ آپ کی زندگی میں‌کئی بار غم اور شکست کے حالات آئے ہوں‌گے اور اسی طرح آپ نے کئی پرمسرت لمحات بھی گذارے ہوں‌گے۔ دونوں قسم کے وقت کو گذر جانا ہے، کچھ بھی مستقل نہیں ۔ ہم اصل میں‌کیا ہیں پھر؟ اپنے اصل چہرے کو پہچانیئے ۔ ہمارا چہرہ اصل نہیں ہے۔ اس نے بھی وقت کے ساتھ ساتھ تبدیل ہو جانا ہے۔ تاہم آپ کے اندر کچھ ایسا ہے کہ جو کبھی تبدیل نہیں ہوتا اور ہمیشہ ایسا ہی رہتا ہے۔

کیا چیز ہے جو کہ غَیر مُتغَیَّر ہے؟ شاید آپ کے اندر کا صحیح انسان۔ آپ صرف تبدیلی کے گواہ ہیں، محسوس کریں اور اسے سمجھیں ۔

اپنی زندگی کی منفی تبدیلیوں کو محسوس کریں اور اپنی ذات سے اس پر قابو پانے کی کوشش کریں –

رہنے والی ذات صرف اللہ کی ہے اور رہنے والے ہمارے اعمال —— سوچیں —— اور عمل کریں ۔ ۔ ۔ ۔ ۔

Posted in Urdu | 4 Comments »

انمول ۔ ۔ ۔

Posted by Haris Gulzar on April 27, 2009

ایک  تحفے  کی  قیمت  کیا  ہوتی  ہے؟  کیا  وہ  تحفہ  قیمتی  ہونا  چاہیئے،  کیا  وہ  تحفہ  ہماری  پسند  کا  ہونا  چاہیئے،  کیا  وہ  اس  انسان  کی  پسند  کا  ہونا  چاہیئے  جسے  آپ  تحفہ  دینا  چاہتے  ہیں؟ کیا  یہ  سب  سوال  عجیب  ہیں؟ نہیں،  ہر  گز  نہیں۔ ان  میں  سے  کوئی  سوال  عجیب  نہیں  ہے،  بلکہ  ان  تمام سوالوں  کا میری نظر  میں  صرف  ایک ہی جواب  ہے۔ اور  وہ  یہ  ہے  کہ  اس  دنیا  میں  کوئی  شخص  کسی  تحفے  کی  قیمت  کا  اندازہ  نہیں  لگا  سکتا۔ تحفہ  تو انمول  ہوتا  ہے،  تحفہ  بزاتِ  خود  کسی  کی  پسند  کا  نہیں  ہوتا،  بلکہ  یہ  تو  تحفہ  دینے  والے  کی  نییت  ہوتی  ہے  جو  اس  تحفہ  کو  پسندیدہ  اور  انمول  بناتی  ہے۔ ۔ ۔

اگر  یہ  سچ  ہے  کہ  تحفہ  دینے  والے  کی  نییت  ہی  ایک  تحفہ  کو  نایاب  بناتی  ہے،  تو  پھر  اس  شخص  کا  کیا  حال  ہوا  ہوگا  جب  اسکا  تحفہ  کسی  نے  کھول  کر  دیکھا  بھی  نہیں۔  اس  شخص  پہ  کیا  گزری  ہوگی  جب  اس  نے  پوچھا  ہوگا  کہ  تحفہ  کیسا  لگا  اور  اسے  آگے  سے  جواب  ملا  ہوگا  کہ  میں  نے  تو  تحفہ  کھولا  ہی  نہیں۔  اس  شخص  کا  دل  کتنا  ٹوٹا  ہوگا  جس  نے  اکیلے،  ایک  انجان  شہر  میں،  اتنی  ہمّت  کرنے  کی  ٹھانی  کہ  وہ  کہیں  سے  بھی  ایک  ایسا  تحفہ  لائے  گا  جو  اسکے  خیال  میں  اسکے  دوست  کو  بہت  پسند  آئے  گا،  فقط  یہ  سننے  کے  لیئے  کہ  ابھی  تو  میں  نے  وہ  تحفہ  دیکھا  بھی  نہیں۔  کیا  اس  شخص  کا  مان  نہیں  ٹوٹا  ہوگا  جب  اس  کا  بھیجا  ہوا  تحفہ  کسی  نی  پڑے  رہنے  دیا  ہو گا۔ اس  شخص  کے انتظار  کی  کیا  قیمت  لگایئے  جسنے  تحفہ  بھیجنے  کے  بعد  اگلے  دن  شام  گئے  تک  صرف  شکریہ  کہ  دو  الفاظ  سننا  چاہے،  مگر  اسے  سننے  کو  ملا  کہ  میں  نے  تو  وہ  تحفہ  کھولا  ہی  نہیں۔ ۔ ۔

اس  جرم  کا  ارتکاب  کرنے  والا  شخص  ہوں  میں۔  ۲۵  اپریل 09  بروز  ہفتہ  میری  ۲۵ویں  سالگرہ  تھی۔  رات  کے  ۱۲  بجتے  ہی  مجھے  دوستوں  کے  میسج  آنا  شروع  ہو گئے۔  ان تمام میسج میں  اس  دوست  کا  میسج  بھی  شامل  تھا  جس  نے  مجھے  تحفہ  بھیجا  تھا۔  مجھے  معلوم  تھا  کے  اس  دوست  نے  مجھے  لاہور  سے  تحفہ  بھیجا  ہے،  حالانکہ  میں  نے  اس  دوست  کو  کئی  بار  تحفہ  بھیجنے  سے  منع  کیا،  مگر  شاید  میرا  اپنا  بھی  دل  تھا  کہ  میرا  دوست  مجھے  تحفہ  بھیجے۔ پہلے  میں  نے  اپنے  دوست  کو  اپنا  پتہ  نہیں  بتایا  تھا،  مگر  پھر  اچانک  بتا  دیا۔  میں  نے  اپنے  دوست  سے  پوچھا  بھی  کہ  کیا  تحفہ  بھیجا  ہے،  مگر  اسنے  انتظار  کیا  کہ  میں  خود  تحفہ  کھولوں  اور  دیکھوں  کہ  تحفہ  کیا  ہے۔  میں  رات  کو  اپنے  دوست  سے  بات  کرتا  رہا،  اپنے  دوست  کو  یہ  بتاتا  رہا  کہ  مجھے  کتنی  خوبصورت  دعایئں  بھیجی  جا  رہی  ہیں،  اپنے  دوست  کو  بتاتا  رہا  کہ  میرے  دوسرے  دوستوں  نے  مجھے  نظمیں  بھیجی  ہیں۔  اس  وقت  وہ  دوست  یقینن  یہی  سوچ  رہا  ہوگا  کہ  جب  میرا  بھیجا  ہوا  تحفہ  اِسے  ملے  گا  تو  کیا  یہ  اس  وقت  بھی  اتنا  ہی  خوش  ہوگا؟  اس  وقت  میرا  وہ  دوست  یقینن  اس  انتظار  میں  تھا  کہ  کب  اسکا  بھیجا  ہوا  تحفہ  کھولا  جائے  گا ۔ ۔ ۔

اگلا  دن  ہوا،  دوپہر  ہوئی  اور  پھر  شام  ہوگئی۔ میں  اپنے  دوست  کا  بھیجا  ہوا  تحفہ  دیکھے  بغیر  امّی  سے  ملنے  خالہ  کہ  گھر  چلا  گیا۔  امّی  ان  دنوں  لاہور  سے  آئی  ہوئی  ہیں۔  یونیورسٹی  سے  واپس  آنے  کے  بعد  میں  نے  صرف  کھانا  کھایا  اور  اپنے  دوست  کے  بھیجے  ہوئے  تحفے  کا  سوچے  بغیر  ہی  ہاسٹل  سے  نکل  پڑا۔  پتہ  نہیں  کیوں  مگر  مجھے  اپنے  دوست  کا  وہ  تحفہ  اس  وقت  ذہن  میں  ہی  نہیں  آیا۔  شام  کو  جب  اس  دوست  نے  مجھ  سے  پوچھا  کہ  مجھے  اس  دوست  کا  بھیجا  ہوا  تحفہ  کیسا  لگا،  تو  میرے  پاس  صرف  یہی  جواب  تھا  کہ  وہ  تحفہ  تو  میں  نے  کھولا  ہی  نہیں۔  میں  یہ  کہتے  ہوئے  شرمندہ  تھا  مگر  اس  وقت  بھی  میں  نے  یہ  نہیں  سوچا  تھا  کہ  میری  اس  حرکت  نے  میرے  دوست  کو  کتنا  دکھ  دیا  ہوگا۔ ۔ ۔

جب  میں  خالہ  کے  یہاں  سے  واپس  ہاسٹل  آیا  تو  کمرے  میں  گھسنے  سے  پہلے  ہی  میں  ہاسٹل  انچارج  کے  دفتر  میں  گیا  اور  اپنا  تحفہ  وصول  کیا۔  میں  چاہتا  تھا  کہ  اپنے  دوست  کو  کال  کروں،  اور  اس  سے  بات  کرتے  ہوئے  اس  تحفے  کو  کھولوں۔  اس  وقت  جب  میں  اپنے  دوست  کو  کال  ملا  رہا  تھا،  مجھے  احساس  ہوا  کہ  میں  نے کیا  حرکت  کی  ہے۔  اس  وقت  مجھے  رہ  رہ  کر  یہ  خیال  آ  رہا  تھا  کہ  میرے  دوست  نے  مجھ  سے  صرف  اپنے  تحفہ  کا  پوچھنے  کے  لیئے  کتنا  انتظار  کیا  ہوگا۔  اس  وقت  مجھے  احساس  ہو  رہا  تھا  کہ  میں  نے  اپنے  دوست  کے  انتظار  کو  صرف  ایک  دن  نہیں  بلکہ  شاید  کئی  صدیاں  بڑھا  دیا  ہوگا۔  اس  وقت  میرا  شدید  دل  کر  رہا  تھا  کہ  میری  جلد  سے  جلد  اس  دوست  سے  بات  ہو  جائے۔  شاید  مجھے  میرے  کئے  کی  سزا  مل  رہی  تھی۔ میری  میرے  دوست  سے  بات نہیں  ہو  سک  رہی  تھی۔ ۔ ۔

غلطی  کے  اس  احساس  میں  جو  مجھے  اس  وقت  ستائے  جا  رہا  تھا،  میں  نے  اپنے  دوست  کے  لئے  ایک  نوٹ  لکھا اور  اس  سے  معافی  مانگی۔  اس  وقت  نا  جانے  کیوں  وہ  معافی  بھی  بہت  بے  معنی  سی  لگ  رہی  تھی۔  اس  وقت  مجھے  احساس  ہو  رہا  تھا  کہ  ہم  کسی  کے  جزبات  سے  کھیل  کر  معافی  مانگ  لیتے  ہیں،  اور  نا صرف  اس  دوست  کے  جزبات  کا  مزاق  اڑاتے  ہیں  بلکہ  اس  دوست  کو  مجبور  کر  دیتے  ہیں  کہ  وہ  کھل  کر  شکوہ  بھی  نہ  کر  سکے۔ اس  وقت  میں  لگاتار  یہی  دعا  مانگ  رہا  تھا  کہ  میرا  دوست  خیریت  سے  ہو،  جلدی  سو  کہ  اٹھے،  میرا  نوٹ  پڑھے  اور  مجھ  سے  بات  کرے۔  شاید  مجھ  میں  اتنی  ہمّت  نہیں  تھی  کہ  میں  اپنے  اس  عزیز  دوست  سے  زبانی  معافی  مانگ  سکتا،  اس  لئے  میں  چاہتا  تھا  کہ  میرا  دوست  وہ  نوٹ  پڑھ  لے۔ اس  وقت  میں  سوچ  رہا  تھا  کہ  ہم  سے  کیسے  انجانے  میں  ایسی  غلطی  ہو  جاتی  ہے  جو  غلطی  ہم  کبھی  جان  بوجھ  کہ  کرنے  کا  سوچ  بھی  نہیں  سکتے۔  شاید  ہم  انسان  ہیں  اس  لئیے۔  اس  وقت  اپنے  آپ  کو  تسلّی  دینے  کا  مجھے  صرف  یہی  زریعہ  نظر  آیا  کہ  میں  اپنے  آپ  کو  یہ  کہ  کر  بہلا  لوں  کہ  غلطی  بھی  تو  انسان  سے  ہی  ہوتی  ہے۔ ۔ ۔

اور  پھر  میری  بات  اس  دوست  سے  ہو  گئی۔  اس  دوست  کے  فون  اٹھاتے  ہی،  اور  اس  دوست  کی  آواز  سنتے  ہی  اس  بات  کی  تسلّی  ہو  گئی  کہ  وہ  دوست  خیرییت  سے  ہے  الحمدللہ۔۔  حالانکہ  اس  دوست  کی  آواز  پوری  طرح  ٹھیک  نہیں  تھی  اور  اس  آواز  میں  دکھ  کی  سی  کیفیت  نمایاں  تھی،  مگر  میں  نے  اس  وقت  اپنے  دوست  سے  یہ  بات  کرنا  مناسب  نہیں  سمجھا۔ اس  دوست  سے  بات  کے  دوران  ہی  میں  نے  وہ  تحفہ  کھولا۔  میرے  دوست  نے  میرے  لئیے  ایک  ایسی  کتاب  بھیجی  تھی  جسکا  جانے  انجانے  میں  اس  دوست  سے  اتنی  دفعہ  ذکر  ہوا  تھا  کہ  اس  کتاب  کہ  نام  پہ  ہی  میں  نے  اپنے  بلاگ  کا  نام  رکھا۔  وہ  کتاب  تھی  امر  بیل۔  اس  کتاب  کو  دیکھ  کر  میرے  پاس  الفاظ  نہیں  تھے  کہ  میں  اپنی  غفلت  پر  شرمندہ  ہووں  یا  اپنے  اس  عزیز  دوست  کو  اس  خوبصورت  تحفے  کا  شکریہ  کروں۔  میرے  بلاگ  کا  نام  صرف  اس  وجہ  سے  امر  بیل  نہیں  ہے  کہ  مجھے  یہ  نام  اچھا  لگا  تھا،  بلکہ  اسکی  ایک  بڑی  وجہ  یہ  ہے  کہ  میرے  بلاگ  کا  یہ  نام  میرے  اسی  دوست  نے  تجویز  کیا  تھا،  اور  وہ  بھی  اسی  ناول  پہ  مبنی  تھا۔  میرے  اسی  دوست  نے  ایک  دفعہ  امر  بیل  سے  ایک  اقتباس  مجھے  سنایا  تھا،  اس  دن  کے  بعد  سے  مجھے  کہیں  بھی  امر  بیل  کا  کوئی  حصّہ  کہیں  بھی  لکھا  ہوا  ملتا،  میں  وہ  اپنے  دوست  کو  سناتا۔  میرا  اس  ناول  کو  پڑھنے  کا  اشتیاق  بڑھتا  جا  رہا  تھا  اور  ٹھیک  اسی  وقت  میرے  دوست  نے  میرے  لیئے  یہ  ناول  بھیج  دیا۔ ۔ ۔

فون  پہ  تو  میرے  پاس  الفاظ  نہیں  تھے  جن  سے  میں  اپنے  اس  دوست  کا  شکریہ  ادا  کر  سکتا،  نا  ہی  کوئی  ایسے  الفاظ  موجود  ہونگے  جن  سے  میں  اپنے  دوست  کو  یہ  بتا  سکوں  کہ  میرے  اس  دوست  نے  مجھے  کتنی  خوشی  دی  ہے۔  میں  شاید  الفاظ  میں  یہ  بات  نہ  کہ  سکوں  کہ  میرے  دوست  کا  یہ  یاد  رکھنا  کہ  مجھے  یہ  ناول  پڑھنے  کا  شوق  ہے،  اور  ایک  انجان  شہر  میں  اس  ناول  کو  ڈھونڈ  کر  مجھے  بھیجنا  میرے  لیئے  کیا  معنی  رکھتا  ہے۔  میں  شاید  اپنے  دوست  کو  یہ  نہ  بتا  سکوں  کہ  مجھے  اس  وقت  وہ  تحفہ  کھول  کر  کتنی  خوشی  ہو  رہی  تھی ۔ ۔ ۔

دوست،  کوئی  لفظ  شاید  اس  بات  کو  بیان  نہ  کر  سکے  کہ  اس  تحفے  کی  میرے  لیئے  کیا  قیمت  ہے۔  میرے  لیئے  یہ  تحفہ  انمول  ہے،  جس  خوش  دلی  اور  جس  نیّت  سے  آپ  نے  یہ  تحفہ  بھیجا،  میرے  لیئے  وہ  انمول  ہے،  اور  جس  دوستی  کے  لیئے  آپ  نے  مجھے  یہ  تحفہ  بھیجا،  میرے  لیئے  وہ  انمول  ہے ۔ ۔ ۔

Posted in Urdu | Tagged: , | 6 Comments »

کچھ لکھنا چاہتا ہوں ۔ ۔ ۔

Posted by Haris Gulzar on March 17, 2009

The following is copied from here

کچھ  لکھنا چاہتا ہوں ۔ ۔ ۔

سوچتا  ہوں ، کیا  لکھوں ؟

 

پھولوں  کی وہ  مہکتی  خوشبو

بارش  کا وہ  بھیگا  پانی

اور  ہوا میں تھی جو روانی

کیا  اس موسم کا خمار لکھوں ؟

 

کچھ  لکھنا چاہتا ہوں ۔ ۔ ۔

سوچتا  ہوں ، کیا  لکھوں ؟

 

تھی  چہرے  پہ اُن کے معصومیت

آنکھوں  میں تھی  تھوڑی  شرارت

اور  باتوں میں  وہ  نزاکت

کیا  ان کا رنگیں مزاج  لکھوں ؟

 

کچھ  لکھنا چاہتا ہوں ۔ ۔ ۔

سوچتا  ہوں ، کیا  لکھوں ؟

 

انکا  آ کر  مسکرانا ۔ ۔ ۔

جو  روٹھ  جاوْں  تو منانا

جاتے  جاتے  پھر رلانا

کیا  انکا  یہ  انداز  لکھوں ؟

 

کچھ  لکھنا چاہتا ہوں ۔ ۔ ۔

سوچتا  ہوں ، کیا  لکھوں ؟

 

یادوں  میں ان کی اشک بہانا

ہر  شام اک  دیا جلانا

سو ئی  امید کو روز جگانا

کیا  ان کا یہ انتظار لکھوں ؟

 

کچھ  لکھنا چاہتا ہوں ۔ ۔ ۔

سوچتا  ہوں ، کیا لکھوں ؟

Posted in Adopted, Urdu | 2 Comments »

چاچو بیٹی ہوں ۔ ۔ ۔

Posted by Haris Gulzar on October 13, 2008

حال ہی میں پڑھائی کے سلسلے میں مجھے کراچی منتقل ہونا پڑا۔ گزشتہ ۱۲ سالوں سے میری رہائش لاہور میں رہی ہے، اور اپنی فیملی سے دور رہنے کا یہ میرا پہلا تجربہ تھا۔ میرا داخلہ پاکستان کے مشہور ادارے آئی بی اے میں ہوا تھا اور جولائی کے اخیرلے دنوں میں میں لاہور کو دو سال کے لئیے خیرباد کہ کر کراچی آگیا جہاں مجھے آئی بی اے کے ہوسٹل میں رہنا تھا۔

میری بھتیجی، منیبہ، جسکی عمراکتوبر ۲۰۰۸ میں ماشااللہ ۵ سال ہو گئی، میرے بھائی کی بڑی بیٹی ہے۔ منیبہ کی پیدائش سے لیکر گزشتہ جولائی تک اسکے ساتھ گزارا ہوا ایک ایک لمحہ ان تین مہینوں میں یوں میرے کانوں میں گونجا ہے، جیسے میں کراچی میں نہیں بلکے منیبہ کے ساتھ ہی لاہور میں ہوں، اور ہر پل اس سے کھیل رہا ہوں۔ آج بھی جب منیبہ سے فون پہ بات ہوتی ہے تو وہ مجھے ایسے مخاطب کرتی ہے جیسے میں اسکے سامنے موجود ہوں۔ ابھی چند دن پہلے میری اس سے فون پر بات ہوئی اور وہ مجھ سے بولی، "چاچو، وہ جو ہم نے چنے کا پودا لگایا تھا باغ میں وہ مر گیا، مگر جو پودا ہم نے گھر کے باہر لگایا تھا وہ ابھی تک ٹھیک ہے، اور میں نے مالی بابا کو گوڈی کرنے کا بھی بول دیا تھا"۔ اسنے مزید کہا کہ "آپ جب واپس آؤ گے تو اس پہ چنے بھی لگے ہوئے ہونگے، پھر ہم وہ خود بھی کھائیں گے اور سب کو کھلائیں گے"۔ میں صرف اتنا کہ سکا کہ جو پودا بچا ہے اسکا خیال رکھنا اور اسے پانی دیتی رہنا۔

منیبہ چھوٹی سی تھی جب میں نے اسے یہ سکھا دیا کہ اگر کوئی پوچھے "کس کی بیٹی ہو؟"، تو اس سوال کا صرف ایک ہی جواب ہے۔ "چاچو بیٹی ہوں"۔ بلکہ مجھے یہ مخصوص جواب سننے کے لئیے کوئی سوال نہیں پوچھنا پڑتا تھا۔ میں صرف اتنا کہتا، "سب کو زور سے بتا دو۔ ۔ ۔" اور منیبہ با آوازِ بلند یہ اعلان کرتی، "چاچو بیٹی ہوں ں ں ں ں ۔ ۔ ۔" اور میرے گلے لگ جاتی۔ کچھ ہی عرصے میں جب منیبہ کو اس جملے کا مطلب پتہ لگا تو وہ یہی بات جزبات کے ساتھ بولتی۔ اپنے ہاتھوں کی مٹھی بند کر کے، ہاتھ ہوا میں بلند کر کے نعرا لگاتی، "چاچو بیٹی ہوں ں ں ں ں"۔

منیبہ کہانیاں سننے کے معاملے میں دوسرے بچوں سے کچھ زیادہ مختلف نہیں ہے۔ روزانہ نئی کہانی کی فرمائش، اور فرمائش بھی ایسی کہ کہانی میں پنکھا، ایک ۳ سال کا لڑکا، اور بارش کا ذکر آنا چاہئیے، یا پھر ہرے رنگ کی الماری اور سکول کا ذکر ہو۔ اور اکثر یہ فرمائش کچھ دنوں بعد دھرائی جاتی۔ اب ظاہر ہے ایسی فرمائشوں کے لئیے کہانی اسی وقت تیار کی جاتی ہے اور سنا دی جاتی ہے، اور کچھ دنوں بعد یاد بھی نہیں رہتا کہ پچھلی کہانی میں کیا سنایا تھا، مگر اکثر منیبہ ضد کرتی کہ میں حرف بہ حرف وہی کہانی سنوں گی۔ بلکہ اکثر پہلے منیبہ مجھے وہی کہانی سناتی جو اس نے کبھی مجھ سے سنی تھی، تاکہ میں یاد کرلوں اور پھر اسے سناؤں۔

اتوار کی شامیں خصوصاً منیبہ کے نام ہوتی تھیں۔ شام کا ایک سے ڈیڑھ گھنٹہ منیبہ کے ساتھ پارک میں گزرتا تھا۔ "چاچو میں اس جھولے پہ جا رہی ہوں" بولتے ہوئے وہ ایک جھولے سے دوسرے جھولے کی طرف بھاگ جاتی۔ کبھی اگر خود جھولا نہ لے سکتی ہو تو زور سے آواز لگاتی "چاچو ۔ ۔ ۔" اور ہاتھ سے بلانے کا اشارہ کرتی۔ جب میں پاس پہنچتا تو کہتی "چاچو تیز، اور تیز، بہت تیز ۔ ۔ ۔"۔ اسکے چہرے پہ ڈر کہ آثار نمایاں ہوتے مگر باوجود اسکے وہ جھولا مزید تیز کرنے کا بولتی رہتی۔ اگر میں کبھی بولتا کہ بس اب واپس چلیں تو وہ بولتی "چاچو بس ون مور (چاچو بس ایک اور) ۔ ۔ ۔" یا پھر بولتی "اچھا بس ون لاسٹ (اچھا بس ایک آخری) ۔ ۔ ۔"

منیبہ صبح سکول جانے سے پہلے مجھے تقریبا ہر روز اٹھاتی اور بولتی، "چاچو لمبا چکر لینے چلیں؟"۔ لمبے چکر کا مطلب ہوتا تھا کم از کم آدھا کلومیٹر کی والک، جو سکول روانگی سے قبل منیبہ کو بہت اچھی لگتی تھی۔ اس لمبے چکر سے ملتا جلتا ایک چھوٹا چکر بھی ہوتا تھا، جس پہ میں منیبہ کو راضی کرتا تھا اگر میرا لمبے چکر کا دل نہ کر رہا ہو۔ چھوٹا چکر صرف اپنی گلی کا ایک چکر ہوتا تھا، مگر منیبہ کو لمبے چکر میں کہی خصوصیت نظر آتی تھی۔ لمبے چکر کے دوران وہ اچانک بھاگنا شروع ہو جاتی، اور پھر رک کر بولتی " آج میں کل سے تیزبھاگی تھی نا؟" اکثر وہ میرا ہاتھ پکڑ کر مجھے اپنے ساتھ لے کر بھاگتی اور پھر بولتی "دیکھا مجھ میں پاور آگئی ہے نا؟"

گھروں میں بچوں کی الگ ہی رونق ہوتی ہے۔ اگر صرف چند دنوں کے لئیے بھی بچے نظر نہ آئیں تو سارے گھر میں ایک اداسی سی چھا جاتی ہے، ایسا لگتا ہے جیسے کرنے کے لئیے کچھ نہیں رہا۔ اور جب میں یہ سوچتا ہوں کہ میں دو سالوں کے لئیے لاہور سے کراچی آ گیا ہوں اور اب صرف عید یا بقرہ عید پہ ہی تمام فیملی سے ملاقات ہوگی، خصوصاً منیبہ سے، تو دل بیٹھ سا جاتا ہے۔ مگر منیبہ سے آج بھی اگر میں فوں پہ پوچھوں کہ آپ چھوٹی تھی تو کیا بولتی تھی، تو وہ زور سے بولتی ہے ۔ ۔ ۔ "چاچو بیٹی ہوں ں ں ں۔ ۔ ۔"

 

Posted in Urdu | Tagged: , , | 16 Comments »