Amar Bail

A plant of eternity

Quran Class 3 Part 1 — قرآن کلاس ۳ حصّہ اوّل

Posted by Haris Gulzar on March 14, 2010

اسّلام علیکم ۔

امید  کرتا  ہوں  کہ  آپ  سب  خیریت  سے  ہونگے  انشا اللہ۔  قران  کلاس  کا  سلسلہ  میں  نے  بہت  پہلے  شروع  کیا  تھا  مگر  اسکا  تسلسل  برقرار  نہ  رکھ  سکا،  جسکے  لیئے  معذرت  چاہتا  ہوں۔  میری  پوری  کوشش  ہوگی  کہ  کم از کم  ہر  اتوار  کو  ضرور  ایک  کلاس  یہاں  لکھوں۔  ہم  نے  پہلے  ۲  دو  کلاس  ختم  کر  لی  ہیں،  اور  جن  لوگوں  نے  وہ  دو  کلاس  کسی  وجہ  سے  نہیں  پڑھیں،  وہ  یہاں  سے  پچھلی  کلاس  دیکھ  سکتے  ہیں۔

کلاس  اول

کلاس  دوم  حصہ  اول

کلاس  دوئم  حصہ  دوئم

——————————————————-

ہم  نے  پچھلی  کلاس  میں  سورت  حجرات  کی  پہلی  ایت  پڑھی  تھی۔  آج  ہم  اسی  سورت  کی  دوسری  ایت  پڑھتے  ہیں۔  دوسری  ایت  کا  اغاز  اس  طرح  ہوتا  ہے۔

یآَیُّھَا الَّذِینَ  آمَنُوُا

ہم  نے  پچھلی  کلاس  مین  دیکھا  تھا  کہ  یہاں  تک  جتنی  آیت  ہے  اسکا  مطلب  ہے  ‘اے  اہلِ  ایمان’،  اب  ہم  اس  سے  آگے  دیکھتے  ہیں۔  اگلا  لفظ  ہے  لَا،  جسکا  مطلب  بھی  ہمیں  پتہ  ہے۔  اس  لفظ  کا  مطلب  ہے  ‘نہیں’۔  اس  سے  اگلا  لفظ  ہے تَرفَعُوُا۔  اس  لفظ  کو  ہم  توڑ  کر  ت ۔۔  رفع ۔۔  وا  لکھ  سکتے  ہیں۔  پچھلی  کلاس  میں  ہمنے  لفظ  تُقَدِّمُوُا  پڑھا  تھا  جسکے  شروع  میں  بھی  ت  آیا  تھا،  اور  ہمنے  دیکھا  تھا  کہ  ت  کا  مطلب  ہے   تو   یا   تم۔  اسی  طرح  لفظ  تَرفَعُوُا  میں  بھی  ت  کا  مطلب  ہے  تُم۔  اس  سے  اگلا  لفظ  ہے  رَفَع۔  اردو  میں  لفظ  رفع  کا  مطلب  ہے  بلند،  یا  اونچا۔  جیسے  ہم  کہتے  ہیں  رفیع الشان  یعنی  اونچی  شان۔  عربی  میں  بھی  رفع  کا  مطلب  اونچا  ہی  ہے۔  اور  اس  لفظ  کے آخر  میں  وا  کا  مطلب  ہم  جانتے  ہی  ہیں،  جو  کسی  لفظ  کو  جمع  کرنے  کے  لیئے  استعمال  ہوتا  ہے۔  تو  اس  مکمل  لفظ  کا  مطلب  کیا  بنے  گا؟

تَرفَعُوُا ۔۔  تم  سب  بلند  کرو  یا  کرنا۔

اگلا  لفظ  ہے  اَصوَاتَکُم۔  یہ  لفظ  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے،  وہ  دو  الفاظ  ہیں  اصوات  اور  کم۔  اردو  زبان  میں  ہم  صوت  یا  اصوات  کے  الفاظ  استعمال  کرتے  ہیں۔  اس  لفظ  کا  مطلب  ہے  آواز  یا  آوازیں۔  عربی  میں  بھی  اس  لفظ  کا  یہی  مطلب  ہے۔  اور  ہم  نے  پچھلی  کلاس  میں  پڑھا  تھا  کہ  ‘ کم ‘  کا  کیا  مظلب  ہوتا  ہے۔  لٖفظ  کم  کا  مطلب  ہے  تم  سب۔  یعنی  اَصوَاتَکُم  کا  مطلب  ہوگیا  تم  سب  کی  آوازیں۔

ابھی  تک  پڑھی  گئی  آیت  کا  مطلب  دیکھتے  ہیں۔ ۔ ۔

یَا یُّھَا الَّذِینَ  آمَنُوُا  لَا  تَرفَعُوُا  اَصوَاتَکُم۔

اے  اہلِ  ایمان  اپنی  آوازیں  بلند  یا  اونچی  نہ  کرو۔ ۔ ۔

اسی  آیت  میں  اگلا  لفظ  ہے  فَوقَ۔  یہ  لفظ  بھی  اردو  زبان  میں  مستعمل  ہے  اور  اسکا  مطلب  ہے  فوقیت  دینا  یا  ترجیح  دینا،  یا  ایک  سے  دوسرے  کو  بلند  کرنا۔  اگلے  دو  الفاظ  ہیں  صَوتِ  النَّبِیِّ۔  ہم  نے  ابھی  دیکھا  کہ  صوت  کا  مطلب  ہے  آواز۔  اگلا  لفظ  النَّبِیِّ  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے  جو  ہیں  ال  اور  نبی۔  ہمیں  یہ  بھی  پتہ  ہے  کہ  اگر  کسی  لفظ  سے  پہلے  ال  لگا  دیا  جائے  تو  وہ  اس  لفظ  کو  خاص  بنا  دیتا  ہے۔  یہاں  نبی  سے  پہلے  ال  لگانے  کا  مطلب  ہے  خاص  نبی،  یعنی  حضرت  محمد  صلاللہ  علیہ  وسلم۔  یہاں  گرائمر  کا  ایک  اور  اصول  اہمیت  کا  ہامل  ہے  اور  اسے  نوٹ  فرما  لیں۔

صوت  ایک  اسم  ہے  (اردو  والا  اسم،  جسے  ہم  انگریزی  میں  ناؤن  کہتے  ہیں)۔  اسی  طرح  نبی  بھی  اسم  ہے۔  عربی  میں  اگر  دو  اسم  ساتھ  ساتھ  آئیں  اور  پہلے  اسم  کے  ساتھ  ال  نہ  لگا  ہوا  ہو  مگر  دوسرے  اسم  کے  ساتھ  ال  لگا  ہوا  ہو  تو  ترجمہ  کرتے  ہوئے  کا،  کی  یا  کے  کا  اضافہ  کرتے  ہیں۔  یہاں  صوت النبی  کا  مطلب  ہوگا  نبی  کی  آواز۔  اور  فَوقَ  صَوتَ النَّبِیِ  کا  مطلب  ہوگا  نبی  کی  آواز  پہ  فوقیت  دینا،  یا  نبی  کی  آواز  سے  زیادہ  بلند  کرنا۔

اسی  آیت  میں  اگلے  الفاظ  ہیں  وَلَا  تَجھَرُوا۔  یہ  تو  ہمیں  پتہ  ہی  ہے  کہ  و  کا  مطلب  ہے  اور،  اور  لا  کا  مطلب  ہے  نہیں۔  اب  ہم  تَجھَرُوا  کا  مطلب  دیکھتے  ہیں۔  لفظ  تَجھَرُوا  کو  توڑ  کر  ہم  ت ۔۔ جھر ۔۔ وا  لکھ  سکتے  ہیں۔  ہمیں  یہ  بھی  پتہ  ہے  کہ  اگر  لفظ  کے  شروع  میں  ت  آجائے  تو  وہ  لفظ  کو  مضارع  بنا  دیتا  ہے،  اور  اسکا  مطلب  تو  یا  تم  ہوتا  ہے۔   جھر  عربی  کا  لفظ  ہے  جسکا  مطلب  ہے  اواز  کا  اونچا  یا  بلند  کرنا۔  جن  نمازوں  میں  امام  صاحب  بلند  آواز  سے  قرآٔت  کرتے  ہیں،  انہیں  جھری  نمازیں  کہتے  ہیں۔  اسی  لفظ  کے  آخر  میں  وا  آرہا  ہے  جسکا  مطلب  ہے  کہ  لفظ  جمع  پڑھا  جائے  گا۔    یہنی  تَجھَرُوا  کا  مطلب  ہوگا  تم  سب  آواز  بلند  کرتے  ہو،  اور  پچھلے  الفاظ  کو  جوڑ  کر  پڑھا  جائے  تو  بنے  گا  وَلَا  تَجھَرُوا،  یہنی  اور  تم  سب  آوازوں  کو  بلند  نہ  کرو۔

اگلا  لفظ  ہے  لہُ۔  یہ  لفظ  بھی  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے۔  وہ  دو  الفاظ  ہیں  ل  اور  ہ۔  ہمنے  پچھلی  کلاس  میں  دیکھا  تھا  کہ  ہ  کا  مطلب  ہے  وہ  ایک  مذکر۔  یہاں  ل  کے  استعمال  کو  سمجھنا  پڑے  گا۔

ل  دو  طرح  استعمال  کیا  جا  سکتا  ہے۔  ل  کے  استعمال  کو  لام  تعلیل  یا  لام  لازم  کہتے  ہیں۔  لام  تعلیل  کا  مطلب  ہوتا  ہے   ‘ کے  لئے ‘۔  لام  لازم  کا  مطلب  ہوتا  ہے  ‘یقیناّ’۔  لام  کا  استعمال  صرف  سیاق و سباق  دیکھ  کر ہی  پتہ  چلتا  ہے  کہ  یہاں  کونسے  معنی  پائے  جاتے  ہیں،  اور  ٹھیک  معنی  لکھنے  سے  ہی  صحیح  جملہ  تشکیل  پا  سکے  گا۔  یہاں  پر  لام  کا  مطلب  ہے  کے  لیئے۔  لہُ  کا  مطلب  ہوگا  اس  ایک  مزکر  کے  لیئے  یعنی  اسکے  لئیے۔

اگلا  لفظ  ہے  بِالقَولِ۔  یہ  لفظ  بھی  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے۔  وہ  دو  الفاظ  ہیں  با  اور  القول۔  ہمیں  پہلی  کلاس  سے  پتہ  ہے  کہ  با  کا  مطلب  ہے  کے ساتھ۔   القول  بھی  دو  الفاظ  سے  بنا  ہے،  وہ  دو  الفاظ  ہیں  ال  اور  قول۔  ال  تو  صرف  خاص  کرنے  کے  لیئے  استعمال  ہوا  ہے،  اور  قول  کا  مطلاب  ہے  بات  چیت  یا  گفتگو۔  تو  بِالقَول  کا  مطلب  ہوگا  اپنی  گفتگو  میں۔ ۔ ۔

ابھی  تک  پڑھی  گئی  آیت  کا  رواں  ترجمہ  کرتے  ہیں۔ ۔ ۔

یَآیُّھَا الَّذِینَ  آمَنُوا  لَا  تَرفَعُوا  اَصوَاتَکُم  فَوقَ  صَوتِ  النَّبِیِّ  وَ  لَا  تَجھَرُوا  لَہُ  بِالقَولِ

اے  اہلِ  ایمان  اپنی  آوازوں  کو  نبی  صلی اللہ  علیہِ  وسلم  کی  آواز  سے  بلند  نہ  کرو  اور  اپنی  گفتگو  میں  انکے  حضور    اونچی  آواز  میں  نہ  بولو ۔ ۔ ۔

انشا اللہ  باقی  آیت  ہم  اس  کلاس  کے  حصہ  دوئم  میں  مکمل  کریں  گے۔  امید  ہے  آپکو  اوپر  لکھی  گئی  کافی  باتیں  سمجھ  آگئی  ہونگیں  انشا اللہ۔  اللہ  ہمیں  قرآن  پڑھنے  اور  سمجھنے  کی  توفیق  عطا  فرمائے۔  آمین۔

4 Responses to “Quran Class 3 Part 1 — قرآن کلاس ۳ حصّہ اوّل”

  1. By Mistake I overwrote the 1st part of the 2nd class😦. I will re-write it as soon as possible and will upload it. Really sorry for the inconvenience…

    غلطی سے میں نے کلاس ۲ حصہ اول کے اوپر ہی کلاس ۳ لکھ دی ہے۔ میں بہت جلد کلاس ۲ حصہ اول دوبارہ لکھوں گا انشا اللہ۔ تکلیف کے لیئے معذرت چاہتا ہوں۔ ۔ ۔

  2. AOA

    My new blog: http://www.hikmah-hj.blogspot.com
    http://www.iumertoor.wordpress.com

    Muhamamd Umer!

  3. JazakAllah Bhai, Alhamdolillah i ahd printed out the previous lessons and jazakAllah for posting this one. I ahd been reading it in bits and InshaAllah will print it out soon.

    InshaAllah I mwill be trying to leave more comments soon ,.

  4. @Umer: Will check out your blogs soon Insha-Allah…

    @Alhamdolillah: Jazakallah sister…

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

 
%d bloggers like this: