Amar Bail

A plant of eternity

Quran Class 2 Part 2 — قرآن کلاس ۲ حصّہ دوئم

Posted by Haris Gulzar on September 7, 2009

حصّہ  اوّل  میں  جہاں  سے  سلسلہ  توڑا  تھا  وہیں  سے  دوبارہ  شروع  کرتے  ہیں۔  ہم  نے  دیکھا  تھا  کہ  “ بَینَ  یَدَیِ “  کا  مطلب  ہے  سامنے۔  اب  اس  سے  اگلا  لفظ  دیکھتے  ہیں۔

اگلا  لفظ  ہے  اللہ  جسکا  مطلب  ہم  پہلے  ہی  دیکھ  چکے  ہیں۔  اس  لفظ  کے  بعد  وَ  ہے  جو  اردو  زبان  میں  مستعمل  ہے  جسکا  مطلب  ہے  اور۔  مثال  کے  طور  پر  صبح و شام  یعنی  صبح  اور  شام،  شب و روز  یعنی  رات  اور  دن  وغیرہ۔  اس  سے  اگلا  لفظ  ہے  “ رَسُولِہ “۔   یہ  لفظ  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے،  وہ  دو  الفاظ  ہیں  رسول  اور  ہِ ۔  رسول  تو  اردو  کا  لفظ  ہے  جسکا  مطلب  ہے  بھیجا  گیا  مگر  یہاں  ‘ ہ ‘  کے  استعمال  کو  سمجھنا  ضروری  ہے۔  اسکے  لیئے  ہم  کچھ  ضمیر  دیکھتے  ہیں۔  ضمیر  وہ  لفظ  ہوتا  ہے  جو  اسم  نہ  ہو  مگر  اسم  کا  مطلب  دے۔  مثال  کے  طور  پر  اگر  میں  دو  جملے  کہوں،  یہ  قلم  حارث  کا  ہے۔  یہ  کتاب  حارث  کی  ہے۔  تو  میں  یہ  بھی  کہ  سکتا  ہوں  کہ  یہ  قلم  حارث  کا  ہے  اور  یہ  کتاب  اس  کی  ہے۔  دوسرے  جملے  میں  میں  نے  حارث  کی  جگہ  اس  کا  استعمال  کیا۔  یہ  لفظ  “ اس “  ضمیر  ہے۔  اسی  طرح  اگر  میں  کہوں  حارث  اچھا  لڑکا  ہے،  وہ  پڑھائی  کرتا  ہے،  تو  لفظ  وہ  ضمیر  ہے۔

اسی  طرح  عربی  میں  ضمائر  (ضمیر  کی  جمع)  کے  لیئے  کچھ  الفاظ  ہیں۔ ۔ ۔

۱۔  ی ۔ ۔ ۔  جسکا  مطلب  ہے  میں۔  مثال  کے  طور  پر  کتابی  کا  مطلب  ہوگا  میری  کتاب۔  قلمی  کا  مطلب  ہوگا  میرا  قلم۔

۲۔  نا ۔ ۔ ۔  جسکا  مطلب  ہے  ہم۔  مثال  کے  طور  پر  کِتَابُنَا  کا  مطلب  ہوگا  ہماری  کتاب۔  قَلمُنَا  کا  مطلب  ہوگا  ہمارا  قلم۔

۳۔  کَٔ ۔ ۔ ۔  جسکا  مطلب  ہے  تو  ایک  مذکر۔  مثال  کے  طور  پر  کَتَابُکَ  کا  مطلب  ہوگا  تو  ایک  مذکر  کی  کتاب

۴۔  کِٔ ۔ ۔ ۔  جسکا  مطلب  ہے  تو  ایک  مؤنث۔  مثال  کے  طور  پر  کَتَابُکِ  کا  مطلاب  ہوگا  تو  ایک  مؤنث  کی  کتاب  یعنی  کسی  مؤنث  کو  مخاطب  کرکے  اگر  کہنا  ہو  تیری  کتاب۔

۵۔  کم  جسکا  مطلب  ہے  تم  سب۔  مثال  کے  طور  پر  قَلمُکُم  کا  مطلب  ہوگا  تم  سب  کا  قلم،  اسی  طرح  کِتَابُکُم  کا  مطلب  ہوگا  تم  سب  کی  کتاب۔

۶۔  ہ۔ ۔ ۔  جسکا  مطلب  ہے  وہ  ایک  مذکر۔  یہاں  کَٔ  سے  فرق  ضرور  نوٹ  کریں۔  کَٔ  کا  مطلب  تھا  تو  ایک  مذکر،  جبکہ  ہ  کا  مطلب  ہے  وہ  ایک  مذکر۔  مثال  کے  طور  پر  قلمہُ  کا  مطلب  ہوگا  وہ  ایک  مذکر  کا  قلم  یعنی  اسکا  قلم

۷۔  ھا۔ ۔ ۔جسکا  مطلب  ہے  وہ  ایک  مؤنث۔  مثال  کے  طور  پر  کتابھا  کا  مطلب  ہوگا  اس  ایک  مؤنث  کی  کتاب

۸۔  ھم ۔ ۔ ۔  جسکا  مطلب  ہے  وہ  سب۔  مثال  کے  طور  پر  نفسھم  کا  مطلب  ہوگا  وہ  سب  کا  نفس  یعنی  ان  سب  کا  نفس۔  اسی  طرح  قلمھم  کا  مطلب  ہوگا  وہ  سم  کا  قلم  یعنی  ان  سب  کا  قلم۔

اوپر  دیئے  گئے  ضمائر  میں  پہلے  دو  ضمائر  خود  اپنے  لیئے  استعمال  کیئے  جاتے  ہیں،  یعنی  میں  یا  ہم۔  اگلے  تین  ضمائر  کسی  دوسرے  شخص  سے  بات  کرتے  ہوئے  استعمال  کیئے  جاتے  ہیں  جو  وہاں  موجود  ہو،  یعنی  جب  ہم  کسی  دوسرے  شخص  سے  کلام  کر  سکتے  ہوں،  اور  تو  اور  تم  کے  الفاظ  استعمال  کر  سکتے  ہوں۔  اور  آخری  تیں  ضمائر  اس  وقت  استعمال  کیئے  جاتے  ہیں  جب  ایسے  شخص  کا  ذکر  ہو  رہا  ہو  جو  وہاں  موجود  نا  ہو۔  یعنی  جب  ہم  وہ  یا  اس  کے  الفاظ  استعمال  کریں۔

ان  ضمائر  میں  کَ  اور  کِ  پہ  ہم  نے  اعراب  کا  دھیان  رکھا،  اس  لیئے  کہ  ان  اعراب  سے  مطلب  بدل  سکتا  ہے،  مگر  باقی  ضمائر  میں  ہم  نے  اعراب  کو  نظر  انداز  کیا،  مثال  کے  طور  پر  ھُم  اور  ھِم  کا  فلحال  ہمارے  لیئے  ایک  ہی  مطلب  ہے۔  اسی  طرح  ہُ  اور  ہِ  کا  بھی  ایک  ہی  مطلب  ہے۔

اب  ہم  دیکھتے  ہیں  کہ  جو  لفظ  ہم  پڑھ  رہے  تھے  یسکا  کیا  مطلب  ہے۔  وہ  لفظ  تھا  “ رسولہِ “۔  یہ  لفظ  رسول  اور  ہِ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے  جسکا  مطلب  ہوگا  اس  ایک  کا  رسول۔  اور  یہ  کس  کے  رسول  کی  بات  ہو  رہی  ہے،  ظاہر  ہے،  اللہ  سبحانَ وَ تعالی  کے  رسول  کی۔

اللہ  و  رسولہِ  کا  مطلاب  ہوگا  اللہ  اور  اس  ایک  کا  رسول،  یعنی  اللہ  اور  اسکا  رسول۔  تو  بَینَ  یَدَیِ  اللہِ  وَ  رَسُولَہ  کا  مطلب  ہوگا  اللہ  اور  انکے  رسول  کے  سامنے۔

اب  تک  پڑھی  گئی  آیت  کا  مطلب  کچھ  اس  طرح  بنے  گا

یَٓاَیُّھَا الَّذِینَ  آمَنُوا  لَا  تُقَدِّمُوا  بَینَ  یَدَیِ  اللہِ  وَ  رَسُولِہِ

اے  اہلِ  ایمان،  اللہ  اور  اسکے  رسول  کے  حضور  پیش  قدمی  نہ  کرو۔

اگلے  الفاظ  ہیں  وَ اتَّقُوا اللہ۔  وَ  کا  مطلب  ہمیں  پتہ  ہے۔  اسکا  مطلب  ہے  اور۔  اب  ہم  دیکھتے  ہیں  کہ  اِتَّقُوا  کا  کیا  مطلب  ہے۔

یہ  لفظ  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے۔  وہ  دو  الفاظ  ہیں  اِتَّق  اور  وا۔  ہمیں  یہ  تو  پتہ  ہی  ہے  کہ  وا  جمع  کے  لیئے  استعمال  ہوا  ہے۔  اب  ہم  دیکھتے  ہیں  کہ  اِتَّقَ  کا  کیا  مطلب  ہے۔

کسی  بھی  کلمے  سے  پہلے  الف  صرف  تین  حالتوں  میں  آتا  ہے۔

۱۔  اگر  خود  اپنا  ہی  ذکر  کرنا  ہو۔  یعنی  الف  کا  مطلب  ہوگا  ‘میں’۔  مثال  کے  طور  پر  اَکتُبُ  کا  مطلب  ہوگا  میں  لکھتا  ہوں۔  ایسے  کلمے  کو  متکلم  کہتے  ہیں۔

۲۔  الف  کا  استعمال  سوالیہ  بھی  ہو  سکتا  ہے۔  مثال  کے  طور  پر  اَ اَکتُبُ  کا  مطلب  ہوگا  کیا  میں  لکھتا  ہوں؟  ایسے  کلمے  کو  استفھام  کہتے  ہیں

۳۔  الف  کا  استعمال  حکم  دینے  کے  لیئے  بھی  ہوسکتا  ہے۔  مثال  کے  طور  پر   اُکتُبُ  کا  مطلب  ہوگا  لکھو۔  ایسے  کلمے  کو  امر  کہا  جاتا  ہے۔

ہمیں  ان  تینوں  استعمال  میں  سے  صرف  جملہ  دیکھ  کر  ہی  اندازہ  لگانہ  پڑے  گا  کہ  الف  کا  کونسا  استعمال  کیا  گیا  ہے۔

ایک  بات  اور  نوٹ  کرنے  کی  ہے۔  اگر  الف  کا  استعمال  امر  کے  طور  پہ  کیا  گیا  ہے،  یعنی  کوئی  حکم  دیا  گیا  ہے،  تو  کلمے  میں  سے  حروفِ  علت،  جنکو  ہم  انگریزی  میں  واول  کہتے  ہیں،  حذف  یعنی  غائب  ہو  جاتے  ہیں۔  اصل  لفظ  جو  یہاں  استعمال  کیا  گیا  ہے  وہ  ہے  تقوی،  مگر  امر  کی  وجہ  سے  پہلے  الف  لگا  دیا  گیا  جس  سے  لفظ  بنا  اتقوی۔  عربی  زبان  میں  الف،  واو  اور  چھوٹی  ی  حروف  علت  یعنی  واول  ہیں۔  اس  لیئے  امر  کی  وجہ  سے  لگنے  والے  الف  نے  آخری  واو  اور  چھوٹی  ی  کو  حذف  کر  لیا،  اور  باقی  لفظ  رہ  گیا  اتق۔

اردو  میں  تقوی  کا  مطلب  ہوتا  ہے  ڈر۔  یہاں  بھی  لفظ  کا  یہی  مطلب  ہے  مگر  حکم  دیا  جا  رہا  ہے  کہ  ڈرو۔  ہم  نے  یہ  بھی  دیکھا  تھا  کہ  لفظ  کہ  آخر  میں  جمع  کی  علامت،  یعنی  وا  موجود  تھی،  جس  سے  لفظ  کا  مطلب  بنے  گا  تم  سب  ڈرو۔

وَاَتَّقُوا اللہِ  کا  مطلب  ہوگا  اور  ڈرو  تم  سب  اللہ  سے۔

اگلا  لفظ  ہے  ‘اِنَّ’۔  ہم  نے  پہلی  کلاس  میں  جو  چھ  الفاظ  یاد  کیئے  تھے  ان  میں  سے  ایک  لفظ  یہ  بھی  تھا۔  اس  لفظ  کا  مطلب  ہے  بےشک۔  اسی  طرح  اِنَّ اللہ  کا  مطلب  ہوگا  بےشک  اللہ۔

اگلے  دو  الفاظ  ہیں  سَمِیع  عَلِیم۔   سمیع  میں  آخری  ع  کے  اوپر  دو  پیش  ہیں،  اسی  طرح  علیم  میں  آخری  م  کے  اوپر  بھی  دو  پیش  ہیں۔  یہ  دونو  الفاظ  فعیل  کے  وزن  پہ  ہیں۔  ہم  نے  پہلی  کلاس  میں  فعیل  پڑھا  تھا،  جسکا  مطلب  ہوتا  ہے  ازل  سے  ابد  تک  فعل  کرنے  والا۔  اسی  طرح  سمیع  کا  فعل  ہے  سمع  جسکا  مطلب  ہے  سننا،  تو  سمیع  کا  مطلب  ہوگا  ازل  سے  ابد  تک  سننے  والا۔  اور  علیم  کا  فعل  ہے  علم  یعنی  جاننے  والا،  تو  علیم  کا  مطلب  ہوگا  ازل  سے  ابد  تک  جاننے  والا۔

اب  ہم  پوری  آیت  کا  رواں  ترجمہ  کرتے  ہیں۔

یٓاَ یُّھَا الَّذِینَ  آمَنُوا  لَا  تُقَدِّمُوا  بَینَ  یَدَیِ  اللہِ  وَ  رَسُولِہِ  وَاتَّقُوا  اللہَ  اِنَّ  اللہَ  سَمِیعُ  عَلِیمُ۔

اے  لوگو  جو  ایمان  لائے  ہو،  اللہ  اور  اسکے  رسول  کے  سامنے  پیش  قدمی  نہ  کرو  اور  اللہ  سے  ڈرو  بےشک  اللہ ازل  سے  ابد  تک  کے  سننے  والے  اور  ازل  سے  ابد  تک  کے  جاننے  والے  ہیں۔

امید  ہے  آپکو  اوپر  بتائے  گئے  گرائمر  کے  کچھ  اصول  اور  عربی  کے  کچھ  الفاظ  سمجھ  آئے  ہونگے  انشا ء اللہ۔    اللہ  ہمیں  قران  پڑھنے  اور  سمجھنے  کی  توفیق  عطا  فرمائے۔  آمین۔

11 Responses to “Quran Class 2 Part 2 — قرآن کلاس ۲ حصّہ دوئم”

  1. If anyone reading this knows how to put khari zabar or khari zeir, and the 2 peish characters, plz do let me know.

    اگر کسی کو کھڑی زبر، کھڑی زیر اور دو پیش ڈالنی آتی ہیں، تو میری مدد کریں۔

  2. […] This cup of tea was served by: Amar Bail […]

  3. д§mд said

    Kharri Zabar = Shift + I
    Kharri Zer = Shift + Y
    Double pesh = shift + L (i think its pesh :))

    just a quick help🙂 will be cak

  4. д§mд said

    back :s

  5. @Asma: Shift + I is Khari Zabar but the other two aren’t the characters I wanted🙂. But Insha-Allah I’d go through all the Shift + all keys and I hope I find these characters.

    Thank you so very much for your help. Jazakallah.

  6. д§mд said

    Ahh, but I do get kharri zer through that key at least :S

    What are you using to write in urdu?

  7. @Asma: I have phonetic urdu font installed on my PC.

  8. Assalamoalaikum,

    JazakAllah another superb post, mashaAllah there wasn’t ANy mistake in this post either. I ahve read it but I think iwould have to memorise some of the things here. because I feel I only remember 60 percent of the lesson, Allah taufeeq de hum sab ko, ameen.

    JAzakAllah again bhai.

  9. @Alhamdolillah: Jazakallah sister. You’d only have to practice the rules and Insha-Allah you will start remembering them.

  10. Mshallah very informative.

  11. […] کلاس  دوئم  حصہ  دوئم […]

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

 
%d bloggers like this: