Amar Bail

A plant of eternity

Quran Class 2 Part 1 — قرآن کلاس ۲ حصّہ اوّل

Posted by Haris Gulzar on September 6, 2009

اسلامُ  علیکم۔

امید  کرتا  ہوں  آپ  سب  خیریت  سے  ہونگے۔  کلاس  ۳  حصہ  اول  لکھتے  ہوئے  میں  نے  غلطی  سے  اس  کلاس  کو  مٹا  دیا،  جسکی  وجہ  سے  میں  یہ  کلاس  دوبارہ  لکھ  رہا  ہوں۔  امید  کرتا  ہوں  اور  دعا  کرتا  ہوں  کہ  یہ  کلاس  لکھتے  ہوئے  کوئی  غلطی  نہ  ہو۔

 کلاس  ۱  میں  ہمنے  دیکھا  تھا  کہ  بِسمِ اللہ  الرحمان  الرحیم  کا  کیا  کطلب  ہے۔  اس  کلاس  میں  ہم  سورت  حجرات  کی  پہلی  آیت  دیکھیں  گے۔  سورت  حجرات  کا  اغاز  ان  الفاظ  سے  ہوتا  ہے۔ ۔ ۔

یآیُّھَا  الَّذِینَ

پچھلی  کلاس  میں  ہم  نے  چھہ  الفاظ  یاد  کیئے  تھے۔  ان  الفاظ  میں  پانچواں  لفظ  تھا  یا  اور  چھٹا  لفظ  تھا  اَیُھا،  اور  ہم  نے  دیکھا  تھا  کہ  ان  دونو  الفاظ  کے  مطلاب  ہیں  اے،  یعنی  یہ  دونو  الفاظ  کسی  کو  مخاطب  کرنے  کے  لیئے  استعمال  ہوتے  ہیں۔  قرآن  میں  ہم  اکثر  دیکھیں  گے  کہ  ایک  جیسے  مطلب  والے  الفاظ  اکھٹے  بھی  استعمال  ہوتے  ہیں،  اور  اگر  ایسا  کیا  جائے  تو  وہ  زور  دینے  کے  لیئے  ہوتا  ہے۔  یہاں  بھی  لفظ  یا  اور  لفظ  ایھا  اکھٹے  استعمال  ہوئے  ہیں۔

اگلا  لفظ  ہے  اَلَّذِینَ۔  اس  لفظ  کا  مطلب  ہے  جو  سب  لوگ۔  یہ  لفظ  مخاطب  کرنے  کے  لیئے  استعمال  کیا  جاتا  ہے۔  عربی  میں  کسی  کو  مخاطب  کرنے  کے  کئی  طریقے  ہیں،  آئیے  ان  طریقوں  کو  دیکھتے  ہیں

اَلَّذِینَ ۔۔  جو  سب  لوگ

اَلَّذِی ۔۔  جو  ایک  مذکر

اَلَّتِی ۔۔  جو  ایک  مؤنث

یہ  تین  الفاظ  بھی  ان  چھیانوے  الفاظ  میں  سے  ہیں  جو  آپنے  یاد  کرنے  ہیں۔  تو  ابھی  تک  ہم  نے  یہ  پڑھا  کہ  یآ یُّھَا الذِینَ  کا  مطلب  ہے  اے اے  جو  سب  لوگ،  یعنی  اے  لوگو۔

اسی  آیت  میں  اگلا  لفظ  ہے  آمَنُوا۔  یہ  لفظ  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے۔  وہ  دو  الفاظ  ہیں  امن  اور  وا۔  امن  کا  مطلب  ہے  ایمان  لانا،  اور  یہ  کسی  ایک  شخص  کے  لیئے  استعمال  ہوتا  ہے،  یعنی  جو  ایک  شخص  ایمان  لایا۔  وا  ایک  علامت  ہے  جو  اگر  کسی  لفظ  کے  آخر  میں  آجائے،  تو  وہ  لفظ  جمع  پڑھا  جاتا  ہے۔  جمع  کی  کل  ۴  چار  علامتیں  ہیں۔  یہ  علامتیں  مندرجہ  ذیل  ہیں۔ ۔ ۔

وا

ون

ین

ات

اوپر  لکھی  گئی  چاروں  علامتوں  میں  سے  کوئی  بھی  اگر  کسی  لفظ  کے  آخر  میں  آئے  تو  وہ  لفظ  جمع  پڑھا  جائے  گا۔  اسی  طرح  آمَنُوا  کا  مطلب  بھی  ہوگا  جو  سب  ایمان  لائے۔  ابھی  تک  پڑھی  گئی  آیت  کا  مطلب  ہوگا۔ ۔ ۔

یآَ یُّھَا  الَّذِینَ  آمَنُوا

اے  اے  جو  سب  لوگ  جو  سب  ایمان  لائے،  یعنی  اے  اہلِ  ایمان۔

اس  آیت  کا  اگلا  لفظ  ہے  لَا۔  یہ  لفظ  نفی  کہ  معنی  میں  استعمال  ہوتا  ہے۔  اردو  زبان  میں  بھی  ہم  لَا  استعمال  کرتے  ہیں  جیسے  لاجواب،  لاتعداد  اور  لازوال۔  عربی  زبان  میں  نفی  کی  کئی  علامتیں  ہیں۔  آیئے  ہم  نفی  کی  علامتیں  دیکھتے  ہیں۔ ۔ ۔

لَا

لَیسَ

لَم

لَن

مَا

یہ  تمام  نفی  کی  علامتیں  ہیں،  اور  یہ  مکمل  الفاظ  ہیں۔  جیسے  ہمنے  دیکھا  تھا  کہ  جمع  کی  علامتیں  کسی  لفظ  کے  آخر  میں  آتی  ہیں،  نفی  کی  علامتیں  کسی  لفظ  کے  ساتھ  جڑ  کر  نہیں  آتیں  کیوں  کہ  یہ  بذاتِ  خود  مکمل  الفاظ  ہیں۔

اگلا  لفظ  ہے  تُقَدِّمُوا۔  اس  لفظ  کو  ہم  توڑ  کر  اس  طرح  بھی  لکھ  سکتے  ہیں۔ ۔ ۔  ت ۔۔ قدم ۔۔ وا۔  یعنی  اس  لفظ  کو  تین  حصوں  میں  لکھا  جا  سکتا  ہے۔  پہلا  حصہ  صرف  ایک  ت  پر  مشتمل  ہے۔  یہاں  پر  ت  کے  استعمال  کو  سمجھنا  ضروری  ہے۔  اردو  زبان  میں  وقت  کے  اعتبار  سے  کوئی  لفظ  تین  زمانوں  میں  استعمال  کیا  جا  سکتا  ہے۔  وہ  تین  زمانے  ہیں  ماضی،  حال،  اور  مستقبل۔  ماضی  وہ  زمانہ  ہوتا  ہے  جسمیں  کام  کیا  جا  چکا  ہو،  حال  وہ  زمانہ  ہوتا  ہے  جسمیں  کام  کیا  ابھی  کیا  جا  رہا ہو،  اور  مستقبل  وہ  امانہ  ہوتا  ہے  جس  میں  کام  بعد  میں  کیا  جانا  ہو۔  مگر  عربی  میں  تین  کے  بجائے  دو  زمانے  ہوتے  ہیں۔  وہ  دو  زمانے  ہیں  ماضی  اور  مضارع۔  ماضی  تو  وہی  اردو  والا  ماضی  ہے،  مگر  اردو  والے  حال  اور  مستقبل  کو  ملا  کر  عربی  میں  مضارع  کہا  جاتا ہے،  یعنی  عربی  میں  حال  اور  مستقبل  مل  کر  مضارع  بن  جاتے  ہیں۔  عربی  میں  مضارع  کی  چند  علامتیں  ہیں۔ ۔ ۔

ت : ۔۔  تو  یا  تم

ی : ۔۔  وہ

ا :  ۔۔  میں

ن : ۔۔  ہم

مندرجہ  بالا  ۴  چار  علامتیں  کسی  بھی  لفظ  کو  مضارع  بنا  دیتی  ہیں۔  ان  چار  علامتوں  کی  ایک  ایک  مثال  لے  کر  سمجھتے  ہیں۔  اگر  لفظ  ہو  تقتل  تو  اس  لفظ  کو  ہم  توڑ  کر  ت  اور  قتل  لکھ  سکتے  ہیں۔  عربی  میں  قتل  کا  مطلب  ہوتا  ہے  لڑنا۔  اور  لفظ  کے  شروع  میں  ت  سے  یہ  لفظ  مضارع  بن  گیا،  اور  اس  لفظ  کا  مطلب  ہوا  تو  لڑتا  ہے  یا  تو  لڑے  گا۔  اسی  طرح  اگر  لفظ  ہو  تکتب،  تو  اسکا  مطلب  ہوگا  تو  لکھ  رہا  ہے  یا  تو  لکھے  گا۔

اگر  لفظ  کے  شروع  میں  ی  آجائے  تو  بھی  لفظ  مضارع  بن  جاتا ہے،  جیسا  کہ  ہم  نے  اوپر  پڑھا۔  اگر  لفظ  ہو  یقتل،  تو  اسکا  مطلب  ہوگا  وہ  لڑ  رہا  ہے  یا  وہ  لڑے  گا۔  اسی  طرح  اگر  لفظ  کے  شروع  میں  ا  آئے  تو  اسکا  مطلب  ہوگا  میں۔  اقتل  کا  مطلب  ہوگا  میں  لڑ رہا  ہوں  یا  میں  لڑوں  گا۔  اور  اسی  طرح  نقتل  کا  مطلب  ہوگا  ہم  لڑ  رہے  ہیں  یا  ہم  لڑیں  گے۔ ۔ ۔

جو  لفظ  ہم  پڑھ  رہے  تھے  وہ  تھا  ت ۔ قدم ۔ وا۔  ہم  نے  دیکھا  کہ  لفظ  کے  شروع  میں  اگر  ت  آجائے  تو  وہ  لفظ  مضارع  بن  جاتا ہے  اور  ت  کا  مطلب  ہوتا  ہے  تم  یا  تو۔ قدم  اردو  کا  لفظ  ہے  جسکا  مطلب  ہے  آگے  بڑھنا،  جیسے  ہم  کہتے  ہیں  قدم  بڑھاؤ۔  اس  لفظ  کا  آخری  حصہ  ہے  وا،  اور  ہم  نے  اوپر  پڑھا  کہ  وا  ایک  علامت  ہے  جو  لفظ  کو  جمع  بنا  دیتی  ہے۔  تو  اگر  اب  تین  حصوں  کو  جوڑ  کر  پڑھیں  تو  اس  لفظ  کا  مطلب  نکلے  گا  تم  قدم  بڑھاؤ  سب،  یعنی  تم  سب  قدم  بڑھاؤ۔

اگلا  لفظ  ہے  بَینَ۔  یہ  لفظ  بھی  اردو  میں  استعمال  ہوتا  ہے  اور  اسکا  مطلب  ہے  درمیان۔  جیسے  اردو  میں  ہم  کہتے  ہیں  بین الاقوامی  پرواز،  یعنی  قوموں  کے  درمیان  پرواز۔  اس  لفظ  سے  اگلا  لفظ  ہے  یَدَیِ۔  یہ  لفظ  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے۔  وہ  دو  الفاظ  ہیں  ید  اور  ی۔  عربی  میں  ید  کا  مطلب  ہوتا  ہے  ہاتھ۔  ایک  بات  نوٹ  کریں  کہ  یہاں  چھوٹی  ی  لفظ  کے  شروع  میں  نہیں  بلکہ  آخر  میں  ہے  اس  لئے  یہ  لفظ  مضارع  نہیں  ہے۔  لفظ  ی  کا  مطلب  ہے  دو۔  اگر  ان  دونو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  پڑھیں   تو  مطلب  بنے  گا  دو  ہاتھ۔  اور  بَینَ  یَدَیِ  کا  مطلب  ہوگا  دونو  ہاتھوں  کے  درمیان۔  یہ  اصطلاح  عربی  میں    محاورے  کے  طور  پر  استعمال  ہوئی  ہے۔  دونوں  ہاتھوں  کے  درمیان  ہمارے  سامنے  والا  حصہ  ہوتا  ہے،  اس  لئے  یہاں  بَینَ  یَدَیِ  کا  مطلب  ہے  سامنے۔

اس  کلاس  کے  اگلے  حصے  میں  سلسلہ  یہیں  سے  جوڑا  گیا  ہے۔  اللہ  ہمیں  قرآن  پڑھنے  اور  سمجھنے  کی  توفیق  عطا  فرمائے۔  آمین۔

13 Responses to “Quran Class 2 Part 1 — قرآن کلاس ۲ حصّہ اوّل”

  1. […] This cup of tea was served by: Amar Bail […]

  2. […] This cup of tea was served by: Amar Bail […]

  3. zain said

    you are doing a good work but your urdu font style is not easily readable.think about it if any improvement can be made

  4. @Zain: Thank you so very much for the appreciation. Yeah I realized it as well, the problem I think is with the vertical line spacing. The lines are too close together to easily comprehend the words. I’m sorry for the difficulty, but I don’t know of any other way to correct this. I’m currently using Windows Live writer to publish my posts, I tried searching for the line spacing feature but it doesn’t have it. I’ll try MS Word next time to publish the posts and I hope it has the line feature (it does have it for other documents but I hope it has it for blog posts as well). I’ll check it out and will let you know Insha-Allah.

  5. Assalamoalaikum,

    JazakAllah for the post, million thanks, I was rather busy and hadnt been able to browse etc, so i am printing it out, still busy. I will be able to read it on the way to the kids school now, inshaAllah and will comment on it l;ater, please dont change the font style as I can ONLY read this the best😀

    Alah apne amaan main rakhao aap ko, ameen🙂

  6. @Alhamdolillah: Jazakallah for your comment and appreciation, and Ameen to your prayers🙂. I’m not changing the font coz I didnt find the vertical line spacing feature in MS Word as well for blog post publishing.

    @Zain: If you know any way of increasing the vertical line spacing, could you please help me out, as it will only make it better Insha-Allah.

    Besides, if anyone reading this knows how to put khari zabar or khari zeir, and the 2 peish characters, plz do let me know.

    اگر کسی کو کھڑی زبر، کھڑی زیر اور دو پیش ڈالنی آتی ہیں، تو میری مدد کریں۔

  7. Un fortuntaely i dont.

    I spotted some mistakes in this post when i printed it out, for example, u wrote hay( is) three times in one place😀 I will be shortly printing out the other one too.

    P.S I got zains piture ( in his gravatar)😀 and all the widgets and all the comments printed out too when I printed it out, then a freind told me to print only the first two pages if printing from firefx
    So if anyone else is printing out these valuable posts, do the same please.

    Haris bhai, busy with family, InshaAllah in a day or two I may get time to go through comments/blogs n the usual!

  8. @Alhamdolillah: Could you please tell me the exact place where you see the triplicate words? I tried finding the word you mentioned but couldn’t figure it out. I’d Insha-Allah edit the post and make the changes you suggest. One change I made was where I had written the word “Yahan” (here) twice, so now I have corrected it🙂.

    Sister, I hope everything is OK at your end Insha-Allah. Your comment and appreciation means a lot to me, so whenever you find time, just whenever, do give your feedback on this and the other post. Jazakallah for your time, appreciation and motivation. May Allah bless you, and take care.

  9. Assalamoalaikum,

    bhai woh printout main mistake thi, ab maine yahan parha to woh mstake nahin he.

    MashaAllah kitna zabardast lesson tha yeh!! maybe you should share these lessons on BOTH your blogs so maximum number of people can read this.

    I especally liked the way you explained

    the word end or beginng changes the whole sentences meaning

    I knew about 40 percent of the leson, so MAshaAllah great things learnt, great job done, now Over to part two..

    Allah ajr de, ameen.

  10. @Alhamdolillah: Jazakallah and welcome back. It feels nice when someone talks in Urdu🙂. Feels good that there is at least someone who can read and understand in the font I write (thats the only font I have :-().

  11. abdur rahman hafeez said

    جزاك الله خيراً، وبارك في علمك وعملك، طريقتكم جيده ومفيده

  12. […] کلاس  دوم  حصہ  اول […]

  13. @All. I had to re-write this post due to mistakenly overwriting it while writing another post…

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

 
%d bloggers like this: