Amar Bail

A plant of eternity

Archive for August, 2009

Prayers needed

Posted by Haris Gulzar on August 29, 2009

This is to request all my readers to please pray for the complete health of my Grand father. He fell and broke his hip bone while going to the Masjid for Isha prayers. He has been admitted to the hospital and will have to undergo an operation tomorrow. What disturbs me the most is, that he can’t be given anesthesia because of his age, and the lower part of his body will only be made unconscious for the operation. Otherwise he’ll be conscious.

I hope he gets well soon Insha-Allah. May Allah give shifa to him as soon as is better for him Insha-Allah. Do remember him in your prayers.

Posted in English | Tagged: , | 21 Comments »

Blogspot vs WordPress

Posted by Haris Gulzar on August 28, 2009

I have recently been thinking to switch my blog from WordPress to Blogspot. When I created my blog, I didn’t know of many blog hosting services. One of my friends told me about WordPress and I created my account there. As I posted entries on my blog, I started to understand all the features that WordPress had and started feeling comfortable using WordPress. But then I came to know about Blogspot as well, and I got a blog address with my name on Blogspot. That made me curious enough to find out the differences between Blogspot and WordPress.

One of the major difference that I found out was that WordPress gives a statistics page from where the blog owner can exactly know the number of page views each day. It also tells which site referred people to our blog, and which post got the most traffic. Ever since I started using WordPress, this stats page was something I spent most of my time on, looking every now and then if my blog got more traffic or not 😛

Another difference that I see between these two services is that of the availability of themes. WordPress gives more options of themes to choose for your blog, where as Blogspot has less options. You cannot be frequently tired from the layout of your blog if you have it on Blogspot. But on the other hand, Blogspot allows editing of themes whereas WordPress doesn’t. So here I’m not sure who takes the lead.

WordPress has another great feature, that of “My Comments”. I think this is one of the best feature they have, because you can so easily trace out if there have been any replies to your comments. Blogspot doesnt have this feature. Besides, Blogspot doesn’t even allow static pages which WordPress does, so we can treat WordPress as our website but Blogspot has to be a blog. And Blogspot allows less image storage as well, and WordPress also allows uploading pdf’s and docs.

Up till now, I guess it has been WordPress taking the lead. But what makes me think about switching my bog from WordPress to Blogspot. The primary reason is Google Adsense :-). WordPress doesn’t allow third party code that can generate Ads, but Blogspot (being a Google service) does. And I think it is not bad to have tiny Ads at the bottom of the page just sitting there quietly and generating revenue for you without even letting anyone know.

Having said all this, I’m still confused if I should really switch :-(. I so like WordPress now and feel so comfortable using it, but Blogspot has its own advantages (or maybe just one advantage). Lets see what I decide 🙂

Posted in English | Tagged: | 28 Comments »

دو ٹکے کا آدمی

Posted by Haris Gulzar on August 27, 2009

یہ  واقعہ  میں  نے  خود  اپنی  آنکھوں  سے  تو  نہیں  دیکھا،  مگر  اس  واقعہ  کو  محسوس  ضرور  کیا  ہے۔  مجھے  یہ  واقعہ  جس  طرح  سنایا  گیا  تھا،  اور  جن  جزبات  کے  ساتھ  سنایا  گیا  تھا،  میرے  خیال  میں  مجھے  اچھی  طرح  اندازہ  ہے  کہ  کن  الفاظ  کے  استعمال  سے  یہ  واقعہ،  واقعہ  بنا  ہوگا۔  ایسے  کئی  واقعوں  سے  ہم  ہر  روز  دو  چار  ہوتے  ہیں،  روز  دیکھتے  ہیں  مگر  پھر  بھی  سوچتے  نہیں  ہیں۔  یہ  واقعہ  ہے  ایک  غریب  آدمی  کا،  اور  ایک  امیر  آدمی  کا۔ ۔ ۔

شام  کا  وقت  تھا،  ایک  غریب  آدمی  جس  کی  ڈیوٹی  ایک  بہت  بڑی  پارکنگ  کے  باہر  لگی  ہوئی  تھی،  ہر  جانے  والی  گاڑی  سے  پارکنگ  کا  کرایہ  اور  ٹکٹ  وصول  کر  رہا  تھا۔  اسی  دوران  ایک  امیر  آدمی  اپنی  گاڑی  میں  اس  غریب  آدمی  کے  پاس  پہنچا۔  غریب  آدمی  نے  گاڑی  کی  ٹکٹ  مانگی  تو  گاڑی  کے  مالک  نے  بتایا  کہ  ٹکٹ  اس  سے  گم  چکی  ہے،  مگر  پارکنگ  کا  کرایہ  وہ  دینے  کے  لیئے  تیّار  ہے۔  ٹکٹ  وصولی  کرنے  والے  شخص  نے  تشویش  کا  اظہار  کیا  اور  کہا  کہ  ٹکٹ  دکھائے  بغیر  گاڑی  لےجانا  مشکل  ہے۔  اس  غریب  آدمی  کی  اس  بات  پر  امیر  آدمی  کو  اپنی  بےعزتی  محسوس  ہوئی  اور  وہ  اس  غریب  آدمی  پر  چلّانا  شروع  ہوگیا۔

اسی  بحث  کے  دوران  جو  اس  غریب  آدمی  اور  امیر  آدمی  میں  چل  رہی  تھی،  دوسری  گاڑیوں  والے  لوگ  اتر  کر  انکی  بحث  ختم  کرانے  آگئے۔  تب  اس  امیر  آدمی  نے  وہ  کہ  ڈالہ  جسکا  اسے  غرور  تھا۔  اس  امیر  آدمی  کہ  الفاظ  تھے  کہ  “  اس  دو  ٹکے  کے  آدمی  کی  ہمّت  کیسے  ہوئی  میری  گاڑی  روکنے  کی،  یہ  انسان  اپنے  آپ  کو  سمجھتا  کیا  ہے”۔   یہاں  لکھے  گئے  الفاظ  شاید  اصل  مکالمے  سے  تھوڑے  مختلف  ہوں  مگر  انکا  مفہوم  تقریباّ  یہی  ہے۔  غلطی  اس  گاڑی  والے  کی  تھی  کہ  اسنے  پارکنگ  ٹکٹ  اپنے  پاس  سنبھال  کر  نہیں  رکھی،  مگر  چیخ  وہ  ایسے  رہا  تھا  جیسے  اسکی  کوئی  غلطی  نہیں۔  اور  اسکی  غلطی  ہو  بھی  کیسے  سکتی  تھی،  اخر  کو  وہ  ایک  امیر  آدمی  تھا،  اسکو  حق  تھا  کہ  وہ  ایک  غریب  آدمی  کو  بےعزت  کرے،  اس  پر  چلّائے،  اس  پر  اپنا  غصہ  نکالے۔ ۔ ۔

کیا  کسی  اور  شخص  کو  دو  ٹکے  کا  بول  کر  وہ  امیر  آدمی  خود  دو  ٹکے  کا  نہیں  رہ  گیا؟  کیا  وہ  شخص  جو  سارا  دن  محنت  کرتا  ہے،  گرمی  میں  کھڑے  ہو  کر  ہر  گاڑی  سے  ٹکٹ  اور  کرایہ  وصول  کرتا  ہے،  صرف  اس  لیئے  دو  ٹکے  کا  آدمی  ہے  کیونکہ  وہ  ایک  بڑی  گاڑی  میں  اے  سی  چلا  کر  نہیں  بیٹھ  سکتا؟  کیا  انسان  کی  عزت  صرف  اسکی  حیثیت  اور  پیسے  سے  ہوتی  ہے؟  کیا  انسان  کی  گاڑیاں  اور  اسکی  دوسروں  پہ  چلّانے  کی  صلاحیت  سے  ہی  اندازہ  لگایا  جاتا  ہے  کہ  وہ  دو  ٹکے  کا  ہے  یا  انمول؟  کیا  اس  محنت  کش  کی  عزت  نفس  کو  ٹھیس  نہیں  پہنچی  ہوگی؟  کیا  اسے  یہ  خیال  نہیں  آیا  ہوگا  کہ  اسکا  کیا  قصور  تھا؟  وہ  تو  فقط  اپنی  ڈیوٹی  دے  رہا  تھا۔  افسوس  کہ  وہ  امیر  آدمی  یہ  نہیں  سمجھ  سکا  کہ  اس  غریب  آدمی  کی  نظر  میں  یہ  امیر  آدمی  دو  ٹکے  کی  اوقات  بھی  نہیں  رکھتا  ہوگا۔

اللہ  ہم  سب  کو  ہدایت  دے  اور  ہمیں  ایک  دوسرے  کی  قدر  اور  عزت  کرنے  کی  توفیق  دے۔ آمین

Posted in Urdu | Tagged: , , , | 16 Comments »

Busy was I

Posted by Haris Gulzar on August 24, 2009

I missed my blog. I missed all the blogs that I regularly read. I missed surfing and wasting time over the internet. I missed chatting with friends. I missed checking my emails. I missed my laptop. I think I wrote my last post on the 11th of this month. I remember thinking about writing a post on Independence day of Pakistan but didn’t get time for that. I dint get time for anything. I think I was busy, or was I?

Sometimes you’re busy and don’t get time to do tasks that you usually do. Sometimes this busyness is physical and sometimes it is mental. Talking about myself, in these past days that I have been out of touch from my blog, sometimes I was way too busy to even think about writing something, and sometimes I had ample time to write even 2 posts. But I was still busy. Sometimes I was busy physically, and sometimes I was busy mentally. It was a mix of everything.

I had lots and lots of topics to write about. Things I observed, things I thought needed some attention, things I have been going through etc. I so wanted to write at least something, even if not what I felt or what I wanted to say, but just anything, but again, I was probably busy. Many a times I started thinking about the title and the contents of my post, the way I’d go about structuring my sentences and the words I’d use to express myself, but I’d end up without time to write whatever there was in my mind.

Sometimes it happens that you write because you don’t have anything else to do. That’s when you don’t actually want to write, but you do. Sometimes you really really want to write, maybe just to let out your feelings and emotions, but you don’t. Sometimes you have so much to say, so much to tell, so much to share and get comments and feedback about, but you can’t.

Sometimes totally the opposite happens. You have all the time in this world to come up with whatever you want to write, to structure it, to recheck it and what not, but you aren’t the mood to write. That’s when you aren’t actually busy, but you still are busy. You’re busy mentally. Something inside your mind causes enough tension and burden on you that even after wanting to write, you can’t write.

And frankly speaking, I have no idea whatsoever about whatever I’ve written so far. Today I’m writing because I so want to write. I so want to express myself, though I don’t think I’m expressing myself, but at least I’m writing. Today I just don’t care if I’m physically busy or mentally busy, or both or none, I just want to write. I want to update my blog. I want to give time to other blogs that I read. I want to spend time with my laptop. I want to waste time over the internet…

Posted in English | Tagged: , , , | 23 Comments »

مشرقی لڑکے۔ ۔ ۔

Posted by Haris Gulzar on August 11, 2009

آپ  نے  اکثر  مشرقی  لڑکیوں  کا  ذکر  تو  سنا  ہوگا۔  مثال  کے  طور  پر  مشرقی  لڑکیاں  شرماتی  ہیں،  بڑوں  کے  سامنے  نہیں  بولتیں،  گھر  کے  کام  کاج  میں  اپنی  والدہ  کا  ہاتھ  بٹاتی  ہیں  اور  بہت  کم  عمر  میں  ہی  کھانے  پکانے  کا  شوق  پال  لیتی  ہیں  وغیرہ  وغیرہ۔ ۔ ۔  اکثر  کچھ  سگھڑ  لڑکیاں  دیکھ  کر  آپکے  ذہن  میں  مشرقی  لڑکی  کی  ایک  تصویر  بن  جاتی  ہوگی،  کہ  یہ  لڑکی  یقیناّ  ایسے  کرتی  ہوگی،  یہ  لڑکی  ویسے  کرتی  ہوگی۔  اکثر  لڑکیوں  کی  ایک  حرکت  پر  اس  کے  ساتھ  باقی  حرکات،  یا  ادائیں  منصوب  کر  دی  جاتی  ہیں۔  مگر  یہ  سب  مشرقی  لڑکوں  کے  ساتھ  کیوں  نہیں  ہوتا؟

اب  مثال  کے  طور  پر  کسی  مشرقی  لڑکے  سے  پوچھیں  کہ  تمہاری  شادی  کر  دیں؟  اگر  تو  وہ  واقعی  مشرقی  لڑکا  ہے،  یعنی  صرف  کہنے  کا  نہیں  بلکہ  اپنی  حرکات  اور  باتوں  سے  بھی  مشرقی  ہے،  تو  وہ  بھی  شرمائے  گا،  ٹھیک  اسی  طرح  جس  طرح  کوئی  مشرقی  لڑکی  شرماتی  ہے۔  بلکہ  میرے  خیال  میں  تو  آج  کے  دور  میں  لڑکی  کا  شادی  کا  ذکر  سن  کر  شرمانہ  بھی  بس  ایک  رواج  کی  حد  تک  محدود  رہ  گیا  ہے،  بلکہ  میں  تو  یہ  بھی  کہوں  گا  آج  کل  لڑکیاں  لڑکوں  سے  زیادہ  بولڈ  اور  اوپن  مائنڈڈ  ہیں۔

خیر،  ذکر  ہو  رہا  تھا  مشرقی  لڑکوں  کا۔  کچھ  دن  پہلے  میں  نے  ایک  پوسٹ لکھی  تھی  جس  میں  میں  نے  ذکر  کیا  کہ  کیسے  ایک  آنٹی  نے  میرے  مشرقی  پن  کا  فائدہ  اٹھانے  کی  کوشش کی۔  اور  تو  اور،  آنٹیوں  کو  اس  بات  کا  ذرا  بھی  ملال  نہیں  ہوتا  اگر  وہ  کسی  کا  حق  چھین  لیں،  شاید  اسکی  وجہ  یہ  ہے  کہ  مشرقی  خواتیں  کو  پتہ  ہوتا  ہے  کہ  مشرقی  لڑکے  ان  کا  لحاظ  کر  جائیں  گے۔

چاہے  کسی  دروازے  سے  نکل  رہے  ہوں،   ایک  مشرقی  لڑکا  ہمیشہ  خود  رکے  گا  اور  اپنے  سے  پہلے  خواتیں  کو  نکلنے  کا  موقع  دےگا۔  مانا  کہ  خواتین  کے  کچھ  اپنے  حقوق  ہیں  مگر  مشرقی  لڑکوں  کے  مشرقی  پن  کی  بھی  تو  عزّت  کرنی  چاہئے۔  اور  ظلم  کی  انتہا  یہ  کہ  مشرقی  لڑکے  جتنے  بھی  شریف  ہوں  اور  اپنے  مشرقی  پن  کا  مظاہرہ  کریں،  ان  کو  دیکھا  ہمیشہ  شق  کی  نگاہ  سے  جاتا  ہے۔  پتہ  نہیں  کیسے  دوست  ہونگے  اس  کے،  پتہ  نہیں  رات  گئے  تک  آفس  کے  نام  پر  کہاں  جاتا  ہوگا۔

کیا  مشرقی  لڑکے  کبھی  کسی  گنتی  میں  شمار  نہیں  کئے  جائیں  گے؟  کیا  مشرقی  لڑکوں  کا  یہی  مقدر  ہے۔ ۔ ۔

Posted in Urdu | Tagged: , | 14 Comments »

Warning…

Posted by Haris Gulzar on August 9, 2009

Sometime back I was sitting with a couple of my friends who are both regular smokers. They’re always careful enough not to smoke in front of their parents or any elder, not because they’ll be caught smoking (everyone knows they smoke), but because they show respect to their elders. They think it looks bad if someone sees them smoking. Similarly, when they’re done smoking, they either have some sweet or some tulsi or similar sort of thing to make sure there mouths aren’t smelling bad.

That day, one of them started eating tulsi while smoking and the other one warned him not to eat tulsi during smoking because it is one of the biggest causes of mouth cancer. I was shocked. I mean it was good to know that one smoker was showing care for another smoker but don’t they know that smoking is the biggest reason for lung cancer. When I asked them if he was only warning the other person from mouth cancer or from lung cancer, both of them could only laugh :-(.

Click to view sourceI once read a quotation that said “Anyone can quit smoking, but it takes a real man to face the cancer”. Whenever I say this to any smoker, he only laughs, knowing that what they do is wrong, but they probably have no control left with them over quitting smoking. Smoking is an addiction I can understand, but what I don’t understand is, why do people start smoking? Why do they take this first step? Why do they challenge themselves, knowing that this will lead them to various diseases, the dangerous of all being lung cancer, still, they challenge themselves. What thrill is there in smoking? What motivates someone to such an extent that they starts smoking?

Posted in English | Tagged: , | 16 Comments »

Quran Class I — قرآن کلاس ۱

Posted by Haris Gulzar on August 8, 2009

میں  نے  دو  دن  پہلے  قرانی  عربی  کا  ایک  کورس  شروع  کیا۔  جس  طریقے  سے  وہ  کورس  پڑھایا  جا  رہا  ہے  اور  قران  کی  گرائمر  سمجھائی  جا  رہی  ہے،  وہ  کورس  پڑھنے  کا  بہت  مزہ  آتا  ہے۔  یہ  کورس  صرف  ۱۰  دن  کا  ہے  اور  اس  کورس  کے  بعد  انشأاللہ  اتنی  عربی  ضرور  آجائے  گی  کہ  قران  پڑھ  کہ  اسے  حرف  بہ  حرف  سمجھ  سکیں۔  میں  نے  سوچا  کیوں  نہ  ہر  کلاس  میں  پڑھائی  گئی  تمام  باتیں  یہاں  لکھ  دی  جائیں  تاکہ  مجھے  بھی  فائدہ  ہوتا  رہے،  اور  ہر  پڑھنے  والا  بھی  کچھ  سیکھ  سکے۔  میں  اپنی  پوری  کوشش  کروں  گا  کہ  اسی  روانی  اور  تسلسل  سے  یہاں  لکھتا  رہوں  جس  طرح  ہمیں  کلاس  میں  پڑھایا  جا  رہا  ہے  انشأاللہ۔  مجھے  ان  پروفیسر  صاحب  کا  نام  بھول  گیا  ہے  جنہوں  نے  یہ  کورس  تشکیل  دیا  ہے،  مگر  اگر  کوئی  انکا  نام  جاننے  میں  دلچسپی  رکھتا  ہے،  تو  میں  انشأاللہ  ۲  یا  ۳  دن  میں  دوبارہ  پتہ  کر  کے  بتا  سکتا  ہوں  انشأاللہ۔

آج  ہم  پہلی  کلاس  سے  آغاز  کرتے  ہیں۔ ۔ ۔  کورس  کی  گہرائی  میں  جانے  سے  پہلے  کچھ  باتیں  نوٹ  فرما  لیں۔ ۔ ۔

۔۔۔ اس  ۱۰  دن  کو  کورس  میں  ہم  سورت  حجرات  پڑھیں  گے۔  یہ  مدنی  سورت  ہے  اور  قران  کی  ۲۴ ویں  سورت  ہے۔

۔۔۔ پہلی  تین  کلاسیں  خاصی  مشکل  لگیں  گی،  مگر  ان  تین  کلاسوں  کے  بعد  اگلی  سات  کلاسیں  انشأاللہ  بہت  آسان  لگیں  گی  کیوںکہ  جو  گرائمر  کے  اصول  ہم  شروع  میں  پڑھیں  گے،  وہی  بعد  میں  دہرائے  جائیں  گے۔

۔۔۔ قران  میں  ایک  اندازے  کے  مطابق  کل  ۸۶۰۰۰ (  چھیاسی  ہزار)  الفاظ  ہیں،  جن  میں  سے  ۹۶ (چھیانوے)  الفاظ  ایسے  ہیں  جنکی  کل  تعداد  ۲۲۵۰۰ (بائیس  ہزار  پانچ  سو)  بن  جاتی  ہے۔  یہ  ۹۶ (چھیانوے)  الفاظ  کافی  آسان  ہیں  اور  ان  کو  یاد  کرنے  سے  تقریباّ  قران  کا  ایک  چوتھائی  تو  ہمیں  یاد  ہو  جائے  گا  انشأاللہ۔  اس  کورس  کے  دوران  ہم  یہ  ۹۶  (چھیانوے)  الفاظ  بھی  یاد  کریں  گے۔

۔۔۔  اس  کورس  کے  دوران  ہم  زیر،  زبر  اور  پیش  پہ  زیادہ  دھیان  نہیں  دیں  گے۔  اسکی  وجہ  یہ  ہے  کہ  ہم  عربی  بولنا  یا  لکھنا  نہیں  سیکھ  رہے،  بلکے  صرف  پڑھنا  اور  سمجھنا  سیکھ  رہے  ہیں۔  ہمنے  اس  کورس  کے  بعد  عربی  کے  جملے  نہیں  بنانے   اسلئے  اس  کورس  کی  مدت  تک  زیر،  زبر  اور  پیش  پہ  زیادہ  دھیان  نہیں  دیا  جائے  گا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

قران  کی  ایک  سورت  کے  علاوہ  باقی  تمام  سورتیں  بسم اللہ  سے  شروع  ہوتی  ہیں۔  آج  ہم  دیکھتے  ہیں  کہ  اس  آیت  کا  مطلب  کیا  ہے۔ ۔ ۔

بسم دو  لفظوں  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے۔  وہ  دو  لفظ  ہیں  ‘با’،  اور  ‘اسم’۔  یہ  دونو  لفظ  اردو  میں  عام  استعمال  کئیے  جاتے  ہیں۔  ‘اسم’  کے  معنی  ہیں  ‘نام’۔  جیسے  ہم  عموماّ  کہتے  ہیں  “آپکا  اسم  شریف  کیا  ہے؟”  یعنی  آپکا  نام  کیا  ہے۔  اسی  طرح  ‘با’  بھی  اردو  زبان  میں  استعمال  کیا  جاتا  ہے،  جیسے  ‘با  ادب’  یا  با  عزت۔  لفظ  با  کا  مطلب  ہے  ‘کے  ساتھ’۔  اکثر  عربی  زبان  میں  جب  دو  لفظوں  کو  جوڑا  جاتا  ہے  تو  انکے  درمیان  موجود  الف  کھا  لئے  جاتے  ہیں۔  یہاں  پر  بھی  یہی  کیا  گیا  ہے۔  با  اور  اسم  کو  جوڑ  کر  بسم  بنایا  گیا  ہے  جسکا  مطلب  ہے،  کے  ساتھ  نام۔

بسم  کے  بعد  اللہ  ہے  جس  سے  مطلب  بنا،  ‘کے  ساتھ  نام  اللہ’۔  یعنی  اللہ  کے  نام  کے  ساتھ۔  جس  طرح  قران  کی  ایک  سورت  کے  علاوہ  باقی  تمام  سورتیں  اللہ  کے  نام  سے  شروع  ہوتی  ہیں،  ہمیں  بھی  اپنا  ہر  کام  اللہ  کے  نام،  سے  شروع  کرنا  چاہئے۔  یہاں  ایک  بات  اور  نوٹ  فرما  لیں۔  کچھ  علماء  کہتے  ہیں  کہ  لفظ  اللہ  بھی  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے۔  وہ  دو  الفاظ  ہیں  ‘ال’  اور  ‘الہ’۔  ‘ال’  کو  استعمال  کیا  جاتا  ہے  کسی  عام  چیز  کو  خاص  بنانے  کے  لئیے،  مثال  کے  طور  پر،  کتاب  کا  مطلب  ہوگا  کوئی  بھی  کتاب،  مگر  الکتاب  کا  مطلب  ہوگا  کوئی  ایسی  خاص  کتاب  جسکا  یا  تو  تمام  لوگوں  کو  پتہ  ہے،  یا  اسکا  ذکر  ہوچکا  ہے  اور  اسی  ذکر  کے  طحت  بات  کی  جا  رہی  ہے۔  اسی  طرح  لفظ  ‘الہ’  کا  مطلب  ہے  خدا  (کوئی  بھی  خدا)  ۔  تو  جب الہ  یعنی  کسی  بھی  خدا  کا  ذکر  ہو،  اور  اس  سے  پہلے  ‘ال’  لگ  جائے،  تو  وہ  ایک  خاص  خدا  یعنی  اللہ  کا  ذکر  بن  جائے  گا۔  تو  کچھ  علماء  یہ  بھی  کہتے  ہیں  کہ  اللہ  بھی  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے۔ ۔ ۔

اب  ہم  گرائمر  کے  کچھ  مزید  اصول  پڑھتے  ہیں۔ اردو  میں  ہم  نے  پڑھا  تھا  کے  ایک  فعل  ہوتا  ہے،  ایک  ہاعل  ہوتا  ہے،  اور  ایک  مفعول  ہوتا  ہے۔  اسی  طرح  عربی  میں  بھی  ایک  لفظ  کی  یہ  تینو  حالتیں  ہو  سکتی  ہیں۔  ہم  دیکھتے  ہیں  کہ  کس  طرح  ایک  حالت  سے  لفظ  دوسری  حالت  اختیار  کرتا  ہے۔ ۔ ۔

فعل  ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ فاعل ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔   مفعول

فعل  سے  فاعل  بنانے  کے  لئیے  ہم  نے  صرف  اتنا  کیا  کہ  پہلے  حرف  یعنی  ‘ف’  کے  بعد  اپنی  طرف  سے  ایک  ‘الف’  ڈال  دیا۔  اور  باقی  سب  کچھ  ویسا  ہی  رہنے  دیا۔  ایک  بات  نوٹ  کرنے  والی  یہ  ہے  کہ  عربی  زبان  میں  بیشتر  لفظ  صرف  تیں  حرف  سے  بنتے  ہیں۔  تو  اگر  پہلے  حرف  کے  بعد  الف  لگا  دیا  جائے  اور  باقی  دونو  حرف  ایسے  ہی  رہنے  دیئے  جائیں،  تو  فعل  سے  فاعل  بن  جائے  گا۔  فعل  ہوتا  ہے  کوئی  کام  کرنا،  اور  فاعل  ہوتا  ہے  وہ  کام  کرنے  والا۔  مثال  کے  طور  پر  اگر  ہم  لفظ  ‘قتل’  کو  دیکھیں،  جو  کہ  ایک  فعل  ہے،  تو  اسکا  فاعل  بنانا  بہت  آسان  ہے۔  صرف  پہلے  حرف  یعنی  ق  کے  بعد  الف  لگا  دیں۔  اور  باقی  دونو  حرف  الف  کے  بعد  ویسے  ہی  لگا  دیں۔  جو  لفظ  بنے  گا  وہ  ہی  قاتل۔  اسی  طرح  اگر  فعل  سے  مفعول  بنانا  ہو  تو  ہم  سب  سے  پہلے  اپنی  طرف  سے  ایک  م  کا  اظافہ  کرتے  ہیں،  اسکے  بعد  دو  حرف  ایسے  ہی  رہنے  دیتے  ہیں،  اور  پھر  آخری  حرف  سے  پہلے  ایک  و  کا  اظافہ   کرتے  ہیں۔  اگر  قتل سے  مفعول  بنانا  ہو،  تو  سب  سے  پہلے  م،  پھر  دو  حرف  جس  طرح  تھے  اسی  طرح  یعنی  ق  اور  ت،  پھر  ایک  و  اور  پھر  آخری  حرف۔  اس  طرح  بنے  گا  مقتول۔

کچھ  اور  مثالیں  دیکھتے  ہیں

فعل  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  فاعل  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  مفعول

طلب  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  طالب  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  مطلوب

حمد  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  حامد  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  محمود

خلق  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  خالق  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  مخلوق

رحم  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  راحم  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  مرحوم

حکم  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  حاکم  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  محکوم

نصر  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  ناصر  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  منصور۔ ۔ ۔

امید  ہے  کہ  فعل  سے  فاعل  اور  مفعول  بنانے  کا  طریقہ  آپکو  آگیا  ہوگا۔  جیسے  جیسے  ہم  آگے  پڑھیں  گے،  یہ  چیزیں  اور  بھی  آسان  ہو  جائیں  گی  انشأاللہ۔  اب  ہم  کچھ  مزید  گرائمر  پڑھتے  ہیں۔

جس  طرح  ہم  نے  فاعل  اور  مفعول  پڑھا،  اسی  طرح  عربی  میں  فعل  کی  دو  مزید  حالتیں  ہوتی  ہیں۔  یہ  حالتیں  ہیں  فعلان  اور  فعیل۔  ہمیں  یہ  تو  پتہ  ہی  ہے  کہ  فاعل  وہ  ہوتا  ہے  جو  فعل  کرے،  اسی  طرح  فعلان   بھی  اسی  شخص  کو  کہتے  ہیں  جو  فعل  کرے،  فرق  صرف  اتنا  ہے  کہ  فاعل  جب  فعل  کرتا  ہے،  تو  اس  میں  جوش  اور  ولولہ  نہیں  ہوتا،  مگر  فعلان  جب  فعل  کرتا  ہے  تو  شدّت  سے،  جوش  اور  ولولے  سے  کرتا  ہے۔  یعنی  اگر  ہم  نے  ایسے  فاعل  کا  زکر  کرنا  ہو  جسنے  کوئی  فعل  بہت  جوش  اور  شدّت  سے  کیا  ہو،  تو  ہم  اس  فاعل  کو  فعلان  کہتے  ہیں۔  اسی  طرح  فعیل  بھی  فعل  کرنے  والا  ہوتا  ہے  مگر  وہ  ایسا  فاعل  ہوتا  ہے  جو  ازل  سے  ابد  تک  وہ  فعل  کرے۔  یعنی  جس  فعل  کو  کرنے  میں  وقت  لامحدود  ہو۔  وہ  فعل  ہمیشہ  کیا  جاتا  رہے۔

فعل  سے  فعلان  بنانا  بھی  بہت  اصان  ہے،  صرف  فعل  کے  آخر  میں  الف  اور  ن  لگانا  ہے۔  اسی  طرح  فعل  سے  فعیل  بنانے  کے  لئیے  آخری  حرف  سے  پہلے  چھوٹی  ی  لگانی  ہے۔  ہم  اسکی  بھی  کچھ  مثالیں  دیکھتے  ہیں۔ ۔ ۔

فعل  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  فعلان  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  فعیل

قتل  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  قتلان  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  قتیل  (قتلان  وہ  شخص  ہوگا  جو  بہت  جوش  اور  ولولے  سے   قتل  کرے۔  اور  قتیل  وہ  شخص  ہوگا  جو  ازل  سے  لیکر  ابد  تک،  ہمیشہ  ہمیشہ  قتل  کرتا  رہے۔  عربی  میں  قتل  کا  مطلب  لڑنا  ہوتا  ہے)۔

رحم  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  رحمان  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  رحیم  (رحمان  کا  مطلب  ہوگا  جو  بہت  شدت  اور  جوش  سے  رحم  کرے،  اور  رحیم  کا  مطلب  ہوگا  جو  ہمیشہ  ہمیشہ  رحم  کرتا  رہے)۔

نصر  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  نصران  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  نصیر  (  نصران  کا  مطلب  ہوگا  جو  بہت  جوش  سے  اور  ولولے  سے  مدد  کرے،  اور  نصیر  کا  مطلب  ہوگا  جو  ہمیشہ  مدد کرتا  رہے)۔

اب  ہم  واپس  اپنی  پہلی  آیت  یعنی  بسم اللہ  الرحمن  الرحیم  کو  دیکھتے  ہیں۔

بسم اللہ  کا  مطلب  کے  ساتھ  نام  اللہ،  یعنی  اللہ  کے  نام  کے  ساتھ۔  الرحمن  دو  الفاظ  کو  جوڑ  کر  بنایا  گیا  ہے،  ال  اور  رحمان۔  رحمان  تو  ہم  نے  ابھی  دیکھا  کہ  بہت  شدت،  جوش  اور  ولولے  سے  رحم  کرنے  والے  کو  کہا  جاتا  ہے،  اور  ہم  نے  شروع  میں  پڑھا  تھا  کہ  اگر  کسی  لفظ  سے  پہلے  ال  لگا  دیا  جائے  تو  وہ  عام  چیز  کو  خاص  بنا  دیتا  ہے،  جسکا  یا  تو  ہم  سم  کو  پتہ  ہوگا،  یا  پیچھے  اسکا  زکر  ہو  چکا  ہوگا۔  رحمان  سے  پہلے  ال  لگانے  کا  مطلب  ہے  کہ  کوئی  ایسا  شدت  سے  رحم  کرنے  والا  جسکا  ذکر  پہلے  ہو  چکا  ہو،  اور  وہ  ہے  اللہ  جسکے  نام  کے  ساتھ  ہم  نے  یہ  آیت  شروع  کی  تھی۔  تو  بسم اللہ  الرحمن  کا  مطلب  ہوا  کے  ساتھ  نام  اللہ  بہت  شدت  اور  جوش  سے  رحم  کرنے  والا۔  یعنی  اللہ  کے  نام  کے  ساتھ  جو  بہت  رحم  کرنے  والا  ہے۔  اسی  طرح  ہم  رحیم  کا  مطلب  بھی  دیکھ  چکے  ہیں،  رحیم  کا  مطلب  ہے  ازل  سے  ابد  تک،  ہمیشہ  ہمیشہ  رحم  کرنے  والا۔   تو  پوری  آیت  کا  مطلب  بنے  گا  “اللہ  کے  نام  کے  ساتھ  جو  بہت  شدت  سے  رحم  کرتا  ہے  اور  ہمیشہ  ہمیشہ  رحم  کرتا  ہے”۔

امید  ہے  ااوپر  کی  گئی  باتیں  آپکو  کافی  حد  تک  سمجھ  آگئی  ہونگی۔  اگر  کچھ  تھوڑا  بہت  نہیں  بھی  سمجھ آیا  تو  انشأاللہ  جب  ہم  اگلی  کلاس  میں  مزید  آیتیں  دیکھیں  گے  تو  سمجھ  آجائے  گا۔  میں  نے  اوپر  ۹۶  چھیانوے  الفاظ  کا  ذکر  کیا  تھا  جو  ہم  انشأاللہ  اس  کورس  میں  یاد  کریں  گے۔  آج  کے  لئیے  آپکو  ۶  چھہ  الفاظ  بتا  رہا  ہوں۔  یہ  چھہ  الفاظ  بہت  آسان  ہیں  اور  قرآن  میں  بار  بار  آئے  ہیں۔  ان  میں  سے  چار  الفاظ  الف  اور  ن  سے  شروع  ہوتے  ہیں،  صرف  زبر  اور  زیر  کا  فرق  ہے۔

اَنَّ  ۔ ۔ ۔ ۔ ۔   بےشک

اِنَّ  ۔ ۔ ۔ ۔ ۔   بےشک

اَن  ۔ ۔ ۔ ۔ ۔  کہ

اِن  ۔ ۔ ۔ ۔ ۔  اگر

پہلے  دو  لفظ  میں  ن  کے  اوپر  شد  ہے  اور  زبر  ہے،  اور  پہلے  لفظ  میں  الف  کے  اوپر  زبر  ہے  اور  دوسرے  لفظ  میں  الف  کے  نیچے  زیر  ہے۔  پہلے  دونو  الفاظ  کا  مطلب  ہے  بےشک۔

اگلے  دونو  الفاظ  میں  ن  کے  اوپر  جزم  ہے۔  تیسرے  لفظ  میں  الف  کے  اوپر  زبر  ہے  اور  چوتھے  لفظ  میں  الف  کے  نیچے  زیر  ہے۔  تیسرے  لفظ  کا  مطلب  ہے  کہ  اور  چوتھے  لفظ  کا  مطلب  ہے  اگر۔

پانچواں  لفظ  جو  ہم  پڑھیں  گے  وہ  ہے    ‘یا’۔  یہ  لفظ  اردو  میں  بھی  استعمال  ہوتا  ہے،  جیسے  یا  حارث،  یا  عثمان۔  یہ  لفظ  ہم  کسی  کو  بلانے  کے  لئے  استعمال  کرتے  ہیں۔  اسکا  مطلب  ہے  اے۔  یعنی  اے  حارث،  اے  عثمان۔

اور  چھٹا  لفظ   جو  ہم  دیکھیں  گے  وہ  ہے  ایھا۔  اس  لفظ  میں  ی  کے  اوپر  پیش  ہے  مگر  مجھے  بہت  ڈھونڈنے  کے  باوجود  پیش  نہیں  مل  رہی۔   ی  کے  اوپر  شد  بھی  ہے۔  اس  لفظ  کا  مطلب  بھی  ہے  اے۔  یعنی  دونو  الفاظ  کا  ایک  ہی  مطلب  ہے۔  اکثر  قرآن  میں  یہ  دونو  لفظ  اکھٹے  استعمال  ہوتے  ہیں  جو  زور  ڈالنے  کے  لئے  کیا  جاتا  ہے۔

قران  اصل  میں  ایک  خطاب  کی  شکل  میں  ہے،  اسلئے  اکثر  جگہ  ہم  دیکھیں  گے  کہ  کسی  نہ  کسی  کو  مخاطب  کیا  گیا  ہوگا۔  یا  ایمان  والوں  کو،  یا  اہلِ  کفر  کو،  یا  تمام  انسانوں  کو،  یا  کسی  خاص  قوم  کو۔  سورت  حجرات  بھی  اسی  طرح  کے  ایک  خطاب  سے  شروع  ہوتی  ہے۔  انشأاللہ  اگلی  کلاس  میں  ہم  کچھ  مزید  گرائمر  اور  سورت  حجرات  کی  کچھ  آیتیں  دیکھیں  گے۔  اللہ  ہمیں  قران  سمجھنے  اور  اس  پہ  عمل  کرنے  کی  توفیق  عطا  فرمائے۔  آمین

Posted in Urdu | Tagged: , , | 16 Comments »

Aunty-ism…

Posted by Haris Gulzar on August 6, 2009

A couple of days back I went to the MAKRO cash and carry centre where I experienced aunty-ism at its best. Yeah that’s right. I was accompanying my brother’s family and I had control of the trolley. It was Sunday I guess, and was around evening time so the place was crowded. Almost all the checkout counters were full except one where there was an aunty putting the things she bought on the counter. I stood behind her waiting for my turn. Naturally, I kept some distance from the aunty in front of me.

Hardly a couple of minutes would have passed when another aunty swiftly brought her trolley and stood right between me and the aunty in front of me. She didn’t even look at me let aside asking me if she could take my place. I think I did mention that I can’t easily control my anger. My brother was looking at me as if he’d just eat me the very next second. He said “Why can’t you be careful’” and I was like, What can I do, she’s an AUNTY after all :-(. Me being a Mashraqi larka, couldn’t think of anything, and she just stood there as if she didn’t do anything. That was when I said:

Me: Excuse me.

Aunty: Yes.

Me: I was standing in line before you.

Aunty: Is that a line you’re standing in?

Me: I was keeping some distance because of the aunty in front of me.

Aunty: OK no problem.

Me: So…. will you please move?

Aunty: You can take your turn, I’m just standing here.

I don’t really know what she meant with this. She probably wanted me to push her out of the line and take control of my turn, because otherwise she wasn’t willing to move. That was when my Bhabi took control of things and moved our trolley right next to the aunty in front of us, who by now was almost done with checking out…

Aunty-ism isn’t it? :-P.

Posted in English | Tagged: , | 30 Comments »

iLike…

Posted by Haris Gulzar on August 4, 2009

So, here comes the post that I, and probably a few of my readers have been waiting for. The post about the blogs I like :-). But before I proceed, I think I should give credit to Jman from where the title of my post iRead was inspired, which now becomes the inspiration for the title of this post. Thank you Jman :-).

As I mentioned earlier, I have been subscribing to a lot many blogs lately, and do also try to go through them. Most of the blogs I have subscribed to are just so wonderful that I really wait for my reader application to show some unread items from those blogs (After all, that’s why I subscribed to them :-P), but as a matter of fact, I cannot mention that many blogs here, and another matter of fact is, that some blogs are actually better than others (in my opinion), though again, others are not bad as well 🙂 (I just don’t know how to say that all the blogs are good, you get my point don’t you? :-P).

So, I’m mentioning the top three blogs in this post. Its not that there is a top 10 list or something, but these blogs, I think, are one step ahead. The list is as follows (in no particular order):

حالِ  دل:  This is an Urdu blog. The thing I like about this blog is, the posts are interesting, they have variety i.e. the author can write on just about every topic (that’s the idea I have about the writer), may it be the recipe of rasmalayi, or the way Mr. X President used to talk or about his personal experiences and observations. The style through which the author communicates to his readers is just fantastic.

Opening Hira’s Life: I just like this blog. I probably have many reasons for liking this blog but don’t have words to explain. The way feelings and emotions are expressed in each and every post, and the way the deepest of thoughts one can ever have are brought to surface is what I probably like about it. Another important reason for me to like this bog is, that I really get to learn from this blog, A LOT…

There is a life I will touch today: This blog is just so motivating and inspiring… Each and every post (almost, other than the Question of the day :-P) touches some aspect of life and explains how it should be dealt with. And the author probably has just too much free time. She supposedly has I-dont-know-how-many-blogs because fortunately (or otherwise) I have subscribed to many of yet-to-be-discovered blogs by this author. Every other item that my reader application says is unread, is by the author of this blog. I initially used to think that most of the blogs I have subscribed to are just so active, but later found out that, I was right… :-P. Because most of the blogs were by the author of this blog. (sorry for all this exaggeration :-P).

Now lets talk business. When am I getting my commission for publicity of the above blogs?

Posted in English | Tagged: , | 11 Comments »

Does the crack remain?

Posted by Haris Gulzar on August 3, 2009

Long ago I heard from someone:

Friendship is like a china ware,

Always precious, rich and rare,

Once broken, can be mended,

But the crack is always there…

Is it true? Can the crack ever be mended? What good is that friendship for if it can be broken? Or is it just us to be that stupid to think there is a crack in our friendship, when actually there isn’t?

Posted in English | Tagged: , , | 18 Comments »