Amar Bail

A plant of eternity

انمول ۔ ۔ ۔

Posted by Haris Gulzar on April 27, 2009

ایک  تحفے  کی  قیمت  کیا  ہوتی  ہے؟  کیا  وہ  تحفہ  قیمتی  ہونا  چاہیئے،  کیا  وہ  تحفہ  ہماری  پسند  کا  ہونا  چاہیئے،  کیا  وہ  اس  انسان  کی  پسند  کا  ہونا  چاہیئے  جسے  آپ  تحفہ  دینا  چاہتے  ہیں؟ کیا  یہ  سب  سوال  عجیب  ہیں؟ نہیں،  ہر  گز  نہیں۔ ان  میں  سے  کوئی  سوال  عجیب  نہیں  ہے،  بلکہ  ان  تمام سوالوں  کا میری نظر  میں  صرف  ایک ہی جواب  ہے۔ اور  وہ  یہ  ہے  کہ  اس  دنیا  میں  کوئی  شخص  کسی  تحفے  کی  قیمت  کا  اندازہ  نہیں  لگا  سکتا۔ تحفہ  تو انمول  ہوتا  ہے،  تحفہ  بزاتِ  خود  کسی  کی  پسند  کا  نہیں  ہوتا،  بلکہ  یہ  تو  تحفہ  دینے  والے  کی  نییت  ہوتی  ہے  جو  اس  تحفہ  کو  پسندیدہ  اور  انمول  بناتی  ہے۔ ۔ ۔

اگر  یہ  سچ  ہے  کہ  تحفہ  دینے  والے  کی  نییت  ہی  ایک  تحفہ  کو  نایاب  بناتی  ہے،  تو  پھر  اس  شخص  کا  کیا  حال  ہوا  ہوگا  جب  اسکا  تحفہ  کسی  نے  کھول  کر  دیکھا  بھی  نہیں۔  اس  شخص  پہ  کیا  گزری  ہوگی  جب  اس  نے  پوچھا  ہوگا  کہ  تحفہ  کیسا  لگا  اور  اسے  آگے  سے  جواب  ملا  ہوگا  کہ  میں  نے  تو  تحفہ  کھولا  ہی  نہیں۔  اس  شخص  کا  دل  کتنا  ٹوٹا  ہوگا  جس  نے  اکیلے،  ایک  انجان  شہر  میں،  اتنی  ہمّت  کرنے  کی  ٹھانی  کہ  وہ  کہیں  سے  بھی  ایک  ایسا  تحفہ  لائے  گا  جو  اسکے  خیال  میں  اسکے  دوست  کو  بہت  پسند  آئے  گا،  فقط  یہ  سننے  کے  لیئے  کہ  ابھی  تو  میں  نے  وہ  تحفہ  دیکھا  بھی  نہیں۔  کیا  اس  شخص  کا  مان  نہیں  ٹوٹا  ہوگا  جب  اس  کا  بھیجا  ہوا  تحفہ  کسی  نی  پڑے  رہنے  دیا  ہو گا۔ اس  شخص  کے انتظار  کی  کیا  قیمت  لگایئے  جسنے  تحفہ  بھیجنے  کے  بعد  اگلے  دن  شام  گئے  تک  صرف  شکریہ  کہ  دو  الفاظ  سننا  چاہے،  مگر  اسے  سننے  کو  ملا  کہ  میں  نے  تو  وہ  تحفہ  کھولا  ہی  نہیں۔ ۔ ۔

اس  جرم  کا  ارتکاب  کرنے  والا  شخص  ہوں  میں۔  ۲۵  اپریل 09  بروز  ہفتہ  میری  ۲۵ویں  سالگرہ  تھی۔  رات  کے  ۱۲  بجتے  ہی  مجھے  دوستوں  کے  میسج  آنا  شروع  ہو گئے۔  ان تمام میسج میں  اس  دوست  کا  میسج  بھی  شامل  تھا  جس  نے  مجھے  تحفہ  بھیجا  تھا۔  مجھے  معلوم  تھا  کے  اس  دوست  نے  مجھے  لاہور  سے  تحفہ  بھیجا  ہے،  حالانکہ  میں  نے  اس  دوست  کو  کئی  بار  تحفہ  بھیجنے  سے  منع  کیا،  مگر  شاید  میرا  اپنا  بھی  دل  تھا  کہ  میرا  دوست  مجھے  تحفہ  بھیجے۔ پہلے  میں  نے  اپنے  دوست  کو  اپنا  پتہ  نہیں  بتایا  تھا،  مگر  پھر  اچانک  بتا  دیا۔  میں  نے  اپنے  دوست  سے  پوچھا  بھی  کہ  کیا  تحفہ  بھیجا  ہے،  مگر  اسنے  انتظار  کیا  کہ  میں  خود  تحفہ  کھولوں  اور  دیکھوں  کہ  تحفہ  کیا  ہے۔  میں  رات  کو  اپنے  دوست  سے  بات  کرتا  رہا،  اپنے  دوست  کو  یہ  بتاتا  رہا  کہ  مجھے  کتنی  خوبصورت  دعایئں  بھیجی  جا  رہی  ہیں،  اپنے  دوست  کو  بتاتا  رہا  کہ  میرے  دوسرے  دوستوں  نے  مجھے  نظمیں  بھیجی  ہیں۔  اس  وقت  وہ  دوست  یقینن  یہی  سوچ  رہا  ہوگا  کہ  جب  میرا  بھیجا  ہوا  تحفہ  اِسے  ملے  گا  تو  کیا  یہ  اس  وقت  بھی  اتنا  ہی  خوش  ہوگا؟  اس  وقت  میرا  وہ  دوست  یقینن  اس  انتظار  میں  تھا  کہ  کب  اسکا  بھیجا  ہوا  تحفہ  کھولا  جائے  گا ۔ ۔ ۔

اگلا  دن  ہوا،  دوپہر  ہوئی  اور  پھر  شام  ہوگئی۔ میں  اپنے  دوست  کا  بھیجا  ہوا  تحفہ  دیکھے  بغیر  امّی  سے  ملنے  خالہ  کہ  گھر  چلا  گیا۔  امّی  ان  دنوں  لاہور  سے  آئی  ہوئی  ہیں۔  یونیورسٹی  سے  واپس  آنے  کے  بعد  میں  نے  صرف  کھانا  کھایا  اور  اپنے  دوست  کے  بھیجے  ہوئے  تحفے  کا  سوچے  بغیر  ہی  ہاسٹل  سے  نکل  پڑا۔  پتہ  نہیں  کیوں  مگر  مجھے  اپنے  دوست  کا  وہ  تحفہ  اس  وقت  ذہن  میں  ہی  نہیں  آیا۔  شام  کو  جب  اس  دوست  نے  مجھ  سے  پوچھا  کہ  مجھے  اس  دوست  کا  بھیجا  ہوا  تحفہ  کیسا  لگا،  تو  میرے  پاس  صرف  یہی  جواب  تھا  کہ  وہ  تحفہ  تو  میں  نے  کھولا  ہی  نہیں۔  میں  یہ  کہتے  ہوئے  شرمندہ  تھا  مگر  اس  وقت  بھی  میں  نے  یہ  نہیں  سوچا  تھا  کہ  میری  اس  حرکت  نے  میرے  دوست  کو  کتنا  دکھ  دیا  ہوگا۔ ۔ ۔

جب  میں  خالہ  کے  یہاں  سے  واپس  ہاسٹل  آیا  تو  کمرے  میں  گھسنے  سے  پہلے  ہی  میں  ہاسٹل  انچارج  کے  دفتر  میں  گیا  اور  اپنا  تحفہ  وصول  کیا۔  میں  چاہتا  تھا  کہ  اپنے  دوست  کو  کال  کروں،  اور  اس  سے  بات  کرتے  ہوئے  اس  تحفے  کو  کھولوں۔  اس  وقت  جب  میں  اپنے  دوست  کو  کال  ملا  رہا  تھا،  مجھے  احساس  ہوا  کہ  میں  نے کیا  حرکت  کی  ہے۔  اس  وقت  مجھے  رہ  رہ  کر  یہ  خیال  آ  رہا  تھا  کہ  میرے  دوست  نے  مجھ  سے  صرف  اپنے  تحفہ  کا  پوچھنے  کے  لیئے  کتنا  انتظار  کیا  ہوگا۔  اس  وقت  مجھے  احساس  ہو  رہا  تھا  کہ  میں  نے  اپنے  دوست  کے  انتظار  کو  صرف  ایک  دن  نہیں  بلکہ  شاید  کئی  صدیاں  بڑھا  دیا  ہوگا۔  اس  وقت  میرا  شدید  دل  کر  رہا  تھا  کہ  میری  جلد  سے  جلد  اس  دوست  سے  بات  ہو  جائے۔  شاید  مجھے  میرے  کئے  کی  سزا  مل  رہی  تھی۔ میری  میرے  دوست  سے  بات نہیں  ہو  سک  رہی  تھی۔ ۔ ۔

غلطی  کے  اس  احساس  میں  جو  مجھے  اس  وقت  ستائے  جا  رہا  تھا،  میں  نے  اپنے  دوست  کے  لئے  ایک  نوٹ  لکھا اور  اس  سے  معافی  مانگی۔  اس  وقت  نا  جانے  کیوں  وہ  معافی  بھی  بہت  بے  معنی  سی  لگ  رہی  تھی۔  اس  وقت  مجھے  احساس  ہو  رہا  تھا  کہ  ہم  کسی  کے  جزبات  سے  کھیل  کر  معافی  مانگ  لیتے  ہیں،  اور  نا صرف  اس  دوست  کے  جزبات  کا  مزاق  اڑاتے  ہیں  بلکہ  اس  دوست  کو  مجبور  کر  دیتے  ہیں  کہ  وہ  کھل  کر  شکوہ  بھی  نہ  کر  سکے۔ اس  وقت  میں  لگاتار  یہی  دعا  مانگ  رہا  تھا  کہ  میرا  دوست  خیریت  سے  ہو،  جلدی  سو  کہ  اٹھے،  میرا  نوٹ  پڑھے  اور  مجھ  سے  بات  کرے۔  شاید  مجھ  میں  اتنی  ہمّت  نہیں  تھی  کہ  میں  اپنے  اس  عزیز  دوست  سے  زبانی  معافی  مانگ  سکتا،  اس  لئے  میں  چاہتا  تھا  کہ  میرا  دوست  وہ  نوٹ  پڑھ  لے۔ اس  وقت  میں  سوچ  رہا  تھا  کہ  ہم  سے  کیسے  انجانے  میں  ایسی  غلطی  ہو  جاتی  ہے  جو  غلطی  ہم  کبھی  جان  بوجھ  کہ  کرنے  کا  سوچ  بھی  نہیں  سکتے۔  شاید  ہم  انسان  ہیں  اس  لئیے۔  اس  وقت  اپنے  آپ  کو  تسلّی  دینے  کا  مجھے  صرف  یہی  زریعہ  نظر  آیا  کہ  میں  اپنے  آپ  کو  یہ  کہ  کر  بہلا  لوں  کہ  غلطی  بھی  تو  انسان  سے  ہی  ہوتی  ہے۔ ۔ ۔

اور  پھر  میری  بات  اس  دوست  سے  ہو  گئی۔  اس  دوست  کے  فون  اٹھاتے  ہی،  اور  اس  دوست  کی  آواز  سنتے  ہی  اس  بات  کی  تسلّی  ہو  گئی  کہ  وہ  دوست  خیرییت  سے  ہے  الحمدللہ۔۔  حالانکہ  اس  دوست  کی  آواز  پوری  طرح  ٹھیک  نہیں  تھی  اور  اس  آواز  میں  دکھ  کی  سی  کیفیت  نمایاں  تھی،  مگر  میں  نے  اس  وقت  اپنے  دوست  سے  یہ  بات  کرنا  مناسب  نہیں  سمجھا۔ اس  دوست  سے  بات  کے  دوران  ہی  میں  نے  وہ  تحفہ  کھولا۔  میرے  دوست  نے  میرے  لئیے  ایک  ایسی  کتاب  بھیجی  تھی  جسکا  جانے  انجانے  میں  اس  دوست  سے  اتنی  دفعہ  ذکر  ہوا  تھا  کہ  اس  کتاب  کہ  نام  پہ  ہی  میں  نے  اپنے  بلاگ  کا  نام  رکھا۔  وہ  کتاب  تھی  امر  بیل۔  اس  کتاب  کو  دیکھ  کر  میرے  پاس  الفاظ  نہیں  تھے  کہ  میں  اپنی  غفلت  پر  شرمندہ  ہووں  یا  اپنے  اس  عزیز  دوست  کو  اس  خوبصورت  تحفے  کا  شکریہ  کروں۔  میرے  بلاگ  کا  نام  صرف  اس  وجہ  سے  امر  بیل  نہیں  ہے  کہ  مجھے  یہ  نام  اچھا  لگا  تھا،  بلکہ  اسکی  ایک  بڑی  وجہ  یہ  ہے  کہ  میرے  بلاگ  کا  یہ  نام  میرے  اسی  دوست  نے  تجویز  کیا  تھا،  اور  وہ  بھی  اسی  ناول  پہ  مبنی  تھا۔  میرے  اسی  دوست  نے  ایک  دفعہ  امر  بیل  سے  ایک  اقتباس  مجھے  سنایا  تھا،  اس  دن  کے  بعد  سے  مجھے  کہیں  بھی  امر  بیل  کا  کوئی  حصّہ  کہیں  بھی  لکھا  ہوا  ملتا،  میں  وہ  اپنے  دوست  کو  سناتا۔  میرا  اس  ناول  کو  پڑھنے  کا  اشتیاق  بڑھتا  جا  رہا  تھا  اور  ٹھیک  اسی  وقت  میرے  دوست  نے  میرے  لیئے  یہ  ناول  بھیج  دیا۔ ۔ ۔

فون  پہ  تو  میرے  پاس  الفاظ  نہیں  تھے  جن  سے  میں  اپنے  اس  دوست  کا  شکریہ  ادا  کر  سکتا،  نا  ہی  کوئی  ایسے  الفاظ  موجود  ہونگے  جن  سے  میں  اپنے  دوست  کو  یہ  بتا  سکوں  کہ  میرے  اس  دوست  نے  مجھے  کتنی  خوشی  دی  ہے۔  میں  شاید  الفاظ  میں  یہ  بات  نہ  کہ  سکوں  کہ  میرے  دوست  کا  یہ  یاد  رکھنا  کہ  مجھے  یہ  ناول  پڑھنے  کا  شوق  ہے،  اور  ایک  انجان  شہر  میں  اس  ناول  کو  ڈھونڈ  کر  مجھے  بھیجنا  میرے  لیئے  کیا  معنی  رکھتا  ہے۔  میں  شاید  اپنے  دوست  کو  یہ  نہ  بتا  سکوں  کہ  مجھے  اس  وقت  وہ  تحفہ  کھول  کر  کتنی  خوشی  ہو  رہی  تھی ۔ ۔ ۔

دوست،  کوئی  لفظ  شاید  اس  بات  کو  بیان  نہ  کر  سکے  کہ  اس  تحفے  کی  میرے  لیئے  کیا  قیمت  ہے۔  میرے  لیئے  یہ  تحفہ  انمول  ہے،  جس  خوش  دلی  اور  جس  نیّت  سے  آپ  نے  یہ  تحفہ  بھیجا،  میرے  لیئے  وہ  انمول  ہے،  اور  جس  دوستی  کے  لیئے  آپ  نے  مجھے  یہ  تحفہ  بھیجا،  میرے  لیئے  وہ  انمول  ہے ۔ ۔ ۔

6 Responses to “انمول ۔ ۔ ۔”

  1. Qasim said

    Wow, man it is really good.

  2. Raajii said

    beautiful.. very articulate

    It is kind of hard to read this urdu font though😦

  3. Thank you. And guess what, most of the “Amar bail” contents that I share with my friends (also mentioned in this post), I found from your blog. So thank you for that as well🙂.

    Yeah it is a very small font😦, sorry for that :S.

  4. aliadnan said

    yaar .. font to large kar .. edit it and increase the font size …

    apart from that post fitt hai …

    P.S. tu hai hi farigh insaan pehlay ghalti karta hai phir maafi maangta ahi … but important thing is that u realized ur mistake …🙂

  5. Yaar Ali, I tried changing the font size but couldnt (Dont say anything to my CS Degree :P). Help me out with this please.

  6. Saima Mushtaq said

    =)

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

 
%d bloggers like this: